ایف اے ٹی ایف، نیب سمیت دیگر قوانین کیلئے حکومت، اپوزیشن کی بیٹھک ے نتیجہ ختم

  ایف اے ٹی ایف، نیب سمیت دیگر قوانین کیلئے حکومت، اپوزیشن کی بیٹھک ے نتیجہ ...

  

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) ایف اے ٹی ایف اور قومی احتساب بیورو (نیب) سمیت مختلف قوانین سے متعلق حکومت اور اپوزیشن کی بیٹھک بغیر کسی نتیجے کے ختم ہوگئی، حکومتی کمیٹی نے مذکورہ قوانین اپوزیشن سے تحریری مؤقف جبکہ اپوزیشن نے قانونی مسودوں پرغور کیلئے مزید مانگ لیا۔نیب اور فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) سمیت مختلف معاملات پر قانون سازی کیلئے پارلیمانی کمیٹی کا دوسرا اجلاس پارلیمنٹ ہاؤس اسلام آباد میں ہوا۔پارلیمانی کمیٹی برائے قانون سازی امور کے چیئرمین شاہ محمود قریشی کی زیر صدارت اجلاس میں حکومت کی جانب سے وفاقی وزیر شیریں مزاری، فروغ نسیم، حماد اظہر، شفقت محمود اور اسد عمر جبکہ اپوزیشن سے شیری رحمان، راجہ پرویز اشرف، ایاز صادق، نوید قمر، احسن اقبال اور جاوید عباسی نے اجلاس میں شرکت کی۔پارلیمانی کمیٹی کا آئندہ اجلاس آج منگل کو 6 بجے شام پارلیمنٹ میں دوبارہ ہو گا۔اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا اپوزیشن کو تمام مسودے فراہم کر دیے ہیں،جس پر غور کرنے کیلئے انہوں نے وقت مانگا ہے۔ ہم جاننا چاہتے ہیں اپوزیشن چاہتی کیا ہے؟ حکومت نے نیب پر تحریری مؤقف دیا تو ہم نے اپوزیشن سے تقاضا کیا ہے کہ وہ بھی تحریری مؤقف ہمارے سامنے رکھے۔پیپلز پارٹی کی رہنما سینیٹر شیری رحمان نے کہا کہ بعض باتوں پر آئین، قانون اور بنیادی حقوق کو ملحوظ خاطر رکھنا ہوگا، حکومت کے مسودے میں خامیاں موجود ہیں، زیر التوا قانون سازی پر اتفاق رائے پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔وزیراعظم کے مشیر پارلیمانی امور بابر اعوان نے پارلیمانی کمیٹی کے اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو میں کہا ایف اے ٹی ایف قومی مسئلہ ہے، ابھی تک کسی مسودے پر کوئی فیصلہ نہیں ہوا۔ قانون سازی کیلئے قائم پارلیمانی کمیٹی کا تیسرا اجلاس آج منگل 28 جولائی شام 6 بجے پارلیمنٹ ہاؤس میں ہوگا۔

بے نتیجہ بیٹھک

مزید :

صفحہ اول -