بے ہو دہ فلمیں دیکھنے والے نوجوانوں کی توانائی سے بجلی بنانے کا شرمناک منصوبہ شروع

بے ہو دہ فلمیں دیکھنے والے نوجوانوں کی توانائی سے بجلی بنانے کا شرمناک ...
بے ہو دہ فلمیں دیکھنے والے نوجوانوں کی توانائی سے بجلی بنانے کا شرمناک منصوبہ شروع

  

لاس اینجلس (نیوز ڈیسک) اہل مغرب نے جنسی بے راہ روی اور بے حیائی کو اپنا شعار بنالیا ہے اور اس پر کسی شرمندگی کا اظہار کرنے کی بجائے اس کی نئی نئی اقسام ایجاد کرلی ہیں۔

بے وفا جوڑ ے کوملی قدرت سے ایسی انوکھی سز اکہ پورے شہر میں تما شا بن گئے

ایک بدنامہ زمانہ فحش ویب سائٹ نے بھی ایک ایسی شیطانی ایجاد کی ہے کہ کسی مہذب معاشرے کے لئے اس کا تصور بھی محال ہے۔ ویب سائٹ کا کہنا ہے کہ اس نے وینک بینڈ نامی ایک پٹہ ایجاد کیا ہے جسے گھڑی کی طرح کلائی پر پہنا جاسکتا ہے۔ اس شرمناک ویب سائٹ کو روزانہ 4 کروڑ سے بھی زائد افراد وزٹ کرتے ہیں اور اس پر موجود حیاءسوز ویڈیوز کو دیکھ کر اپنی ہوس پوری کرتے ہیں، اور ویب سائٹ کا کہنا ہے کہ وہ اس بڑی تعداد میں افراد کی توانائی کا ’مثبت‘ استعمال کرنا چاہتی ہے۔

نرم دل خاتو ن نے 'آن لائن'محبت پر 14 کروڑ روپے لٹا دیے لیکن پھر۔۔۔

 اس کا دعویٰ ہے کہ وینک بینڈ پہن کر ویڈیوز دیکھنے والے جب اپنے ہاتھ کو تیز رفتاری سے حرکت دیں گے تو اس پٹے میں لگا ننھا سا کائنیٹک جنریٹر توانائی پیدا کرے گا جو کہ اس میں سٹور ہوتی جائے گی۔ وینک بینڈ کو یو ایس بی کے ذریعے موبائل فون، لیپ ٹاپ یا ٹیبلٹ کمپیوٹر کے ساتھ لگایا جاسکتا ہے اوریوں بیہودہ فعل کے ذریعے پیدا کی گئی توانائی سے ان آلات کو چارج کیا جاسکتا ہے۔

 افسوسناک بات یہ ہے کہ یہ ویب سائٹ اس شرمناک ایجاد پر شرمندہ ہونے کی بجائے یہ موقف اختیار کررہی ہے کہ اس کے ذریعے دنیا میں کروڑوں افراد روزانہ بے پناہ توانائی پیدا کرسکتے ہیں۔ دوسری جانب سماجی اور نفسیاتی ماہرین نے نوجوانوں کو خبردار کیا ہے کہ وہ اس طریقے سے توانائی پیدا کرنے سے باز رہیں کیونکہ یہ تو معلوم نہیں کہ اس طرح بجلی پیدا ہوسکتی ہے یا نہیں البتہ بد عادات کی وجہ سے آپ کی بتی گل ہوسکتی ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس