مہمند،فیز ون کا فنڈز صحیح مصروف میں لایا جائے،عمائدین

مہمند،فیز ون کا فنڈز صحیح مصروف میں لایا جائے،عمائدین

  



ضلع مہمند(نمائندہ پاکستان)مہمند، فیزون کیلئے جاری کیے گئے 9کروڑ روپے اُس وقت تک جاری نہیں کیے جائیں جب تک صحیح حقدار کا تعین نہیں ہوتا۔ انتظامیہ اور منتخب نمائندے طرف داری سے باز آجائیں۔ بصورت دیگر ہم احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ شروع کریں گے۔ان خیالا ت کا اظہار تحصیل پڑانگ غار اتمان خیل مہمند ڈیم کے نزدیک منعقدہ اتمان خیل قوم کے تمام اقوام کے مشترکہ جرگہ سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کیا۔ جرگے میں پڑانگ غار اتمان کے ذیلی شاخوں کے سرکردہ عمائدین نے شرکت کی۔ جرگے سے صدر اتمان خیل پختون اتحاد ضلع مہمند ملک محمد گل اتمان خیل، میاں سید جہانگیر شاہ، مرکزی سیکرٹری اطلاعات و نشریات رحمان اللہ اتمان خیل، مکمل شاہ اتمان خیل ضلع باجوڑ ملک دوست محمد اتمان خیل، ملک طاوس خان، ملک مصاحب گل، ملک ساز محمد اتمان خیل،ملک علی محمد، محمد زمان عمر خیل، بختور عمر خیل سمیت اتمان خیل قوم کے چیدہ چیدہ عمائدین نے مہمند ڈیم کے بارے میں اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ مقررین نے اپنے خطاب میں کہا کہ ڈیم میں 90فیصد زمین اتمان خیل کا متاثر ہواہے جبکہ 10فیصد مہمند قوم کی اراضی متاثر ہوئی ہے ہمارا مطالبہ ہے کہ نوکر سے لیکر کلا س فور تک اس میں اتمان خیل قوم کے افراد برسر روزگار کیے جائیں۔ ملاگوری کے چار گھرانے جو ضلع خیبر سے آکر یہاں اتمان خیل کے زمین پر آباد ہوئے ہیں کو ڈپٹی کمشنر مہمند اور اسسٹنٹ کمشنر مہمند ڈیم کے مد میں 9کروڑ روپے دے رہے ہیں جبکہ اتمان خیل کے حق کے بارے میں کوئی پوچھنے والا نہیں۔ اتمان خیل قوم کا مطالبہ ہے کہ ان9 کروڑ روپے کا جب تک فیصلہ نہیں ہوتا تب تک یہ پیسے جاری نہیں کیے جائیں۔ فیصلے کے بعد مذکورہ رقم حقدار کو دیے جائیں، اور ڈیم کا نام مہمند اتمان خیل ڈیم رکھا جائے۔ اتمان خیل پختون اتحاد کے ترجمان رحمان اللہ اتمان خیل نے اپنے خطاب میں کہا کہ آج کا جرگہ اس مرحلے کی شروعات ہے اگلے جمعہ کو ہمارا پھر اجلاس ہوگا اگر حکام نے ہمارے مطالبات سنجیدگی سے نہیں لیے تو ہم نہ ختم ہونے والے احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ شروع کرینگے۔ اس سلسلے میں ہم اعلی حکام کے ساتھ میٹنگ کرینگے اور اپنے مطالبات ٹاپ لیڈر شپ کے سامنے رکھیں گے اور 9کروڑ روپے اس وقت تک تقسیم نہیں ہوں گے جب تک حتمی فیصلہ نہیں ہوتا۔صدر اتمان خیل پختون اتحاد ضلع مہمند ملک محمد گل نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے قوم اتمان خیل کے چند مطالبات تھے جس کے لئے پڑانگ غار قوم اتمان خیل کے عوام منڈا ہیڈ کے پاس جمع ہوئے ہیں ہمارے مشکلات یہ ہیں کہ ہمارے قوم اتمان خیل کے 90فیصد جائیدادیں ڈیم کے دونوں اطراف میں متاثر ہورہے ہیں جس میں صرف 10 فیصد عیسی خیل بران خیل کاہے باقی امبار، ترغاؤ، برنگ، ملاکنڈ،پڑانگ غار سارا کے سارا قوم اتمان خیل کا جائیداد ہے ہمارا حکومت سے مطالبہ ہے کہ موجودہ جو پیسہ ریلیز ہوا ہے فیز ون کے لئے اتمان خیل نے سیدان کو جو زمین دی تھی۔ جس پر خیبر ایجنسی کے ملاگوری کے چار خاندان رہ رہے ہیں ان کے چند افراد اس کے حصول کے لیے کوشاں ہیں جن کا تحصیل پڑانگ غار میں کوئی حق نہیں ہے ٹرائب آف پاکستان سے یہ واضح ہے کہ یہ ملاگوری خاندان خیبر ایجنسی کے رہنے والے ہیں یہاں پڑانگ غار میں ان کا کوئی حیثیت نہیں ہے ورنہ تاریخ کا مطالعہ کیا جائے، ہماری پرانی تاریخ کے لحاظ سے یہ ثابت ہے کہ یہ زمین قوم اتمان خیل نے سپری میاں گان کو بطور سیرئی دی تھی۔ جب تک فیصلہ نہیں ہوتا یہ پیسے کسی کو جاری نہ کیے جائیں۔

مزید : پشاورصفحہ آخر