ملک کے مختلف حصوں میں باران رحمت!

ملک کے مختلف حصوں میں باران رحمت!

  

جمعہ کی شام کے بعد لاہور اور گردونواح میں بادل ہلکے ہوئے اور بارش رک گئی، گزشتہ دنوں باران رحمت کھل کر اور دور دور تک برسی جبکہ پہاڑوں پر برف باری ہوئی، اس سے عام زندگی تو متاثر ہوئی لیکن خشک سالی کے نقصانات کا بڑی حد تک ازالہ ہو گیا، دور دور تک ہونے والی یہ بارش گندم کی فصل کے لئے رحمت ہے تو اس سے نزلہ، زکام اورگلے، چھاتی کے امراض کو بھی افاقہ ہوا ہے۔انسان کے ہاتھوں دنیا بھر میں جو کچھ ہوا اور ہو رہا ہے ، اس سے ماحولیاتی تبدیلیاں ہوئیں ان کے ساتھ ہی موسم بھی بری طرح متاثر ہوئے، دنیا بھر میں سمندر بپھرے، طوفانی آندھی آئی، اور جنگلوں میں آگ لگی، اس سے بہت نقصان ہوئے، جدید ترقی یافتہ ممالک بھی ان آفات سماوی کے سامنے بے بس نظر آئے، چین اور امریکہ میں برفانی طوفان بھی آئے۔ان ماحولیاتی تبدیلیوں اور آلودگی کے باعث پاکستان بھی بری طرح متاثر ہوا اور یہاں بھی موسموں میں بڑی واضح تبدیلی محسوس کی گئی، اس سال گرمی کے دورانئے ہی میں اضافہ نہ ہوا بلکہ خشک سالی کا بھی شدید خدشہ لاحق ہوا کہ موسم برسات کے متاثر ہونے کے بعد دسمبر( سردی) والی بارشیں بھی نہ ہوئیں اور ایسا محسوس ہوا کہ دور دور تک نشان نہیں، ملک کے زرعی علاقوں میں فروٹ کے علاوہ چنے کی فصل بری طرح متاثر ہوئی جبکہ بالائی علاقوں میں گندم کی بوائی تو ہوئی فصل متاثر ہو رہی تھی،نہری اور ٹیوب والے علاقوں میں بھی بوئی گندم کی فی ایکٹر پیداوار میں کمی کا خطرہ تھا اور یہ محسوس ہونے لگا کہ اس بار گندم بھی ہدف سے کہیں کم ہو گی۔

انسان کچھ سوچتا اور قدرت اپنا عمل کرتی ہے، نماز استقاء تک ادا کی گئیں لیکن بارش کا دور تک پتہ نہیں تھا، ایسی خشک سالی سے ڈیموں کے ذخائر میں کمی ہوئی اور یہ خدشہ تھا کہ آئندہ کی فصلوں کے لئے یہاں سے بھی ضرورت کے مطابق پانی دستیاب نہیں ہوگا، پھر رحمت الہٰی کو جوش آگیا اور موسم سرما کی بارش کا سلسلہ شروع ہوا اگرچہ تاخیر سے سہی۔جنوری میں نہ صرف دور دور تک بارش ہوئی بلکہ پہاڑوں پر توقع اور امید سے کہیں زیادہ برف باری بھی ہوئی، اس سے بجا طور پر موسمی امراض کو فائدہ ہوا، فصلوں کی آبیاری ہوگئی تو برف سے یہ بھی آس پیدا ہوئی کہ اب جونہی موسم میں اگلی تبدیلی آئی تو برف کے پگھلنے سے ڈیموں کے ذخائر میں بھی اضافہ ہو جائے گا۔ایک طرف یہ صورت حال ہے کہ عوام نے بارش اور برف باری سے لطف اٹھایا تو دوسری طرف اس کے اثرات بھی مرتب ہوئے پہاڑوں میں لینڈ سلائیڈنگ اور برف کی تہہ نے زندگی منجمد کر کے رکھ دی، شہروں میں پانی کھڑا ہو کر معمول کے مسائل پیدا کرنے لگا، شہری سہولتوں والے محکموں کی کارکردگی بھی، سامنے آئی جو معمول کی بات ہے، بہر حال گزشتہ روز سے بارش اور برف باری کی اس لہر میں کمی آئی ہے تاہم امکان ہے کہ پھر سے ایک بار بارش اور برف باری ہو سکتی ہے، اللہ کا شکر ادا کر کے انسانوں کو خود اپنے مسائل سے عہدہ بر آہونا چاہئے نہ صرف آلودگی کو ختم کرنے کا عمل تیزی سے شروع کرنا چاہئے بلکہ شہری مسائل کو بھی حالیہ بارش سے پیدا ہونے والی صورت حال کے مطابق حل کرنا اور آئندہ کے لئے مثبت اقدامات کرنا چاہئیں۔

مزید :

اداریہ -