غیر معمولی بیماریوں کے شکار مریضوں کے لیے فنڈز فراہم کیے جائیں،ماہرین صحت

غیر معمولی بیماریوں کے شکار مریضوں کے لیے فنڈز فراہم کیے جائیں،ماہرین صحت

لاہور(جنرل رپورٹر) پاکستان پیڈیاٹرک ایسوسی ایشن گیسٹرولوجی ہیپوٹولوجی گروپ اور ڈپارٹمنٹ آف پیڈیاٹرک گیسٹرولوجی ہیپوٹولوجی لاہور نے صدر، وزیر اعظم، گورنرز، وزراء اعلٰی اور وزراء صحت سے درخواست کی ہے کہ غیر معمولی بیماریوں کے شکار مریضوں کی امداد کے لیے فنڈز فراہم کیے جائیں تاکہ غیر معمولی بیماریوں کے شکار افراد بھی عام زندگی گذار سکیں۔ غیر معمولی بیماریوں لائیسوسومل اسٹوریج ڈس آرڈر (Lysosomal Storage Disorders -LSDs) سے تحفظ کے بارے میں شعور کو اجاگر کرنے کے لیے معلوماتی ورکشاپ چلڈرن ہاسپٹل لاہور کے شوکت رضا خان آڈیٹوریم میں منعقد ہوئی۔ ورکشاپ کا آغاز پروفیسر ہما ارشد چیمہ کی تقریر سے ہوا۔ ورکشاپ میں لائیسوسومل اسٹوریج ڈس آرڈر (Lysosomal Storage Disorders -LSDs) کی کور کمیٹی کے ارکان، ضلع میں موجود اس بیماری کے کم عمر مریض اور ان کے والدین بھی شریک ہوئے۔ ورکشاپ میں پینل آف ایکسپرٹ اور ایل ایس ڈی کور کمیٹی کے ارکان : پروفیسر ڈاکٹر عائشہ مہناز، پروفیسر ڈاکٹر اکبر نظامانی، پروفیسر وقار ربانی، ڈاکٹر ہانی اکبر راؤ، پروفیسر ڈاکٹر حمید، پروفیسر ڈاکٹر دلشاد قریشی، پروفیسر ڈاکٹر آغا شبیر، پروفیسر شازیہ مقبول نے شرکت کی اور اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ ورکشاپ میں شرکت کرنے والے مریضوں اور ان کے رشتہ داروں کو نہ صرف پاکستان کے بہترین ڈاکٹروں کے ساتھ، بلکہ ایک دوسرے سے گفتگو میں بھی اپنے تجربات کا اظہار کرنے کا موقع ملا۔مقررین نے اپنے خطاب میں کہاحکومت اس بات کو یقینی بنائے کہ متاثرہ بچوں کو انزائم تھراپیز کے ذریعے علاج کی سہولت فراہم کی جائے، تاکہ وہ صحت مند زندگی گذار تے ہوئے ملک و ملت کی ترقی کے لیے ایک ذمہ دار شہری کی طرح اپنا کردار ادا کرسکیں۔ علاج معالجے پر زیادہ اخراجات کو مدّنظر رکھتے ہوئے امریکہ، یورپ، جاپان اور بہت سارے ترقی یافتہ ممالک میں غیر معمولی جینیاتی امراض کے علاج اور ان سے متاثرہ خاندانوں کی امداد کے لیے حکومتوں نے امدادی پروگرام شروع کررکھے ہیں۔،ملک کی نامور گیسٹرولوجسٹ اور ہیپوٹولوجسٹ پروفیسر ہما ارشد چیمہ نے کہا حکومت کی جانب سے بہت اہم اقدامات کی ضرورت ہے۔ لائیسوسومل اسٹوریج ڈس آرڈر (Lysosomal Storage Disorders -LSDs) کا شکارہونے والے افراد کے اہلِ خانہ اپنے بچوں کے علاج کے لیے حکومت اور دیگر اداروں سے رابطے کرنے کی کوشش کررہے ہیں، تاکہ ان کے بچوں کا مناسب علاج ہوسکے اور وہ صحت مند زندگی گذارنے کے قابل ہوجائیں۔ ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1