خلیفہ گلنوازمیموریل ٹیچنگ ہسپتال ایک مرتبہ پھر میدان جنگ بن گیا

    خلیفہ گلنوازمیموریل ٹیچنگ ہسپتال ایک مرتبہ پھر میدان جنگ بن گیا

  



 بنوں (بیوروپورٹ)خلیفہ گلنوازمیموریل ٹیچنگ ہسپتال ایک مرتبہ پھر میدان جنگ بن گیا،ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت کے باعث 100سالہ بزرگ ہسپتال میں دم توڑ گیا لواحقین نے لاش سڑک پر رکھ کر احتجاج کیا 24گھنٹوں میں غفلت کے مرتکب ڈاکٹر کے خلاف ایف آئی آر درج نہ ہونے کی صورت میں دوبارہ بنوں پشاور روڈ کو ہر قسم کی ٹریفک کیلئے بند کرنے کا اعلان کردیا متوافی کے نواسے ماسٹر فرمان کے مطابق 100سالہ آیاز خان سکنہ مٹکی بیزن خیل کو صبح سویرے طبیعت بگڑنے پر ہسپتال پہنچایا جہاں پر انہیں ایمرجنسی علاج کیا گیا اور فوری علاج کیلئے ڈاکٹر ندیم کو کال کیا گیا لیکن کافی دیر گزرنے کے باوجود وہ نہیں آیا اس دوران مریض ایڑیاں رگڑ رگڑ کر جاں بحق ہوگیا اور مریض کے لواحقین نے ہسپتال میں احتجاج کیا اس موقع پر پیپلز پارٹی کے رہنما ظاہر شاہ ہسپتال پہنچے اور ایس ایچ او ٹاؤن شپ کے ساتھ مذاکرات کرکے ڈاکٹروں کے خلاف مقدمہ درج کرانے کا مطالبہ کیا بعد میں سابق تحصیل ناظم ڈومیل اور پی ٹی آئی کے رہنما فدامحمد خان،سابق ڈسٹرکٹ کونسلر حلیم زادہ وزیر،بن یامین خان،نور دراز ودیگر رہنماؤں نے سینکڑوں کارکنوں کے ہمراہ لاش ٹاؤن شپ چوک میں رکھ کر بنوں پشاور روڈ کو ہر قسم کی ٹریفک کیلئے بند کرکے احتجاج کیا جہاں مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے تحصیل ڈومیل کے سابق ناظم فدامحمد خان نے کہا کہ خلیفہ گلنواز میموریل ہسپتال میں ہر مہینے اس قسم کے واقعات رونما ہوتے ہیں ڈاکٹر ڈیوٹی نہیں کرتے ہیں اور جب ہم اپنے حق کیلئے آواز اٹھاتے ہیں تو پولیس کار سرکار میں مداخلت کا مقدمہ درج کرتی ہیں لیکن اب اگر ڈاکٹروں کے خلاف کل تک مقدمہ درج نہ کیا گیا اور انہیں گرفتار نہ کیا گیا تو ہم منگل کے روز دوبارہ سڑکیں بند کریں گے اور مطالبات تسلیم ہونے تک احتجاج جاری رکھیں گے اس موقع پر ڈی ایس پی صدر سرکل عدنان شاہد نے مظاہرین سے مذاکرات کئے اورمتعلقہ ڈاکٹر کے خلاف قانونی کاروائی کی یقین دہانی کرائی جس پر مظاہرین نے سڑک کھول دی۔

مزید : پشاورصفحہ آخر