سستی بجلی پیدا کریں

سستی بجلی پیدا کریں
 سستی بجلی پیدا کریں

  



دور جدید میں ہر شعبہ زندگی میں بجلی کااستعمال انتہائی اہمیت کاحامل ہے اور اسکے بغیر صنعت کا پہیہ چلانے اور عوام کے روزمرہ معاملات کو پُرسکون طریقے سے چلانے کاتصور بھی نہیں کیا جاسکتا لیکن یہ بڑے تعجب کی بات ہے کہ دنیا بھر میں بجلی کی پیداوار اور تیل اور گیس کی بجائے  پانی اور کوئلے ایسے ارزاں ترین زرائع سے کی جارہی ہے لیکن پاکستان میں فرنس آئل سے تیار ہونے والی مہنگی ترین بجلی پر انحصار کیا جارہاہے آج سے کچھ عرصہ قبل جب پٹرولیم مصنوعات کے نرخ عالمی منڈی میں کم تھے اسوقت تو ناگزیرصورتحال میں بجلی کےلیے فرنس آئل کو استعمال کرنے کی توجہ کرنے کا سبب سمجھ میں آتا ہے لیکن اب جبکہ بین الاقوامی مارکیٹ میں تیل کے زخائر بڑھ گئے ہیں تو تھرمل بجلی پر انحصار کرنا اقتصادی خودکشی کے مترادف ہے مگر اسکے باوجود ہم اس راستے پر جس انداز سے چل رہے ہیں اسکا اندازہ اس امر سے ہوسکتا ہے کہ دنیا بھر میں تھرمل زرائع سے تیار ہونے والی بجلی کی کُل پیداوار 10.7 فیصد ہے جبکہ وطن عزیز میں بجلی کی کل پیداوار کا 35 فیصد اس زریعے سے حاصل کیاجاتا ہے اورمشکل ترین معاشی صورتحال کے باوجود ہم متبادل سستے زرائع سے بجلی حاصل کرنے کی طرف توجہ نہیں دے رہے دنیا میں 40.6 فیصد بجلی کوئلے سے حاصل کی جاتی ہے بھارت بھی اپنی توانائی کی ضروریات کا 71 فیصد حصہ کوئلے سے پورا کرتا ہے لیکن پاکستان جسکے پاس دنیا کے کوئلے کا دوسرا بڑا زخیرہ ہے وہ انٹرنیشنل انرجی ایجنسی کے اعدادوشمار کے مطابق کوئلے سے صرف اعشاریہ ایک فیصد بجلی پیدا کرتا ہے ضرورت اس بات کی ہے کہ سستے نرخوں پر بجلی پیدا کرنے کے قلیل مدتی وسط مدتی اور طویل مدتی منصوبوں پر پوری سنجیدگی سے توجہ دی جاےء آبی زخائر کی تعمیر ،پانی کی لہروں سے بجلی پیدا کرنے سورج اور ہوا کی توانائی کو استعمال کرنے سمیت تمام طریقے بروےءکار لائے جائیں تو بجلی سستے داموں حاصل کی جاسکتی ہے۔

۔

نوٹ:یہ بلاگر کا ذاتی نقطہ نظر ہے جس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں ۔

.

اگرآپ بھی ڈیلی پاکستان کیساتھ بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو اپنی تحاریر ای میل ایڈریس ’dailypak1k@gmail.com‘ یا واٹس ایپ "03009194327" پر بھیج دیں۔

مزید : بلاگ