آل پارٹیز کا نفرنس نے انتخابات کے نتائج مسترد کر دئیے

آل پارٹیز کا نفرنس نے انتخابات کے نتائج مسترد کر دئیے

اسلام آباد) سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ دیسک ، نیوز ایجنسیاں ) مبینہ انتخابی دھاندلی کیخلاف متحدہ مجلس عمل اور ن لیگ کی جانب سے بلائی گئی آل پارٹیز کانفرنس (اے پی سی) نے 25 جولائی کو ہونے والے انتخابات مسترد کر دیے۔اسلام آباد میں منعقدہ کل جماعتی کانفرنس میں شرکت کے لیے تمام سیاسی جماعتوں کو دعوت دی گئی جس کی سربراہی متحدہ مجلس عمل کے سربراہ مولانا فضل الرحمان اور ن لیگ کے صدر شہباز شریف مشترکہ طور پر کررہے ہیں۔تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کی جانب سے کنوینر ایم کیو ایم پاکستان خالد مقبول صدیقی سے رابطے کے باوجود ایم کیو ایم کے رہنما فاروق ستار اے پی سی میں شریک ہوئے۔قبل ازیں یہ خبریں سامنے آئی تھیں کہ ایم کیو ایم نے عین موقع پر اے پی بی میں شرکت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ پیپلز پارٹی نے اے پی سی میں شرکت سے معذرت کرلی ۔پیپلز پارٹی نے مولانا فضل الرحمان کو پیغام بھیجا ہے کہ پی پی آپ کے مؤقف کے ساتھ ہے لیکن آج پارٹی کا مشاورتی اجلاس بلارکھا ہے جس کی وجہ سے پی پی رہنما اے پی سی میں شریک نہیں ہوسکتے۔علاوہ ازیں قومی وطن پارٹی کے سبراہ آفتاب شیر پاؤ، وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان ،سردار مہتاب، خرم دستگیر، امیر جماعت اسلامی سراج الحق، مولانا فضل الرحمان، اکرم درانی، وزیر اعظم آزاد کشمیر، گورنر سندھ محمد زبیر، ایم کیو ایم کے فاروق ستار و دیگر اے پی سی میں شریک ہیں۔آل پارٹیز کانفرنس نے انتخابی نتائج مسترد کرتے ہوئے کہا کہ جو انتخابات جیتنے کا دعویٰ کر رہے ہیں ہم ان نتائج کو نہیں مانتے کانفرنس میں مولانا فضل الرحمان اور اسفند یار ولی کی طرف سے تجویز پیش کی گئی کہ تمام پارٹیوں کے ارکان اسمبلی حلف نہ اٹھا ئیں مسلم لیگ ن کے سوا اے پی سی میں شریک تمام جماعتوں نے اس تجویز کی حمایت کی ۔خیال رہے کہ ایم ایم اے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے گزشتہ روز انتخابات کے نتائج مسترد کرنے کا اعلان کیا تھا جب کہ ان کا کہنا تھا کہ دیگر جماعتوں کو بھی انتخابات کالعدم قرار دینے کے لیے اتفاق رائے پر لائیں گے۔مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ یہ عوامی مینڈیٹ نہیں بلکہ عوامی مینڈیٹ پر ڈاکا ڈالا گاا، تاریخ کا بدترین جھرلو پھیرا گیا، خود آرام سے بیٹھیں گے نہ کسی کو بیٹھنے دیں گے اور بھرپور مزاحمت کریں گے۔دوسری جانب مسلم لیگ ن نے وفاق میں اپوزیشن میں بیٹھنے کا اعلان کیا ہے جب کہ پارٹی صدر شہباز شریف کا کہنا ہے کہ قومی اسمبلی میں مضبوط اپوزیشن کا کردار ادا کریں گے۔ اے پی سی کے بعد صھافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان نے بتایا کہ تمام جماعتوں کا حلف نہ اٹھانے پر اتفاق ہے ، شہباز شریف نے ایک دن کا وقت مانگا ہے ،الیکشن کمیشن شفاف انتخابات کرانے میں ناکام رہا ، قوم کا وقت اور پیسہ برباد کیا گیا ، دوبارہ انتخابات کیلئے تحریک چلائیں گے

اے پی سی

مزید : کراچی صفحہ اول