حکومت صحافت کی آزادی کو سلب کرنے سے اجتناب کرے وکلاء صحافیوں کا سیمینار سے خطاب

حکومت صحافت کی آزادی کو سلب کرنے سے اجتناب کرے وکلاء صحافیوں کا سیمینار سے ...

  



پشاور(سٹی رپورٹر) خیبر یونین آف جرنلسٹس کے زیر اہتمام منعقدہ سیمینار میں صحافیوں، وکلاء اور سول سوسائٹی کی نمائندہ تنظیموں نے مطالبہ کیا ہے کہ موجودہ حکومت ریاست کے چوتھے ستون صحافت کی آزادی کو سلب کرنے سے باز رہے ورنہ اس کے خطرناک نتائج برآمد ہونگے۔ سوشل میڈیا پر پابندی عوام کا گلہ گھونٹنے کے مترادف ہے، خیبر یونین آف جرنلسٹس کے زیر اہتمام گزشتہ روز پشاور پریس کلب میں میڈیا اور سوشل میڈیا پر پابندیوں کیخلاف سیمینار منعقد ہوا جس میں پشاور ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر عبد الطیف آفریدی ایڈووکیٹ، ایچ آر سی پی کے صوبائی کوآرڈینیٹر شاہد محمود،کے ایچ یو جے کے صدر فداخٹک، جنرل سیکرٹری محمد نعیم، سینئر صحافیوں محمد ابراہیم، ناصر حسین اور دیگر سول سائٹی نمائندوں نے شرکت کی۔ مقررین نے کہاکہ حکومت کی جانب سے میڈیا اور سوشل میڈیا کو کنٹرول کرانے کے اقدامات تشویشناک ہے جس کا تدارک کرنا ضروری ہے۔ صحافت ریاست کا چوتھا ستون ہے اور پابندی لگانا ملکی و بین الاقوانین کی کھل کر خلاف ورزی ہے، میڈیا نے ہمیشہ جمہوریت اور عوام کے حقوق دلوانے میں انتہائی اہم کردار ادا کیا ہے جبکہ اس پر پابندیوں سے عوام کو گونگے بہرے کر کے رکھ دیا جائے گا۔ شاہد محمود نے کہاکہ میڈیا اور سوشل میڈیا پر پابندیوں سے معاشرے میں بگاڑ آئے گا جبکہ عوام اپنے حق کو اقتدار کے ایوانوں تک پہنچانے کے حق سے محروم رہ جائینگے۔ لطیف آفریدی ایڈووکیٹ کا کہنا تھا کہ صحافت کی آزادی ہی سے شہریوں کو تمام بنیادی حقوق مل سکتے ہیں اور میڈیا پر پابندی جمہوری اقدار کے منافی ہے جس سے پاکستان کی عالمی سطح پر ساکھ متاثر ہوگی، حکومت کو چاہیے کہ صحافت پر پابندی کی بجائے اپنی غلطیاں ٹھیک کرے اور عوام کو ان کے حق سے محروم رکھنے کی کوششیں نہ کرے۔ انہوں نے کہاکہ وکلاء اور سول سوسائٹی صحافت پر قدغن لگانے کیخلاف صحافیوں کے ساتھ کھڑے رہینگے اور حکومت کا ہر محاذ پر مقابلہ کرینگے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر