محکمہ ایکسائز دونوں ہاتھوں سے پیسے بٹوررہا ہے: لاہور ہائیکورٹ

محکمہ ایکسائز دونوں ہاتھوں سے پیسے بٹوررہا ہے: لاہور ہائیکورٹ

  



لاہور (نامہ نگارخصوصی)محکمہ ایکسائز کی جانب سے شہریوں کو موٹر سائیکل اور گاڑیوں کی نمبر پلیٹس اورکاغذات جاری نہ کرنے کے معاملہ پر لاہورہائیکورٹ نے سیکرٹری ایکسائزاینڈٹیکسیشن، ڈی جی ایکسائز اور سی ای اوسیف سٹی اتھارٹی کو ریکارڈ سمیت 31جنوری کو طلب کرلیا۔عدالت نے اس سلسلے میں جوڈیشل ایکٹوازم پینل کی طرف سے دائر درخواست کی سماعت کے دوران ریمارکس دیئے کہ اگر ٹھیکیدار نمبرپلیٹس نہیں بنارہا تواسے کس نے چیک کرنا ہے، اگر ٹھیکیدار کو پیسوں کی ادائیگی رکی ہوئی ہے تومحکمہ ایکسائز ذمہ دار ہے،اصل نمبر پلیٹیں موجود نہیں اور جو ڈپلیکٹ نمبرپلیٹس لگاتے ہیں ان کے چالان کئے جارہے ہیں،محکمہ ایکسائز دونوں ہاتھوں سے لوگوں سے پیسے بٹور رہاہے، اس حوالے سے شہریوں کی تکلیف کا ذمہ دارکون ہے،ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل آصف چیمہ نے کہا کہ نمبر پلیٹس دستیاب نہ ہونے کے باعث جاری نہیں کی جارہیں،جس پر فاضل جج نے کہا نمبر پلیٹس کی عدم فراہمی کا کوئی تو ذمہ دار ہوگا،درخواست گزار کی طر ف سے موقف اختیار کیا گیا کہ محکمہ ایکسائز فیسوں کی وصولی کے باوجود نمبر پلیٹ اور کاغذات کااجراء نہیں کررہا،نمبر پلیٹ اور کاغذات نہ ملنے سے شہریوں کو مشکلات کا سامنا ہے جبکہ امن وامان کے مسائل بھی پیدا ہورہے ہیں۔

مزید : علاقائی