2019ءمیں پاکستانیوں نے ایمرجنسی سروس 1122 پر کتنی پرینک کالز کیں؟ جان کر ہر پاکستانی کا سر شرم سے جھک جائے

2019ءمیں پاکستانیوں نے ایمرجنسی سروس 1122 پر کتنی پرینک کالز کیں؟ جان کر ہر ...
2019ءمیں پاکستانیوں نے ایمرجنسی سروس 1122 پر کتنی پرینک کالز کیں؟ جان کر ہر پاکستانی کا سر شرم سے جھک جائے

  



لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) ریسکیو 1122کسی بھی مصیبت میں گھرے شہریوں کے لیے ہے لیکن اس سروس پر پرینک کالز موصول ہونے کی شرح اتنی زیادہ ہے کہ سن کر ہر پاکستانی کا سر شرم سے جھک جائے گا۔ ویب سائٹ ’پڑھ لو‘ کے مطابق ریسکیو 1122کی طرف سے جاری اعدادوشمار میں بتایا گیا ہے کہ 2019ءمیں انہیں موصول ہونے والی کالز میں سے 94.2فیصد فیک تھیں جو ریسکیور ورکز کے وقت اور وسائل کے زیاں کا سبب بنیں۔ ان پرینک کالز میں کوئی ورکرز سے بریانی بنانے کا طریقہ پوچھتا ہے اور کوئی کسی جعلی حادثے کی اطلاع دے کر ورکرز کو گمراہ کرتا ہے۔

اعدادوشمار کے مطابق اب تک ادارے کو مجموعی طور پر 2کروڑ 10لاکھ کالز موصول ہو چکی ہیں جن میں سے صرف 11لاکھ کالز ایمرجنسی کی صورت میں کی گئیں۔ باقی سب کی سب فیک اور پرینک تھیں، جو لوگوں نے محض وقت گزاری کے لیے کی تھیں۔ادارے کی طرف سے کہا گیا ہے کہ ایسی پرینک کالز ادارے کے ساتھ ساتھ ان لوگوں کے لیے بھی پریشانی کا سبب بنتی ہیں جو واقعی کسی مصیبت میں ہوتے ہیں۔ ادھر لوگ فیک کالز کرکے ورکرز کو تنگ کر رہے ہوتے ہیں اور ادھر کسی حادثے کی صورت میں لوگوں کو لائنز مصروف ملتی ہیں ۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور