تحریک نفاذ اردو شعبہ خواتین کا قومی دن پر تقریب کا انعقاد

  تحریک نفاذ اردو شعبہ خواتین کا قومی دن پر تقریب کا انعقاد

  



کراچی (پ ر)اردو قومی دن کے موقع پر تحریک نفاذ اردو شعبہ خواتین اور وفاقی اردو یونیورسٹی کے تعاون سے ایک شاندار تقریب منعقد کی گئی۔اس تقریب کے مہمان خصوصی ڈاکٹر فاروق ستار تھے،ڈاکٹر فاروق ستار نے اپنے خطاب میں تحریکِ نفاذِ اردو پاکستان شعبہ خواتین کراچی کی خدمات کو سراہا اور کہا کہ اب کسی کو گلہ نہیں ہوگا کہ اردو کی بات کرنے والا کوئی نہیں ہے۔ اور تقریب کی صدارت عارف زبیر وائس چانسلر وفاقی اردو یونیورسٹی آڈیٹوریم کر رہے تھے۔تقریب میں دیگر سیاسی و سماجی شخصیات کے علاوہ کثیر تعداد میں مرد و خواتین طلبا و طالبات نے شرکت کی نظامت کے فرائض ڈاکٹر یاسمین سلطانہ انجام دے رہی تھی تقریب کا آغاز تلاوت قرآن پاک سے ہوا اورحمنہ خان نے نعت رسول مقبول صلی اللہ علیہ وسلم سے پیش کی،بشری ناصر کی اقبال اشعر کی خوبصورت نظم (اردو ہے میرا نام میں خسرو کی پہیلی)پیش کی،یونی ورسٹی کے طلباء طالبات نے بھی یومِ اردو کے حوالے تقاریر اور نظمیں پیش کیں۔مقررین نے اپنے خطاب میں اردو کی اہمیت افادیت اور تاریخ کی روشنی میں تفصیلی گفتگو کی جبکہ مقررین کی بڑی تعداد ڈاکٹر پروفیسر اسکالر لیکچرار اور نہایت ہی معتبر شخصیات تھیں تمام مقررین کے خطاب کی تفصیل لکھنے پر کافی صفحات درکار ہوں گے جو کہ ممکن نہیں ہے لہذا تمام مقررین نے پاکستان میں 251 قانون کے تحت اور 25 فروری 1948 کو بابائے قوم قائد اعظم رحمت اللہ علیہ نے پاکستان کی پارلیمنٹ سے جو قانون منظور کروایا تھا کہ پاکستان کو قومی اور دفتری زبان اردو ہوگی اور جو اس میں رکاوٹ بنے گا وہ پاکستان اور پاکستانی قوم کا دشمن ہوگا اب تک پاکستان میں اس قانون کو نافذ نہیں کیا گیا جبکہ پاکستان کی سپریم کورٹ نے بھی اس قانون کو نافذ کرنے کے احکامات جاری کئیے ہیں اس کے باوجود حکمران طبقہ مستقل ٹال مٹول سے کام لے رہی ہے لہذا تمام مقررین اور تقریب میں شامل تمام خواتین و حضرات نے ہاتھ اٹھاکر قرارداد کی حمایت کی اور حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا ہے فوری طور پر پاکستان کے تمام سرکاری اور غیر سرکاری دفاتر میں اردو میں لکھنا پڑھنا شروع کیا جائے

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر