الائیٹ پاکستان کی جانب سے انٹرنیشنل ایجوکیشن ڈے منایا گیا

الائیٹ پاکستان کی جانب سے انٹرنیشنل ایجوکیشن ڈے منایا گیا

  



پشاور (سٹی رپورٹر)الائیٹ پاکستان کی جانب سے انٹرنیشنل ایجوکیشن ڈے منایا گیا،پشاور کے علاقے لڑمہ یونین کونسل میں تعلیم کے حوالے سے انٹرنیشنل ڈے منایا گیا جس کے مہمان خصوصی محکمہ تعلیم خیبر پختونخوا کے پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ کے اسٹنٹ ڈائر یکٹر محمد آیاز تھے اس موقع پر الائیٹ پاکستان کے پراجیکٹ آفیسر عرفان آفریدی بھی موجود تھے،بچوں میں ایوارڈز اور تحائف تقسیم کئے گئے،تقریب سے خطاب کرتے ہو ئے اسٹنٹ ڈائر یکٹر محمد آیاز اور عرفان آفریدی نے عالمی تعلیمی دن کے حوالے سے کہا کہ تعلیم کے بغیر کوئی بھی معاشرہ تر قی نہیں کر سکتا آج جن ممالک نے ترقی کی ہے اس کی اصل وجہ تعلیم ہے انہوں نے بچوں پر زور دیتے ہو ئے کہا کہ اپنے پڑھائی پر تو جہ دیں کیونکہ تعلیم ہی آپکے روشن مستقبل کی ضمانت ہے،علاقہ مکین نے محکمہ تعلیم اور الائیٹ پاکستان کے اس کاوش کو سراہا اور مطالبہ کی اس طرح کی تعلیمی سر گر میاں پورے صوبے میں شروع کیا جا ئے کیونکہ ان سے بچوں میں تعلیم حاصل کر نے کا حوصلہ ملتا ہے۔اس موقع پر سابق ضلع ممبر ملک گل افضل،فیلڈ آفیسر نعمان خٹک،سوشل موبلائزر عمر خالد،حنا،عاشہ خالد،ملیحہ اور فریال ارشد سمیت علاقے کے معززین بھی موجود تھے۔ گیا،پشاور کے علاقے لڑمہ یونین کونسل میں تعلیم کے حوالے سے انٹرنیشنل ڈے منایا گیا جس کے مہمان خصوصی محکمہ تعلیم خیبر پختونخوا کے پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ کے اسٹنٹ ڈائر یکٹر محمد آیاز تھے اس موقع پر الائیٹ پاکستان کے پراجیکٹ آفیسر عرفان آفریدی بھی موجود تھے،بچوں میں ایوارڈز اور تحائف تقسیم کئے گئے،تقریب سے خطاب کرتے ہو ئے اسٹنٹ ڈائر یکٹر محمد آیاز اور عرفان آفریدی نے عالمی تعلیمی دن کے حوالے سے کہا کہ تعلیم کے بغیر کوئی بھی معاشرہ تر قی نہیں کر سکتا آج جن ممالک نے ترقی کی ہے اس کی اصل وجہ تعلیم ہے انہوں نے بچوں پر زور دیتے ہو ئے کہا کہ اپنے پڑھائی پر تو جہ دیں کیونکہ تعلیم ہی آپکے روشن مستقبل کی ضمانت ہے،علاقہ مکین نے محکمہ تعلیم اور الائیٹ پاکستان کے اس کاوش کو سراہا اور مطالبہ کی اس طرح کی تعلیمی سر گر میاں پورے صوبے میں شروع کیا جا ئے کیونکہ ان سے بچوں میں تعلیم حاصل کر نے کا حوصلہ ملتا ہے۔اس موقع پر سابق ضلع ممبر ملک گل افضل،فیلڈ آفیسر،حنا،عاشہ خالد،ملیحہ اور فریال ارشد سمیت علاقے کے معززین بھی موجود تھے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر