شہباز شریف کے پروڈکشن آرڈر منسوخ ہوئے تو پارلیمنٹ نہیں چلے گی ،خورشید شاہ

شہباز شریف کے پروڈکشن آرڈر منسوخ ہوئے تو پارلیمنٹ نہیں چلے گی ،خورشید شاہ

  

سکھر(این این آئی،آن لائن )پاکستان پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنمااور سابق قائد حزب اختلاف سید خورشیداحمدشاہ نے کہا ہے کہ شہباز شریف کے پروڈکشن آرڈر منسوخ ہوئے تو پارلیمنٹ نہیں چلے گی،ہم چاہتے ہیں حکومت اپنی مدت پوری کرے لیکن حکومتی وزراء کے رویے کی وجہ سے یہ مشکل لگ رہا ہے، ہم نہیں چاہتے کہ کوئی سول نافرمانی کی تحریک چلے، قوم کو پتہ ہے کیسے الیکشن ہوئے، ڈبے کھلے تو سب کو پتہ چل جائے گا،بنی گالہ کوریگولرائزکیا جاسکتا ہے تودیگرکوبھی کرنا چاہیے،حکومت کا فرض ہے کہ لوگوں کوچھت فراہم کرے،خورشید احمد شاہ نے کہا ہے کہ اسد عمر نے کہہ دیا کہ ’’ہمیں تو آرمی لائی ہے ‘‘ اب آرمی چیف کو وزیرخزانہ کے بیان کا نوٹس لینا چاہیے ،ملک میں منی ڈکٹیٹر شپ ہے جس میں کسی کی داد رسی ہورہی ہے نہ انصاف مل رہاہے حکومت اپوزیشن کے بغیر پارلیمنٹ کو چلانا چاہتی ہے ، اپوزیشن لیڈر اگر پارلیمنٹ نہیں جائے گا تو پارلیمنٹ بھی نہیں چل سکے گی۔وزیر اعظم عمران خان کے بیان کو لوگوں نے غلط سمجھا، انہوں نے 50 لاکھ گھر تعمیر کر کے دینے کی نہیں بلکہ گرانے کی بات کی تھی۔ اتوارکو سکھرمیں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ملک کے اندر موجودہ سیاسی صورتحال بہتر نہیں ہے اور حکومتی وزراء کا اپوزیشن کے ساتھ رویہ درست نہیں۔ اگر اپوزیشن لیڈر اسمبلی میں نہیں آئے گا تو وزرا بھی نہیں آسکیں گے۔انہوں نے کہاکہ عمران خان قرض لینے کے بجائے خود کشی کرنے کو ترجیح دیتے تھے لیکن آج قرضہ آ رہا ہے تو شامیانے بجائے جا رہے ہیں جب کہ جو قرضہ لیا جا رہا ہے اسے ہاتھ بھی نہیں لگایا جا سکتا کیونکہ یہ پیسہ صرف ذخائر میں رکھنے کے لیے ہے۔خورشید شاہ نے کہا کہ اگربنی گالہ کوریگولرائزکیا جاسکتا ہے تو دیگرکوبھی کرنا چاہیے، امیر کو چھت چاہیے توغریبوں کو بھی سرپرچھت چاہیے۔ بنی گالہ کے ریگولائزیشن ہونے پر ہمیں اعتراض نہیں اور بنی گالا اس لئے ریگولرائز ہوا کیونکہ وہاں وزیراعظم رہتے ہیں لیکن یہاں وزیراعظم کے گھر کو بچایا جا رہا ہے جب کہ غریبوں کے گھر گرائے جا رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ عمران خان اب بھی کنٹینر سے باہر نہیں نکل رہے وہ اب بھی کرکٹ کھیلنے میں مصروف ہیں کیونکہ انہیں سیاست نہیں آتی ہے۔ عام انتخابات سے قبل پاکستان تحریک انصاف نے جو باتیں کیں حکومت میں آنے کے بعد اس کے الٹ کیا جا رہا ہے۔انہوں نے اسد عمر کی آئندہ انتخابات میں الیکشن نہ خریدنے کی بات پر کہا کہ اسد عمر نے آرمی چیف پر براہ راست الزام عائد کر دیا ہے اور اگر اسد عمر کی بات درست ہے تو آرمی چیف کو فوری نوٹس لینا چاہیے۔خورشید شاہ نے کہا کہ حالیہ بجٹ تو صنعت کاروں سے کیے گئے وعدے کے لیے تھا، صنعت کاروں کوریلیف دینا چاہیے لیکن کیا زراعت کوریلیف دیا۔انہوں نے کہا کہ حکومت کا فرض ہے کہ لوگوں کوچھت فراہم کرے جن کے پاس نہیں ہے، اگر قبضے ہیں توپھرگھرگرائے جاسکتے ہیں۔ خورشید شاہ نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں حکومت اپنی مدت پوری کرے لیکن حکومتی وزرا کے رویے کی وجہ سے یہ مشکل لگ رہا ہے۔

خورشید شاہ

مزید :

صفحہ اول -