مسلم لیگ ن کے کارکن کو چھڑانے کی کوشش میں پکڑا گیا ظفر سپاری دراصل پولیس کو کس کیس میں مطلوب تھا؟ متعلقہ ایس پی کا ایسا دعویٰ کہ کوئی بھی پریشان ہو جائے

مسلم لیگ ن کے کارکن کو چھڑانے کی کوشش میں پکڑا گیا ظفر سپاری دراصل پولیس کو کس ...
مسلم لیگ ن کے کارکن کو چھڑانے کی کوشش میں پکڑا گیا ظفر سپاری دراصل پولیس کو کس کیس میں مطلوب تھا؟ متعلقہ ایس پی کا ایسا دعویٰ کہ کوئی بھی پریشان ہو جائے

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

راولپنڈی(مانیٹرنگ ڈیسک) گزشتہ دنوں مسلم لیگ ن کے ایک مقامی کارکن چوہدری اسد کو ایک رکشہ ڈرائیور پر اسلحہ تاننے اور دھمکیاں دینے کے الزام میں گرفتار کیا گیا، جسے چھڑوانے کے لیے ظفر سپاری نامی گینگسٹر پولیس سٹیشن چلا آیا اور پولیس والوں نے اسے بھی پکڑ کر حوالات میں ڈال دیا۔
اب ایس پی پوٹھوہار ڈویژن سید علی نے ظفر سپاری کے متعلق چشم کشا انکشاف کیا ہے کہ وہ وزیرقانون پنجاب راجہ بشارت کے بھتیجے کے قتل کے الزام میں بھی پولیس کو مطلوب تھا۔
انگریزی اخبار دی نیشن کے مطابق ایس پی سید علی کا کہنا تھا کہ ”ظفر سپاری نے اس قتل کیس میں عدالت سے ضمانت کروا رکھی تھی۔ اس کے علاوہ وہ سوشل میڈیا پر اسلحے کی نمائش کرنے اور چوٹی کے 20جرائم پیشہ افراد کے ساتھ روابط رکھنے کے الزامات کے تحت بھی پولیس کو مطلوب تھا۔ اس کے تاجی کھوکھر نامی گینگسٹر کے ساتھ بھی روابط تھے جو اسلام آباد اور روالپنڈی میں قبضہ مافیا کا سرغنہ ہے۔ “ سید علی نے بتایا کہ پولیس نے ان گینگسٹرز کے خلاف بڑے پیمانے پر کریک ڈاﺅن شروع کر رکھا ہے۔