پاکستان کے دو بڑے خدمت گذار

پاکستان کے دو بڑے خدمت گذار
پاکستان کے دو بڑے خدمت گذار

  

ابھی ابھی مَیں پنجاب کے گورنر ہاؤس میں قریباً دو گھنٹے گذار کر واپس آیا ہوں۔ چودھری محمد سرور صاحب نے پاکستان کے سابق وزیراعظم ملک معراج خالد مرحوم اور ایک بڑی کاروباری شخصیت سیٹھ عابد حسین مرحوم کی یاد میں تقریب کا اہتمام کر رکھا تھا۔ سیٹھ صاحب تو چند ہی ہفتے پہلے اِس دُنیا سے رخصت ہوئے ہیں،لیکن ملک معراج خالد کو بچھڑے اٹھارہ برس گذر چکے ہیں۔دونوں نے ماشاء اللہ لمبی زندگی پائی، آٹھ سے نو دہائیوں کے درمیان اِس دُنیائے رنگ و بو سے لطف اندوز ہوئے  یا یہ کہیے کہ اس کے رنگ و بو میں (حسب ِ توفیق) اضافہ کرتے رہے۔دونوں کا تعلق دو مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تھا۔ایک نے فقیری میں امیری کی، تو دوسرے امیری میں فقیری کر کے دِکھا گئے۔ملک صاحب لاہور کے مضافات میں ایک چھوٹے سے کاشتکار گھرانے میں پیدا ہوئے،محنت اور ہمت سے آگے بڑھے۔ قانون کی تعلیم حاصل کی، سیاست کے میدان میں قدم رکھا، صوبائی اور قومی اسمبلیوں میں پہنچے۔ پنجاب کے وزیراعلیٰ بنے، وفاقی وزیر رہے،سپیکر قومی اسمبلی منتخب ہوئے، صدر فاروق لغاری نے محترمہ بے نظیر بھٹو کی اسمبلی کو چلتا کیا، تو نئے انتخابات کے لئے قائم کی جانے والی وزارت کی سربراہی انہیں سونپ دی، وہ احتساب کے نعرے لگانے میں مصروف ہو گئے۔ایک عمر پیپلزپارٹی کے ساتھ گذاری تھی، انقلاب کا خواب جا گتی آنکھوں سے دیکھتے رہے تھے، ان کے اردگرد بہت کچھ بدلا، لیکن وہ نہیں بدلے۔عام آدمی کی طرح کھاتے پیتے، سوتے جاگتے، چلتے پھرتے رہے۔ ماہ و سال نے اُن کے وسائل میں اضافہ کیا،نہ دولت کے انبار جمع کرنے میں اُنہیں کوئی دلچسپی رہی۔ پروٹوکول کے بغیر آتے جاتے، یہاں تک کہ وزیراعظم کے طور پر ان کی گاڑی ٹریفک کے ہجوم میں پھنسی رہتی۔ سائرہ ٹرسٹ ہسپتال کی ایک تقریب میں اُن کو مدعو کیا گیا تو پی ٹی وی کی گاڑی تو وقت ِ مقررہ پر پہنچ گئی، لیکن وقت کے انتہائی پابند وزیراعظم نے اپنے میزبانوں کو انتظار کی کوفت میں مبتلا کر دیا۔پی ٹی وی والوں سے پوچھا گیا کہ وزیراعظم کہاں ہیں تو انہوں نے کہا، پچھلے چوک میں اُن کی گاڑی ٹریفک میں پھنس گئی ہے، ہم تو کسی نہ کسی طور نکلنے میں کامیاب ہو گئے،لیکن اُنہیں راستہ نہیں مل رہا۔کچھ دیر کے بعد وہ بھی تشریف لے آئے،اور تقریب کی کارروائی شروع ہو گئی۔مَیں کہ سائرہ ہسپتال کے ٹرسٹیوں میں ہوں، اپنے مرحوم چیئرمین رفیق گوہیر اور چیف ایگزیکٹو مرحوم ڈاکٹر عاطف گوہیر کے ہمراہ سراپا سپاس تھا۔ انہوں نے ہسپتال دیکھا تو بہت خوش ہوئے، اس کا سلیقہ اور قرینہ اُنہیں شدید متاثر کر گیا،ہمارے کسی تقاضے(یا مطالبے) کے بغیر دس لاکھ روپے کے عطیے کا اعلان کیا کہ یہ ادارہ کاروباری نہیں رفاحی تھا۔یہاں کسی کی نظر مریضوں اوران کے لواحقین کی جیبوں پر نہیں، اُن کی خدمت پر مرکوز رہتی ہے، اور کم سے کم چارجز پر اعلیٰ معیار کی خدمات فراہم کی جاتی ہیں۔ہسپتال ان کے من کو بھا گیا،جس روز اُن کی وزارتِ عظمیٰ کی معیاد ختم ہونے والی تھی،اُس سے ایک دن پہلے شام کو فون آیا کہ مَیں سٹیٹ گیسٹ ہاؤس میں ہوں۔ ہسپتال کے چیف ایگزیکٹو کے ساتھ فوراً میرے پاس آ جاؤ۔ ہلکی ہلکی بارش ہو رہی تھی، بھاگم بھاگ وہاں پہنچے تو کوٹ کی اندرونی جیب سے ایک لفافہ نکال کر ہتھیلی پر رکھ دیا: مَیں چیک بنوا کر لے آیا ہوں۔ وزیراعظم نہیں ہوں گا تو کوئی آپ کو چیک جاری نہیں کرے گا، اسے کل صبح اپنے اکاؤنٹ میں جمع کرا دینا۔

