دریائے سندھ،پانی کی سطح بلند،متعدد دیہات زیر آب،متاثرین لاوارث نقل مکانی شروع

دریائے سندھ،پانی کی سطح بلند،متعدد دیہات زیر آب،متاثرین لاوارث نقل مکانی ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


کوٹ ادو‘جتوئی‘ مٹھن کوٹ(تحصیل رپورٹر‘ نامہ نگار‘ نمائندہ خصوصی)دریائے سندھ تونسہ بیراج کے مقام پر پانی کی سطح بلند ہونے لگی، پانی کی سطح بلند ہونے سے متعد دیہات زیرآب آگئے،سیلاب کے ممکنہ خطرے کے باعث بیٹ اور کچے کے علاقوں کے مکین اپنی مدد آپ کے تحت محفوظ مقامات پر منتقل ہو رہے ہیں، تفصیل کے مطابق شمالی علاقہ جات وملک کے دیگر حصوں میں شدید بارشوں کا سلسلہ جاری ہے،شدید بارشوں کے باعث ملکی دریاؤں میں شدید(بقیہ نمبر49صفحہ12پر)


 طغیانی کی کیفیت پیدا ہو گئی ہے جسکی وجہ سے دریاؤں اور بیراجوں پر پانی کے بہاؤ میں اضافہ شروع ہو گیا ہے دریاؤں میں طغیانی آنے سے تونسہ بیراج پر پانی کی آمد 2 لاکھ 60 ہزار کیوسک جبکہ پانی کا اخراج 2 لاکھ 40 ہزار کیوسک ریکارڈ کیا گیا، پانی کی سطح بلند ہونے سے نشیبی علاقے زیرآب آگئے، ہنجرائی غیر مستقل درمیانی،موضع بھیڈیں والی، موضع نشان والا، موضع لومبڑ والا میں دریا کا پانی داخل ہونے سے تونسہ بیراج کے بیٹ کے کچے کے علاقوں، ہنجرائی غیر مستقل درمیانی،موضع بھیڈیں والی، موضع نشان والا، موضع لومبڑ والا میں سیلابی پانی داخل ہونے کے پیش نظرمکینوں نے نقل مکانی شروع کردی،انتظامیہ کی طرف سے کوئی حفاظتی تدابیر نہیں کی گئی، دوسری طرف میڈیکل کیمپ نہ لگنے پر متاثرین پریشان ہیں، متاثرین کا کہنا تھا کوئی بھی پوچھنے نہیں آیا،ضلعی انتظامیہ کی جانب سے متاثرہ علاقوں میں امدادی کاروائیاں شروع نہ کی گئی کئی روز سے کھڑے سیلابی پانی سے متعدد بیماریاں پھیلنے لگی،متاثرین اپنی مدد آپ کے تحت سیلابی پانی عبور کرنے پر مجبور ہیں حکومت پنجاب کی جانب سے متاثرین کیلئے فلڈ ریلیف کیمپ نہ لگائے گئے چاروں طرف پانی اور کھلے آسمان تلے رہنے پر مجبور ہیں۔تحصیل جتوئی کے نواحی علاقے لنڈی پتافی کے مقام پر دریائے سندھ کا کٹاو تیزی پکڑ گیا پے دریا کے شدید کٹاو کی وجہ سے درجنوں بستیاں دریا برد ہو چکی ہیں متاثرین کا کہنا پے کہ دس سال سے دریا کا کٹاو جاری لیکن مقامی نمائندے اور انتظامیہ کوئی توجہ نہیں دے رہی جبک دریا کے کٹاو کی وجہ سے بستی جلال...بستی نوناری .بستی لسکانی ماچھی,ککیہ,  دریا ئے برد ہوچکی ہیں۔ایم پی اے سردار محمد اویس خان دریشک، چیئرمین ٹاسک فورس ڈونرز کو آرڈینیشن حکومت پنجاب نے مقامی این جی او ہیلپ فاؤنڈیشن کی جانب سے یونین کونسل رکھ کوٹ مٹھن میں سیلاب متاثرین کیلئے تعمیر کر دہ اجتماعی پناہ گاہ کا افتتاح کرتے ہوئے کہا  ہیکہ آفات سے قبل تیاری کر کے نقصانات سے بچا جاسکتا ہے،انھوں نے کہا کہ اطلاعات کے مطابق امسال سیلاب کا شدید خطرہ ہے تاہم حکومت پنجاب نے سیلاب زدہ اضلاع میں خطیر رقم سے فلڈ بندو ں اور پشتوں کی تعمیر کا کام مکمل کر لیا ہے جس سے لاکھوں ایکڑ اراضی پر موجود فصلات اور آبادیاں محفوظ ہو گئی ہیں،انھوں نے مزید کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت پاکستان کے مسائل کے مستقل حل کے لئے کوشاں ہے، وہ وقت دور نہیں جب حکومت کی کوششوں کے ثمرات عام آدمی تک پہنچیں گے۔ انھوں نے کہا کہ ضلع راجن پو رمیں دو لاکھ سے زائد گھرانوں کوصحت سہولت پروگرام کے تحت،صحت انصاف کارڈکی تقسیم کا کام شروع ہو گیا ہے جس کے تحت ہر مستفید گھر ساڑھے سات لاکھ روپے تک مفت علاج کی سہولت حاصل کر ے گا، اس موقع پر خادم شہر فرید حمزہ کمال فرید ملک، عبدالغفور فریدی، احمد بخش گوپانگ، مختیار احمد،ہیلپ فاؤنڈیشن کے صدر جمشید فرید سومرو، ممتاز خان دریشک، محمد عاشق فریدی کے علاوہ سینکڑوں علاقوں مکینوں موجود تھے۔