پیسے اور طاقت کی بنیاد پر ملک کو حقیقی قیادت سے محروم رکھنے کا کھیل 73 سال سے جاری ہے :سراج الحق

پیسے اور طاقت کی بنیاد پر ملک کو حقیقی قیادت سے محروم رکھنے کا کھیل 73 سال سے ...
پیسے اور طاقت کی بنیاد پر ملک کو حقیقی قیادت سے محروم رکھنے کا کھیل 73 سال سے جاری ہے :سراج الحق

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن  لائن)امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ زر اورزور کی بنیاد پرملک کو حقیقی قیادت سے محروم رکھنے کا کھیل 73 برس سے جاری ہے،سینٹ کےالیکشن ہورہے ہیں، جس کو ایوان بالا کہا جاتا ہے، یہ وہی ادارہ ہے جہاں قوم کی تقدیر کے فیصلے ،مشاورت ، جرگہ اور رہنما ئی کا سامان ہوتا ہے لیکن ساری دنیا دیکھ رہی ہے کہ کس طرح سیاسی پارٹیوں کے لیڈروں نے دولت مندوں کو دولت کی بنیاد پر ریوڑیا ں بیچیں،حافظ سلمان بٹ ایک ایسے انسان تھے جن کی شخصیت کا ادراک کرنا ممکن نہیں، ان کے دنیا سے جانے پر اپنے بھی روئے لیکن جنہوں نے زندگی بھر ان کا مقابلہ کیا وہ ان سے بھی زیادہ روئے،حافظ سلمان بٹ کی رحلت پر جتنے بھی پیغامات مجھے ملے، ان سے اندازہ ہوا کہ حافظ سلمان نے دلوں کو فتح کیا ہے۔

 الحمرا ہال میں منعقدہ تعزیتی ریفرنس سے خطاب کرتے ہوئےسینیٹر سراج الحق نے کہاکہ حافظ سلمان بٹ مرد مجاہد ، داعی الی اللہ ،صاحب کردار شخصیت تھے، جو لوگ اپنی زندگی کو نظریے پر قربان کرتے ہیں، موت اس کو فنا نہیں کرسکتی ،حافظ سلمان بٹ نے لوگوں کے دلوں پر راج کیا، ان کےجانے کے بعد سب سے زیادہ اگر کسی فرد کو صدمہ ہوا ہے تو امیر جماعت کو ہوا،ایسا لگا کہ میدان کارز ار کا دست و بازوٹوٹ گیا، حافظ سلمان بٹ نے کھیل ،سیاست ، مزدوروں کے حقوق کی جدوجہد پر دلوں کو فتح کیا وہ دنیا وی زندگی میں اعلیٰ اوصاف کا نمونہ تھے ۔

مسلم لیگ ن کے مرکزی رہنما ، ممبر قومی اسمبلی خواجہ سعد رفیق نے کہاکہ حافظ سلمان بٹ مرد قلندرتھے،ان کے ساتھ زندگی کا بہت وقت گزرا ، میں گواہی

دیتاہوں کہ سیاست میں جماعت اور ریلوے کی خوشحالی کے لیے جو رہنمائی اُنہوں نے دی کوئی اور نہ دے سکا،حافظ سلمان بٹ ایک نظریہ کاجیتا جاگتا  نام تھا وہ اپنی جماعت میں مقبول اور عوام کے دلوں کی دھڑکن تھے، ان جیسے بہادر ، دانا انسان روز روز پیدا نہیں ہوتے ، جرات و بہادری ،استقامت ، امانت و دیانت حافظ سلمان بٹ کی خاندانی میراث تھی ۔

پاکستان تحریک انصاف سنٹرل پنجاب کے صدر، نو منتخب سینیٹر اعجاز چودھری نےکہاکہ حافظ سلمان بٹ بہت بڑے انسان تھے ،ان کے اندر وہ خوبیاں تھیں جو قرون اولیٰ کے مسلمانوں میں تھیں ، وہ و درویش شخصیت کے مالک تھے ۔تعزیتی ریفرنس میں امیرجماعت اسلامی لاہور ذکر اللہ مجاہد ،امیر جماعت اسلامی وسطی پنجاب جاوید قصوری ،مرکزی سیکرٹری اطلاعات قیصر شریف ،انجینئراخلاق احمد ،پاکستان تحریک انصاف سنٹرل پنجاب کے صدر اعجاز احمد چوہدری،سابق  جسٹس شوکت عزیز صدیقی ، زاہد شاہ سابق صوبائی وزیرکے پی کے ، شمس الرحمن سواتی ، چیئرمین پی ایچ اے انجینئر یاسر گیلانی ، مزدور رہنما خورشید احمد ، تنویر ضیا بٹ ، ملک شاہد اسلم ، ضیاءالدین انصاری ، حسان بن سلمان ، جبران بن سلمان ، ناظم اعلیٰ اسلامی جمعیت طلبہ حمزہ محمد صدیقی ،جے آئی یوتھ کے سیکرٹری جنرل شاہد نوید ملک ، شیخ محمد انور بھی موجود تھے

۔تقریب سے دیگر مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ دنیا میں اپنے نقوش چھوڑ جانے والے کبھی بھولتے نہیں وہ ہمیشہ یاد رہتے ہیں، حافظ سلمان ایک فرد نہیں ایک، سوچ، فکر، نظریہ اور جدوجہد کا نام تھا۔حافظ سلمان یادوں ،تاریخ ، دلوں اور دعاوں میں ہمیشہ زندہ رہے گا، ان کی جرات و بہادری کی عظیم داستان زندہ رہے گی،ہر جابر حکمران کے خلاف ایک توانا آوازکا نام حافظ سلمان بٹ تھا ۔حافظ سلمان نے اپنے کردار اور خدمت کے ذریعےدلوں پر حکمرانی کی۔ حافظ سلمان کی صورت میں صرف جماعت اسلامی نہیں قوم ایک لیڈر سے محروم ہو گئی ہے ۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -