گردوں کی پیوند کاری کیلئے برطانوی شہریوں کی پاکستان سے غیر قانونی خریداری کا انکشاف

گردوں کی پیوند کاری کیلئے برطانوی شہریوں کی پاکستان سے غیر قانونی خریداری کا ...
گردوں کی پیوند کاری کیلئے برطانوی شہریوں کی پاکستان سے غیر قانونی خریداری کا انکشاف

  

راولپنڈی(ڈیلی پاکستان آن لائن)گردوں کی پیوند کاری کیلئے برطانوی شہریوں کی پاکستان سے گردوں کی غیر قانونی خریداری کا انکشاف ہوا ہے،ایک ڈاکو منٹری میں کہا گیا ہے کہ برطانوی شہری اس مقصد کیلئے راولپنڈی کا سفر کرتے ہیں۔

TapMad نے ہمہ وقت سرگرم رہنے والوں کے لئے انٹرٹینمنٹ کی نئی دنیا متعارف کروادی

رپورٹس کے مطابق زیادہ تر ان لوگوں کے گردے بھی اس مقصد کیلئے استعمال کیے جارہے ہیں جو کہیں سے اغوا کیے جاتے اور گردے نکالنے کے بعد چھوڑدیا جاتا ہے یا ان کو مار کر پھینک دیا جاتا ہے،دوسرے وہ افراد ہیں جو غربت سے تنگ ہوکر مختلف علاقوں سے آتے ہیں اور اپنے گردے بیچنے پر مجبور ہوتے ہیں۔

بی بی سی ریڈیو کے مطابق یہ جسم کے حصے 1000پاﺅنڈز میں برطانوی شہریوں کو فروخت کیے جارہے ہیں جو راولپنڈی کے مختلف ہسپتالوں میں پیوندکاری کرواتے ہیں،بعض اوقات تو کچھ مریضوں کو بڑی مشکلات کا سامنا بھی کرنا پڑتا ہے۔

برطانیہ میں اس وقت 7000افراد ایسے ہیں جو جسم کے مختلف حصوں کی پیوندکاری کی لسٹ میں شامل ہیں ان میں سے روزانہ 3افراد اپنی زندگی کی بازی ہار جاتے ہیں،حال ہی میں 3سال سے ڈائلسز کروانے والے مریض نے فیس بک پر ”گردے“کی اپیل کی ،اس شخص نے بتایا ہے کہ پیسوں کے بدلے گردہ دینے کی سب سے زیادہ پاکستان سے پیشکش ہوئی ۔

شادی کے سیزن میں اس چیز سے بال دھونے سے ان میں ایسی چمک آئے گی کہ سب آپ کی تعریف کرنے پر مجبور ہوجائیں گے

جب یہ شخص وہاں سے پیوند کاری کراکے واپس اپنے ملک آیا تو چند دن بعد انتقال کرگیا،پاکستان ٹرانسپلانٹ ایسوسی ایشن کے سیکرٹری جنرل کا کہنا ہے کہ پاکستان میں ہر ماہ 100سے زیادہ غیر قانونی گردے کے مریضوں کی پیوندکاری ہورہی ہے،ڈاکٹر مرزا نقی ظفر کا کہنا ہے کہ قانونی طریقے سے ایک گردے کی پیوندکاری پر 50سے60ہزارڈالر خرچ آتا ہے۔

انہوں نے بتایا ہے کہ پاکستان میں غیرقانونی طریقے سے گردے فروخت کرنے والے مختلف افراد مختلف پیچیدگیوں کا شکار ہیں،متعدد ان میں سے اپنی زندگیاں بھی ہار چکے ہیں۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ پاکستان کے مختلف شہروں میں قائم کڈنی سینٹر اس طرح کے غیر قانونی کام میں مصروف ہیں ۔

مزید :

راولپنڈی -