پاکستان کا ہر ساتواں شہری گردوں کی بیماری میں مبتلا ہے،ڈاکٹر جنید

پاکستان کا ہر ساتواں شہری گردوں کی بیماری میں مبتلا ہے،ڈاکٹر جنید
پاکستان کا ہر ساتواں شہری گردوں کی بیماری میں مبتلا ہے،ڈاکٹر جنید

  

لاہور(پ ر)پاکستان کا ہر ساتواں شہری گردوں کی بیماری میں مبتلا ہے، یہ بات شوکت خانم میموریل کینسر ہسپتال اینڈ ریسرچ سینٹر کے کنسلٹنٹ نیفرولوجسٹ، ڈاکٹر جنید اقبال نے ہسپتال کے وزٹ پر آئے صحافیوں کے ایک گروپ سے کہی۔ انہوں نے بتایا کہ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے مطابق پاکستان میں ہر سال سولہ ہزار نئے مریض دائمی گردوں کی بیماریوں کا شکار ہوجاتے ہیں جو کہ سالانہ سترہ فیصد کا اضافہ ہے اور ان بیماریوں میں پاکستان دنیا بھر میں آٹھویں نمبر پر ہے۔ اسی طرح تیس فیصد ذیابیطس کے مریض گردوں کی بیماری میں مبتلا ہوسکتے ہیں۔ ڈاکٹر جنید نے مزید بتایا کہ جن افراد کا کولیسٹرول زیادہ ہے، ہائی بلڈ پریشر ہے، موٹاپا ہے یا تمباکو نوشی کرتے ہیں، اُن کیلئے بہتر ہے کہ وہ اپنے گردوں کے ٹیسٹ کرواتے رہیں ، کیونکہ اُن کا گردوں کی بیماریوں میں مبتلا ہونے کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے اور یہ بھی کہ زیادہ تر گردے کی تکالیف کی علامات واضح نہیں ہوتیں۔ گردوں کی بیماریوں کی علامات میں پاؤں کا سوج جانا، جسم میں خارش ہونا، پیشاب کا کم آنا یا پیشاب میں خون آنا یا بھوک کی کمی ہوسکتی ہے۔ لیکن بہتر یہ ہے کہ سال میں ایک بار ڈاکٹر کو ضرور چیک کروئیں۔

کے ساتھ ساتھ گردوں کے ٹیسٹ ضرور کروائیں، خصوصاً پچاس سال سے زائد عمر کے افراد گاہے بگاہے یا سالانہ ایک بار گردوں کا ٹیسٹ لازمی کروائیں، اسی طرح پچاس سال سے زائد عمر کے مرد حضرات پروسٹیٹ کے ٹیسٹ ضرور کروائیں، کیونکہ گردوں اور پروسٹیٹ کی بیماریاں بہت خاموشی سے حملہ کرتی ہیں۔

مزید :

میٹروپولیٹن 4 -