کیا اوباما زبردستی اپنی بیگم کو سعودی عرب لے گئے؟دلچسپ باتیں سامنے آگئیں

کیا اوباما زبردستی اپنی بیگم کو سعودی عرب لے گئے؟دلچسپ باتیں سامنے آگئیں
کیا اوباما زبردستی اپنی بیگم کو سعودی عرب لے گئے؟دلچسپ باتیں سامنے آگئیں

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ریاض (مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی صدر اوباما بھارتی دورہ مختصر کرنے کیلئے سعودی عرب پہنچے۔ اس موقع پر خاتون اول مشل اوباما بھی ان کے ساتھ تھیں مگر عالمی میڈیا نے جس بات پر سب سے زیادہ توجہ دی وہ سعودی عرب پہنچنے پر مشل اوباما کے چہرے کے تاثرات تھے۔ سعودی سر زمین پر قدم رکھنے سے لے کے نام مختصر قیام کے دوران مشل اوباما نہایت ناخوش نظر آئیں اور کچھ مواقع پر تو ان کے سکڑے ہوئے ہونٹوں اور پریشان تاثرات نے بہت توجہ حاصل کی۔ خاتون اول کی صورت ہر موقع پر ایسی نظر آئی کہ گویا انہیں زبردستی سعودی عرب لایا گیا ہو۔

شمالی کوریا نے اسرائیل کی اصلیت دنیا کو بتا دی،کھری کھری سنا دیں

جب وہ بھارت سے روانہ ہوئیں تو خوشی سے چمک رہی تھیں مگر سعودی سرزمین پر اترتے ہوئے کھبی ہوئی نظر آئیں، ان کا مختصر لباس بھی سنجیدہ انداز کے مکمل لباس میں بدل چکا تھا۔ جب اوباما کے استقبال کیلئے قطار میں کھڑے سعودی رہنماﺅں میں سے اکثر نے مشل سے ہاتھ ملانے سے گریز کیا تو وہ اور افسردہ نظر آئیں۔ امریکی صدر اوباما کے ساتھ جانے والے رپوٹروں نے ABC ٹی وی کو بتایا کہ مشل سعودی روایات کے پیش نظر بہت محتاط اور دھیمی نظر آئیں، وہ سعودی رہنماﺅں سے ملاقات کے دوران اوباما سے قدرے پیچھے تھیں لیکن اس کے باوجود سوشل میڈیا پر عرب لوگوں نے شکایت کی ہے کہ مشل نے سر کیوں نہ ڈھانپا حالانکہ اس سے پہلے وہ انڈونیشیا کے دورے اور پوپ سے ملاقات کے دوران سر ڈھانپنے کا تکلف کرچکی ہیں ۔کچھ تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اوباما مشل کو تاج محل کی سیر کروانے کی بجائے سعودی عرب لے گئے جو کہ ان سے ناخوش نظر آئے۔

مزید : بین الاقوامی