ملک صاحب نے غریبی میں آنکھ کھولی تھی، غریبی کو انہوں نے  سینے سے لگا کر رکھا، غریبوں کے کام آتے رہے۔ انجمن اخوان اسلام کی بنیاد رکھی، اور اپنے علاقے میں بڑے وسیع رقبے پر ایک بڑے تعلیمی ادارے کی بنیاد رکھ دی، جہاں سے ہزاروں بچے تعلیم کے زیور سے آراستہ ہو کر مختلف شعبوں میں خدمات انجام دے رہے ہیں۔برادران عزیز ڈاکٹر امجد ثاقب اور توفیق بٹ نے بھی مرحوم کی یادوں کے چراغ جلائے۔ڈاکٹر امجد ثاقب کہ تحریک اخوت کے ذریعے لاکھوں گھرانوں کو آسودگی فراہم کر چکے ہیں،بلا سود قرضوں کے ذریعے ان کی معیشتوں کو سنبھال کر دکھا چکے ہیں اور  قرضِ حسنہ فراہم کرنے والی سب سے بڑی تحریک برپا کر کے عالمی ریکارڈ قائم کر چکے ہیں، اب ملک صاحب کی زندگی پر کتاب لکھنے کا اعلان کر رہے تھے تاکہ خدمت کی سیاست کے کمالات محفوظ کر سکیں۔برادرم توفیق بٹ نے بھی ملک صاحب سے اپنے قریبی تعلق کی تفصیل بیان کی،وزیراعظم کے طور پر وہ کسی پروٹوکول کے بغیر اُن کے گھر ملنے چلے آئے تھے اور تاکید کی تھی کہ کسی کو خبر نہ ہونے پائے۔وزیراعظم صاحب نے ان کے ہاں اطمینان سے گُڑ والے چالوں پر بالائی ڈال کر کھائی، چائے پی، تبادلہ ئ خیال کیا، اور جس طرح چپکے سے آئے تھے،اُسی طرح چپکے سے رخصت ہو گئے۔توفیق بٹ اُس دن بھی ملک صاحب کے ساتھ تھے، جب اُن کی گاڑی مال روڈ پر رکی ہوئی تھی۔ پولیس والوں نے بتایا کہ گورنر پنجاب خواجہ طارق رحیم گذرنے والے ہیں، اس لیے کسی کو آگے بڑھنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔ملک صاحب نے سگریٹ کا کش لگاتے ہوئے اپنے موبائل سے گورنر پنجاب کو فون ملا کر اطلاع دی کہ جنابِ والا، وزیراعظم آپ کے پروٹوکول کی وجہ سے آگے نہیں جا پا رہے۔

