’شام میں ترک فوجیوں کو اس وقت نشانہ بنایا گیاجب وہ۔۔۔‘روس کاردعمل بھی آگیا،بڑا دعویٰ کردیا

’شام میں ترک فوجیوں کو اس وقت نشانہ بنایا گیاجب وہ۔۔۔‘روس کاردعمل بھی ...
’شام میں ترک فوجیوں کو اس وقت نشانہ بنایا گیاجب وہ۔۔۔‘روس کاردعمل بھی آگیا،بڑا دعویٰ کردیا

  



ماسکو(ڈیلی پاکستان آن لائن)شام کے صوبے ادلب میں شامی فضائیہ کی بمباری میں ترک فوجیوں کی ہلاکت پر روس کا ردعمل بھی آگیا۔ شامی صدر بشارالاسد کے قریبی اتحادی روس نے دعویٰ کیا ہے کہ ترک فوجی اس وقت نشانہ بنے جب وہ عسکریت پسندوں کے ساتھ صف بندی کررہے تھے۔

روس کے سرکاری ٹی وی کے مطابق روسی وزارت دفاع نے اپنے جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ ادلب میں ترک فوجی اس وقت بمباری کا نشانہ بن گئے جب وہ عسکریت پسندوں کے ساتھ صف بندی کررہے تھے۔

یاد رہے کہ شامی حکومت کے فضائی حملے میں 33 ترک فوجی مارے گئے ہیں۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق شام کے شمال مغربی صوبہ ادلب میں شامی حکومتی دستوں کے فضائی حملے میں کم از کم 33 ترک فوجی ہلاک ہوئے ہیں جبکہ برطانوی اخبا ر ڈیلی میل نے شام کے سرکاری ٹی وی کے حوالے سے بتایا ہے کہ بمباری میں مارے گئے ترک فوجیوں کی تعداد انتیس ہے۔صوبہ ہاتے ڈوغاکے گورنر کاکہنا ہے کہ ترک فوجیوں کو ادلب میں نشانہ بنایا گیا.

جنوب مشرقی صوبے ہاتے کے گورنر نے اپنے بیان میں کہا کہ ترک فوجیوں کی شہادتوں کی تعداد میں اضافہ ہو سکتا ہے جس کے بعد تنازعہ میں اضافے کا بھی خطرہ ہے۔

واضح رہے کہ ترکی کی طرف سے حالیہ ہفتوں میں ہزاروں فوجیوں کو ادلیب بھیجے جانے کے بعد ایک ہی دن میں یہ ہلاکتوں کی سب سے بڑی تعداد ہے۔ اسی دوران روس کی حمایت یافتہ شامی حکومت نے جنگ سے متاثرہ ملک کے آخری مخالف گڑھ پر قبضہ کرنے کیلئے کارروائی کی جو کہ 30 لاکھ سے زائد لوگوں کا شہر ہے۔

ادھر نیٹو کے سیکریٹری جنرل جینزسٹولٹن برگ نے بھی ایک بیان جاری کیاجس میں شامی حکومت اورروسی افواج کے اندھا دھند فضائی حملوں کی مذمت کی گئی ہے۔

مزید : بین الاقوامی /عرب دنیا