آزاد کشمیر میں بھی تبدیلی سرکار کی کامیابی

آزاد کشمیر میں بھی تبدیلی سرکار کی کامیابی
آزاد کشمیر میں بھی تبدیلی سرکار کی کامیابی

  

 اسلام علیکم پارے پارے دوستوں سنائیں کیسے ہیں امید ہے کہ اچھے ہی ہونگے جی دوستوں بالآخر انتظار کی گھڑیاں ختم آزاد کشمیر کا انتخابی عمل مکمل ہو گیا اور انتخابی نتاِج بھی برآمد ہو چکے جس کے مطابق حکومتی جماعت پی ٹی آئی نے آزاد کشمیر میں ہونے والا انتخابی معرکہ جیت لیا کشمیریوں نے جناب کپتان کو ایک دفعہ پھر دوبارہ آزاد کشمیر کا سہرا سجا دیا جی دوستوں یہ روایت رہی ہے کہ آزاد کشمیر میں مرکز کی حکومت کو ہی کامیابی ملتی ہے اور روایت تو یہ بھی ہے کہ ہارنے والی جماعتیں دھاندلی کا نعرہ لگا کے انتخابی نتائج  تسلیم کرنے سے انکاری ہو جاتی ہیں اور دھاندلی کا نعرہ لگانے کی روایت قائم رہی تمام اپوزیشن جماعتوں نے آزاد کشمیر کے انتخابات نتائج کرنے سے انکار کر دیا جبکہ حکومتی اراکین کا کہنا ہے کہ اپوزیشن کشمیر سے وائٹ واش ہو گئی بہر حال اب جبکہ آزاد کشمیر انتخابی عمل مکمل ہو چکا نتائج بھی سامنے آ چکے اور یہ بات بھی واضع ہو چکی کہ جناب کپتان کی جماعت ہی آزاد کشمیر حکومت بنائے گی  اور ایک خبر نظر سے گزری کہ بھارتی میڈیا نے بھی آزاد کشمیر انتخابات پہ گہری نظر رکھی اور بھارتی میڈیا تو یہ پروپیگنڈا کر رہا تھا کہ جناب خان کی آزاد کشمیر میں حکومت نہ بنے لیکن سب بلند و بانگ دعوے نعرے دھرے کے دھرے رہ گئے جناب کپتان کی جماعت آزاد کشمیر میں بھی جھنڈے گاڑنے میں کامیاب ہو گئی اور اب دیکھنا تو یہ بھی ہو گا کہ آزاد کشمیر میں بھی تبدیلی وجود میں آئی اور تبدیلی سرکار کی حکومت قائم ہونے جا ریی ہے تو دیکھنا یہ بھی ہے کہ نئی حکومت کشمیری عوام کی فلاح و بہبود کے لئے کیا قدم اٹھائے  گی اور آیا کشمیری قوم کی صیحیع معنوں میں نمائندہ  جماعت ثابت ہو سکے گی اور انکی حقیقی ترجمانی بھی کر سکے گی  یا نہیں یہ بات بھی وقت ہی بتائے گا اور دیکھنا تو یہ بھی ہے کہ نئے وزیراعظم کی کرسی کون سنبھالے گا یہ بات بھی وقت بتائے گا  لیکن بیرسٹر سلطان محمود پہلے بھی وزیراعظم آزاد کشمیر رہ چکے اور اس لحاظ سے دیکھا جائے تو جناب بیرسٹر سلطان محمود تجربہ کار بھی ہیں اور کشمیر کی سیاست سے واقفیت بھی خوب رکھتے ہیں  لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ پہلے پیپلز پارٹی کے جھنڈے تلے وزیراعظم بنے اور اور اب شاید پی ٹی آئی کے پلیٹ فارم سے وزارت عظمی آزاد کشمیر کی کرسی پہ بیٹھنے کے لئے تیار سے نظر آ رہے ہیں بہرحال یہ بات بھی وقت ہی بتا سکتا ہے کہ آیا تبدیلی سرکا ر آزاد کشمیر میں بھی کوئی تبدیلی لا سکے گی یا نہیں تو فی الوقت دیں ہمیں اجازت ملتے ہیں جلد آپ سے بریک کے بعد تو چلتے چلتے اللہ نگھبان رب راکھا

مزید :

رائے -کالم -