انجمن اخوان اسلام کے موجودہ صدر منشا صاحب نے ملک صاحب کے قائم کردہ ادارے کے آج کے حالات سے آگاہ کیا، سیٹھ عابد حسین بھی اُنہیں خوب یاد آئے کہ اس ادارے کی تعمیر و ترقی میں ان کا ہاتھ نمایاں تھا۔ وہ ملک صاحب کے کندھے سے کندھا ملائے ہوئے تھے۔منشا صاحب کا کہنا تھا کہ ہم نے چندے مانگے ہیں، نہ عطیے، اپنے وسائل سے اپنی مشکلات پر قابو پانے کی کوشش کی ہے۔ سیٹھ عابد حسین، ڈاکٹر امجد ثاقب کو بھی یاد تھے کہ ان کی حمزہ فاؤنڈیشن آج بھی خصوصی بچوں کی تعلیم و تہذیب کے لئے خود کو وقف کیے ہوئے ہے۔تحریک اخوت اور فاؤنٹین ہاؤس بھی ان کے تعاون کے لیے شکر گزار ہیں۔سیٹھ صاحب کی طرح کمانے والے تو بہت ہوں گے لیکن لٹانے والے کم ہیں۔اللہ کا عطا کردہ مال اللہ کی راہ میں خرچ کرنے والوں میں وہ ممتاز تھے۔دونوں مرحومین کی زندگی اپنے اپنے انداز سے گذری لیکن دونوں نے اسے دوسروں کے لیے وقف کر رکھا تھا۔اپنے قائم کردہ اداروں کے ذریعے وہ آج بھی زندہ ہیں۔ جہاں بھی ان کا نام آتا ہے، زبانیں دُعاؤں سے لبریز ہو جاتی ہیں۔گورنر پنجاب چودھری محمد سرور نے اعلان کیا کہ وہ اپنے آپ کو اخوان اسلام کے تعلیمی ادارے کے ساتھ وابستہ کر لیں گے، اور اسے ایک بڑی یونیورسٹی میں ڈھال کر رہیں گے۔ تقریب میں الخدمت فاؤنڈیشن کے صدر عبدالشکور بھی موجود تھے، انجمن اخوان اسلام کے نائب صدر راجہ اکرم اور دوسرے ارکان بھی نمایاں تھے، سب ایک دوسرے کے لیے دُعا گو تھے، ایک دوسرے کا اعتراف کر رہے تھے،ایک دوسرے سے توانائی حاصل کر رہے تھے۔

تقریب اختتام کی طرف بڑھ رہی تھی۔گورنر پنجاب اختتامی کلمات ادا کر چکے تھے کہ میڈیا کی فوج حملہ آور ہو گئی،ان کے کیمرے اُداس تھے کہ ملکی سیاست پر کوئی بات نہیں ہوئی تھی،ان کے ناظرین کی دلچسپی کا سامان بھی ہونا چاہیے سو محفل کا رنگ بدل گیا۔ڈسکہ کی ”بکسہ چوری“پریذائیڈنگ افسروں کی گمشدگی، سرکاری افسروں پر الیکشن کمیشن کا عتاب، ازسرِ نو انتخاب کرانے کا فیصلہ اور اس کے خلاف پی ٹی آئی حکومت کی طرف سے ہائی کورٹ جانے کا اعلان،اب نکتہ آفرینی اور نکتہ چینی کا موضوع تھا، لیکن گورنر پنجاب احتیاط کا دامن چھوڑنے پر تیار نہیں تھے……کیا بنے بات جہاں بات بنائے نہ بنے۔

(یہ کالم روزنامہ ”پاکستان“ اور  روزنامہ ”دُنیا“ میں بیک وقت شائع ہوتا ہے)

مزید :

رائے -کالم -