سب سے پہلے ملکی مفاد

سب سے پہلے ملکی مفاد
سب سے پہلے ملکی مفاد

  

تحریر :افتخار الحق ملک

 موجودہ حالات کے پیچھے  بڑی عالمی سازش ہے کیونکہ وہ  ایک مضبوط اور طاقتور پاکستان کو اپنے لیے خطرہ محسوس کرتے ہیں جس کے لیے وہ سازشیں کرتے رہتے ہیں، معاشی راہداری منصوبہ بھی علاقےمیں چائنا اور پاکستان کو مضبوط بنائے گا جو کہ سازشیوں کو منظور نہیں اپنے مقاصد کی تکمیل کے لیے  وہ مختلف طریقے استعمال کرتے ہیں جس میں پاکستان دشمن قوتوں کو مالی امداد اور ضمیر فروشوں کا استعمال بھی شامل ہے۔ یہی سازشی  مل کر  آزاد بلوچستان کی باتیں کر رہے ہیں ان کو پیسہ اور مدد فراہم کر رہے ہیں جس کا ثبوت بھارت کا پکڑے جانے والا جاسوس کلبھوشن ہے۔ بلوچستان میں حساس اداروں پر حملے کیے جاتے ہیں جس کی وجہ سے افسران اور جوان شہید ہوتے ہیں، سندھ اسمبلی میں سندھی زبان کو سرکاری زبان قرار دینے کے حوالے سے قرارداد پیش کی جو کہ منظور کر لی گئی اس کے پیچھے بھی سازش ہے  اب امریکی کانگریس میں امریکی خبر رساں ادارے وائس آف امریکہ کو 1.5 ملین ڈالر دینے کی منظوری دی ہے تاکہ سندھی زبان میں پروگرام نشر کیے جا سکیں ،سندھی زبان کو ترقی دی جائے اور اردو زبان میں کمی کی جائے۔ اسی طرح کی سازش ہندوستان نے1947ء  میں اردو اور بنگالی زبان کا تنازعہ شروع کرکے کی تھی۔  اب سندھ میں ایک نئی جنگ شروع ہونے جا رہی ہے۔

سابق دور حکومت میں وفاقی حکومت نے سندھ اور بلوچستان میں جزیروں کے حوالے سے ایک اتھارٹی بنائی تاکہ پاکستانی جزیروں کو ترقی دے کر سیاحت کو فروغ دیا جاسکے اس پر  سندھ سے ایک بہت غیر ذمہ دارانہ بیان  آیا کہ جس طرح بھارت نے کشمیر پر قبضہ کیا ہے اسی طرح وفاقی حکومت سندھ کے وسائل پر قبضہ کرنا چاہتی ہے یعنی پاکستان کی وفاقی حکومت کو بھارت سے تشبیہ دینے کی کوشش کی گئی ۔ ماضی میں  اقتدار کے لیے ملکی مفادات کے خلاف دشمن عناصر کا ساتھ دیا گیا ،ا حساس اداروں کو تنقید کا نشانہ بنایا گیا  لیکن حکمران خاموش رہے دنیا اور تاریخ نے اپنا فیصلہ دیتے ہوئے انہیں قاتل اور دہشتگرد ثابت کردیا جو جمہوریت کے نام پر لوگوں کو بیوقوف بناتے رہے۔

ملک میں انتشار اور بدامنی کے علاوہ اداروں کے خلاف ناجائز طور پر الزامات لگانے  والوں کے خلاف سخت کارروائی ہونی چاہیے ملکی مفاد اور وقار سب سے اولین چیز ہے۔ ملکی مفاد کے خلاف باتیں کرنے والوں کی زبان بند کرنے کی ضرورت ہے، نادان سیاستدانوں کو سمجھنا چاہیے کہ پاکستان ہے تو ان کی سیاست ہے ورنہ  انکی کوئی وقت نہیں۔ اس لئے ملکی مفادات کا خیال رکھیں ملکی سالمیت کو درپیش خطرات کے سد باب  کیلیے ہر پاکستانی کو اپنا کردار ادا کرنا چاہیے ۔ دشمن ممالک  ہر حربہ استعمال کر رہے ہیں سیاست دانوں کا ایسے حالات میں رویہ نقصان دہ ہو سکتا ہے۔ ضرورت اس امر کی ہےکہ ہم اپنے ذاتی مفادات کو ملکی مفادات پر ترجیح دیں تاکہ ملک آگے بڑھے  مسائل میں کمی آئے۔

نوٹ : ادارے کا مضمون نگار کی آراء سے متفق ہونا ضروری نہیں 

مزید :

بلاگ -