پولیس میں اعلیٰ ذمہ داران کی تعیناتیوں کا رائج طریقہ کار ختم کرنے کا اصولی فیصلہ، اب تعیناتیاں کس کی مشاورت سے ہوں گی ؟ ایسی خبر کہ عام پاکستانی حیران پریشان رہ جائیں

پولیس میں اعلیٰ ذمہ داران کی تعیناتیوں کا رائج طریقہ کار ختم کرنے کا اصولی ...
پولیس میں اعلیٰ ذمہ داران کی تعیناتیوں کا رائج طریقہ کار ختم کرنے کا اصولی فیصلہ، اب تعیناتیاں کس کی مشاورت سے ہوں گی ؟ ایسی خبر کہ عام پاکستانی حیران پریشان رہ جائیں

  



لاہور (لیاقت کھرل)محکمہ پولیس میں ڈی پی اوز، ایس پیز اور ایس ایچ اوز کی تعیناتی کے لئے سے رائج طریقہ کار کو ختم کیا جانے کا اصولی فیصلہ کر لیا گیا ہے اور نئے طریقہ کار میں ارکان اسمبلی کی مشاورت کولازمی حصہ بنایا جانے کا فیصلہ کیاگیا ہے۔

محکمہ پولیس ذرائع کے مطابق پنجاب پولیس میں سی پی اوز، ڈی پی اوز اور ایس پیز سمیت ایس ایچ اوز کی تعیناتی کے پہلے سے رائج طریقہ کار کو یکسر ختم کرنے کا اصولی فیصلہ کر لیا گیا ہے اور اس میں ڈی پی اوز، ایس پیز سمیت ایس ایچ اوز کی تعیناتی کے لئے نیا طریقہ کار وضع کیا جا رہا ہے جس میں ڈی پی اوز اور ایس پیز سمیت ایس ایچ اوز کی تعیناتی کرتے وقت ارکان اسمبلی کی مشاورت کو لازمی حصہ بنایا جانے کااصولی فیصلہ کر لیا گیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اس نئے طریقہ کار کے تحت ڈی پی اوز اور ایس پیز کی نئے سرے سے تعیناتی کے لئے فہرست تیار کرنے اور چھان بین کا عمل شروع کر دیا گیا ہے جس میں پہلے مرحلہ میں 10ا ضلاع کے ڈی پی اوز اور 30سے زائد ایس پیز کو تبدیل کیا جا رہا ہے جبکہ دوسرے مرحلے میں لاہور سمیت پنجاب بھر کے اضلاع سے ایس ایچ اوز کی بھی نئے طریقہ کار کے تحت تعیناتی کو ممکن بنائے جانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

دوسری جانب فیصلے سے پولیس افسروں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے اورنئے طریقہ کار پر تحفظات کا اظہار کیا گیا ہے۔ اعلیٰ پولیس افسر نے رابطہ کرنے پر بتایا کہ شہریوں کے مسائل حل نہ کرنے والے ڈی پی اوز، ایس پیز اور ایس ایچ اوز کو فیلڈ پوسٹنگ نہ دینے کا پلان تیار کیا گیا ہے جس کی آئی جی آفس میں باقاعدہ چھان بین ہو گئی اور اس کے بعد تعیناتی کی جائے گی۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور