1ہزار جوان اور آفیسرز سعودی عرب میں تعینات، حرمین شریفین کی حفاظت کیلئے پاک فوج ہراول دستے کا کردار ادا کرے گی :خواجہ محمد آصف

1ہزار جوان اور آفیسرز سعودی عرب میں تعینات، حرمین شریفین کی حفاظت کیلئے پاک ...
1ہزار جوان اور آفیسرز سعودی عرب میں تعینات، حرمین شریفین کی حفاظت کیلئے پاک فوج ہراول دستے کا کردار ادا کرے گی :خواجہ محمد آصف

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیر دفاع خواجہ محمد آصف نے کہا ہے کہ پاک فوج کے ایک ہزار حاضر سروس جوان اور آفیسرز سعودی عرب میں خدمات سرانجام دے رہے ہیں ،جب بھی حرمین شریفین کو کہیں سے کوئی خطرہ ہوا تو پاک فوج ہراول دستے کا کردار ادا کرے گی ،جنرل راحیل شریف کو استحقاق سے زیادہ کچھ نہیں ملا ہے۔

وزیر دفاع و پانی وبجلی خواجہ محمد آصف نے پروگرام”جرگہ“میں گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ جنرل راحیل شریف نے کبھی توسیع مانگی اور نہ ہی حکومت نے کوئی پیشکش کی تھی،ان کو زمین کی الاٹمنٹ بھی طے شدہ پالیسی کے تحت ہوئی ہے،میڈیا نے اس کو ایشو بنا کر اچھالا ہے،ماضی میں بھی فوجی سربراہوں کو بھی زمینیں دی جاتی رہی ہیں،فیڈرل سیکرٹری کو بھی ریٹائرمنٹ پر پلاٹ ملتا ہے،جنرل راحیل شریف کو استحقاق سے زیادہ کچھ نہیں ملا ہے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا ہے کہ جنرل راحیل شریف کے اسلامی افواج کے اتحاد میں شامل ہونے کی خبر درست نہیں تھی جس کی بعد میں تردید بھی کردی تھی،اس اتحاد کے ابھی تک خدوخال واضح نہیں ہے،جب بھی ایسی کوئی صورتحال واضح ہوگی تو غور کرینگے۔

TapMad نے ہمہ وقت سرگرم رہنے والوں کے لئے انٹرٹینمنٹ کی نئی دنیا متعارف کروادی

پاک فوج کے ایک ہزار سروس جوان اور آفیسرز سعودی عرب میں خدمات سرانجام دے رہے ہیں جن میں ڈاکٹرز بھی شامل ہیں اور انسٹرکٹرز بھی جو سعودی اہلکاروں کو تربیت دیتے ہیں،جب بھی حرمین شریفین کو کہیں سے کوئی خطرہ ہوا تو پاک فوج ہراول دستے کا کردار ادا کرے گی یہ ہمارا سعودی حکومت سے وعدہ ہے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا ہے کہ ڈان لیکس والا معاملہ وزارت داخلہ سے متعلقہ ہے،مجھے اس کے بارے میں علم نہیں ،حکومت پنجاب کے متعلق شہباز شریف یا رانا ثناءاللہ جواب دینگے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا ہے کہ اسمبلی میں میری تقریر کے دوران کچھ نہیں ہوا ہے،ہنگامہ شاہ محمود قریشی کی طرف سے وزیر اعظم کے خلاف نعرے لگوانے سے ہوا ،خاقان عباسی نوید قمر کے پاس گئے تو شاہ محمود قریشی نے غیر مناسب اشارے کیے جس پر ہنگامہ ہوا ہے،پانامہ کیس وقت کا ضیاع ہے،پی ٹی آئی کے جن ارکان نے استعفے دیے وہ اخلاقی طور پر ممبر نہیں رہے ہیں،ان کو واپس لانے میں اپوزیشن کا کردار ہے۔

انہوں نے کہا ہے مذہبی منافرت پھیلانے پر ہرجگہ پابندی ہونی چاہیے،جب مذہب کے ساتھ مالی مفادات وابستہ ہوجاتے ہیں تو لوگ اسے اپنے مفادات کے مطابق استعمال کرتے ہیں،میڈیا پر کسی کو چھوٹا اور کسی کو بڑامسلمان قراردینے کا سلسلہ بند ہونا چاہیے۔

مزید :

قومی -اہم خبریں -