سرکاری ملازمین کی سیکرٹریٹ سے پنجاب اسمبلی تک احتجاجی ریلی اور دھرنا

سرکاری ملازمین کی سیکرٹریٹ سے پنجاب اسمبلی تک احتجاجی ریلی اور دھرنا

لاہور(خبرنگار)ایپکا کی مرکزی وصوبائی قیادت نے انتباہ کیا ہے کہ ایک ماہ کے دوران تمام سرکاری ملازمین کے مطالبات تسلیم کیے گئے اورچارٹرآف ڈیمانڈ پر من و عون عمل درآمد نہ کیا گیا تو اگلے ماہ سے ملک گیر احتجاج کا سلسلہ شروع کر کے دن رات دھرنے دئیے جائیں گے۔ ان خیالات کا اظہار ایپکا کے رہنماؤں حاجی محمد ارشاد، لالہ محمد اسلم، یونس بھٹی، اکرم سلطان، ریاض الدین ، ارشد باجوہ اور دیگر نے سول سیکرٹریٹ اور پنجاب اسمبلی کے سامنے سرکاری ملازمین کے احتجاجی دھرنوں سے خطاب کے دوران کیا ہے۔ اس موقع پر سرکاری ملازمین نے بازوؤں پر سیاہ پٹیاں باندھ رکھی تھیں جبکہ بینرز اور کتبے اٹھا رکھے تھے۔ سرکاری ملازمین نے پہلے سول سیکرٹریٹ کے سامنے اپنے مطالبات کے حق میں احتجاجی دھرنا دیا اور بعد میں سول سیکرٹریٹ سے پنجاب اسمبلی تک احتجاجی ریلی نکالی۔ اس موقع پر پولیس کی بھاری نفری نے سرکاری ملازمین کو پی ایم جی چوک میں ناکے لگا کر روک لیا ، لیکن سرکاری ملازمین پولیس کے ناکے توڑ کر پنجاب اسمبلی تک پہنچ گئے اور پنجاب اسمبلی کے سامنے مسلسل تین گھنٹے تک لیٹ کر احتجاجی دھرنا دیا جس کے باعث شہریوں کو شدید دشواری کا سامنا کرنا پڑا، پنجاب اسمبلی کے سامنے ملازمین احتجاجی مظاہرہ کے دورانے لیٹ گئے اور ننگے باطن کر کے احتجاج کرتے رہے۔ اس موقع پر ایپکا پر مرکزی و صوبائی رہنماؤں حاجی محمد ارشاد، ریاض الدین، لالہ محمد اسلم اور یونس بھٹی نے کہا کہ حکومت نے ملازمین کے مطالبات کو مسلسل اڑھائی سال سے نظر انداز کر رکھا ہے ۔ مطالبات تسلیم نہ ہوئے تو پھر 5 مارچ کو ایوانِ وزیر اعلیٰ کا گھیراؤ کیا جائے گا جس میں ڈے نائٹ احتجاجی دھرنا دیاجائے گا ،جس میں ملک بھر کی مزدور تنظیموں کو بھی دعوت دی جائے گی۔ ریلی،دھرنا

مزید : صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...