نئی حکومت چلانے کیلئے آئی ایم ایف کے پاس جانا پڑیگا : موڈیز

نئی حکومت چلانے کیلئے آئی ایم ایف کے پاس جانا پڑیگا : موڈیز

اسلام آباد(نیوز ایجنسیاں)انٹرنیشنل کریڈیٹ ریٹنگ ایجنسی موڈیز کے مطابق پاکستان تحریک انصاف آزاد اور چھوٹی جماعتوں کیساتھ مل کر وفا ق میں حکومت بنائیگی مگر نئی حکومت کو ادارہ جاتی کمزوریاں،کم مسابقت ،گورننس ،قانون کی عملداری، کرپشن کو کنٹرول کرنا، ٹیکس کا دائرہ کا ر وسیع نہ ہونے کے بھی چیلنجز درپیش ہونگے ۔انٹرنیشنل کریڈیٹ ریٹنگ ایجنسی نے پاکستانی انتخابات کے حوالے سے ایک نوٹ جاری کیا ہے جس میں کہا گیا ہے پاکستان تحریک انصاف کو حکومت چلانے کیلئے آئی ایم ایف کے پاس جانا پڑے گا، زرمبادلہ کے ذخائر میں مسلسل کمی کی وجہ سے بیرونی توازن برقرار رکھنے کیلئے آئی ایم ایف کے پاس جانے کے علاوہ اور کوئی چارہ نہیں، رپورٹ کے مطابق تحریک انصا ف کے یہ وعدہ کیا تھا سماجی شعبے میں اضافہ کیا جائے گا اسلئے نئی حکومت کو زری و مالیاتی پالیسیوں پر توجہ دینا ہوگی، سی پیک کی وجہ سے بجلی کی فراہمی اور بنیادی ڈھانچے میں بہتری آئی ہے جس کا فائدہ نئی حکومت کو ہوگا اور سی پیک سے اقتصا دی اور صنعتی سرگرمیوں میں اضافہ ہوگا ۔ ا د ھر معروف عالمی جریدے بلوم برگ کا کہنا ہے معاشی مسائل عمران خان کا انتظارکر رہے ہیں، پاکستان کا آئی ایم ایف سے قرض لینا کٹھن مر حلہ ہوگا، جمعہ کو عالمی جر یدے بلوم برگ کی جا نب سے جا ری کر دہ ر پو رٹ میں نئی حکومت کو درپیش چیلنجزکا ذ کر کیا گیا، رپورٹ میں کہا گیا ہے جاری کھاتوں کا بڑھتا ہوا خسارہ نئی حکومت کیلئے پریشانی کا باعث ہوگا،اسے گرتے ہوئے زرمبادلہ کے ذخائر کو سہارا دینا ہوگا ا و ر مو جو د ہ حالات میں پاکستان کو فوری طور پر 10تا 15 ارب ڈالر کی ضرورت پڑے گی، جس کیلئے آئی ایم ایف کا دروازہ کھٹکھٹانا پڑسکتا ہے ، مگر آئی ایم ایف سے قرض لینا کٹھن مرحلہ ہوگا، آئی ایم ایف اصلاحاتی ایجنڈے پر عملدرآمد کرائیگا، جس میں نجکاری اور ٹیکس نیٹ میں ا ضا فہ بھی شا مل ہے،عالمی جریدے بلوم برگ کے مطابق آئی ایف پروگرام سے معاشی ترقی کی شرح متاثر ہوسکتی ہے۔

مزید : صفحہ اول