ایس ایچ او کے بیٹے کوفوت شدہ ملازمین کے بچوں کے کوٹہ پربھرتی کرنیکے احکامات جاری

ایس ایچ او کے بیٹے کوفوت شدہ ملازمین کے بچوں کے کوٹہ پربھرتی کرنیکے احکامات ...

  

پشاور(نیوزرپورٹر)پشاورہائی کورٹ نے 1998ء میں دوران ڈیوٹی شہید ہونے والے تھانہ داؤدزئی کے ایڈیشنل ایس ایچ او کے بیٹے کوفوت شدہ ملازمین کے بچوں کے کوٹہ پربھرتی کرنے کے احکامات جاری کردئیے ہیں عدالت عالیہ کے چیف جسٹس یحیی آفریدی اور جسٹس اکرام اللہ پرمشتمل دورکنی بنچ نے یہ احکامات گذشتہ روز درخواست گذار نصراللہ کی رٹ پرجاری کئے اس موقع پران کے وکیل سعد اللہ خان مروت نے عدالت کو بتایا کہ درخواست گذار کا والدتھانہ داؤدزئی میں ایڈیشنل ایس ایچ او تھا جسے 1998ء میں ڈیوٹی پرجاتے ہوئے کسی نے قتل کردیاتھا اور اب درخواست گذار کی عمر اورتعلیم پوری ہوئی ہے اس بناء اسے شہدا ء پیکج کے تحت ملازمت دی جائے اس موقع پر ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل وقار خان نے عدالت کو بتایا کہ 1998ء میں دہشت گردی کی لہرنہیں تھی اوراس بناء یہ شہداء پیکج میں نہیں آتافاضل بنچ نے دونوں جانب سے دلائل مکمل ہونے پر ہدایات جاری کیں کہ اگرشہداء پیکج میں نہیں آتاتو فوت شدہ ملازمین کے بچوں کے کوٹے میں آتاہے اوراس بناء بھرتی کیا جائے اوران آبزرویشن کے ساتھ فاضل بنچ نے رٹ منظورکرلی ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -