کرونا وائرس کے 80فیصد مریض ٹھیک ہو جاتے ہیں،طبی ماہرین

  کرونا وائرس کے 80فیصد مریض ٹھیک ہو جاتے ہیں،طبی ماہرین

  



لاہور(جنرل رپورٹر) کرونا وائرس کے حوالے سے طبی ماہرین کا کہنا ہے عوام کرونا سے نہ گھبرائیں۔ اس مرض کے فیصد لوگ خود ہی صحیح ہوجاتے ہیں۔ عوام ٹوٹکوں پر دھیان دینے کی بجائے احتیاطی تدابیر اختیار کریں۔پاکستان میں بھی کرونا وائرس کے چار مشتبہ مریض سامنے آگئے ہیں ایک مریض جھنگ اوردوسرا فیصل آبادمیں سامنے آیا ہے دونوں مریض الائیڈ ہسپتال میں انڈر ابزرویشن رکھے گئے ہیں۔ اس حوالے سے سروسز ہسپتال کے پروفیسر آف میڈیسن ڈاکٹر عمران کا کہنا ہے کہ گھبرانے کی ضرورت نہیں زیادہ تر مریض خود ہی ٹھیک ہو جاتے ہیں عوام صرف حفاظتی تدابیر اختیار کریں آغا خان اسپتال کے ماہر انفیکشن ڈیزیز ڈاکٹر فیصل محمود کا کہنا ہے کرونا لاعلاج ضرور ہے مگر80 فیصد مریض خود ہی صحیح ہوجاتے ہیں۔ ہرشخص کو ماسک پہنے کی ضرورت نہیں۔ کچھ احتیاطی تدابیر اختیار کر کے مرض سے بچا جاسکتا ہے.گنگا رام اسپتال کے میڈیکل سپریٹنڈنٹ ڈاکٹر احتشام کا کہنا ہے ہسپتالوں میں کرونا وائرس سے نمٹنے کے انتظامات مکمل ہیں۔ کسی بھی نا خوشگوار واقعہ کی صورت میں ہم تیار ہیں. سروسز ہسپتال کے ایم ایس ڈاکٹر سلیم شہزاد چیمہ کا کہنا ہے کہ ہم نے اپنے ہسپتال میں ایک پورے وارڈ کو کرونا وارڈ کا درجہ دے دیا ہے جہاں ہر سہولت فراہم کی گئی ہے۔ماہرین کا کہنا ہے کہ عوام پریشانی کا شکار نہ ہوں۔ ٹوٹکوں کی بجائے اسپتال جانے اور احتیاطی تدابیر اختیار کریں۔ یہی وائرس سے بچنے کا صحیح طریقہ ہے۔ماہرین کہتے ہیں کہ شہریوں کو چاہیے کہ صاف ستھری اورصحت مندغذا استعمال کریں۔ شہری ایک دوسرے سے ہاتھ ملانے اور گلے ملنے سے اجتناب برتیں۔ موجودہ صورتحال میں پانی کا استعمال زیادہ کردیں۔ کھلی جگہوں پر کھانسنے اور چھینکنے سے اجتناب برتیں ایک دوسروں سے لی گئی چیزوں سے بھی اجتناب برتیں۔ایگزیکٹو ڈائریکٹر قومی ادارہ صحت (این آئی ایچ) میجر جنرل ڈاکٹر عامر اکرام کا کہنا ہے کورونا وائرس سے اموات کی شرح دو فیصد سے بھی کم ہے۔انھوں نے کہا کہ کسی بھی وبائی مرض میں سب سے بہتر علاج احتیاط ہوتی ہے، خود کو پاک صاف رکھنے سے بیماریوں سے محفوظ رہا جا سکتا ہے۔

طبی ماہرین

مزید : صفحہ اول