خواتین کی رجسٹریشن بڑھانے کیلئے 19 مراکز قائم کردیئے، چیئر مین نادرا 

 خواتین کی رجسٹریشن بڑھانے کیلئے 19 مراکز قائم کردیئے، چیئر مین نادرا 

  

اسلام آباد(آئی این پی) چیئرمین نادرا طارق ملک نے کہا ہے کہ نادرا نے پاکستان میں غیر رجسٹرڈ خواتین کی رجسٹریشن بڑھانے کیلئے 19صرف خواتین کے رجسٹریشن مراکز قائم کیے ہیں اور 10 موبائل رجسٹریشن وینز تعینات کی ہیں، اس وقت 56.95  ملین خواتین ووٹر رجسٹرڈ ہیں، گزشتہ انتخابی فہرست 2018 کے بعد سے، مردوں کے مقابلے خواتین ووٹرز کی رجسٹریشن کی شرح میں 53.2 فیصد (10 ملین خواتین ووٹرز)کا اضافہ ہوا ہے،مجموعی طور پر صنفی فرق اب کم ہو کر 8.9 فیصد رہ گیا ہے۔ان خیالات کا اظہار چیئرمین نادرا طارق ملک نے بدھ کو اسلام آباد میں عورت فاؤنڈیشن کے زیر اہتمام " عورتوں کی سیاسی عمل میں شمولیت کے بغیر جمہوریت کا تصور ناممکن" کے حوالے سے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر سیاسی جماعتوں، انسانی حقوق کی تنظیم، عورت فانڈیشن اور زندگی کے مختلف شعبوں کے نمائندے بھی موجود تھے۔انہوں نے کہا کہ اس وقت 56.95ملین خواتین ووٹر رجسٹرڈ ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ گزشتہ انتخابی فہرست 2018کے بعد سے، مردوں کے مقابلے خواتین ووٹرز کی رجسٹریشن کی شرح میں 53.2فیصد (10 ملین خواتین ووٹرز)کا اضافہ ہوا ہے۔ چیئرمین نادرا نے کہا کہ مجموعی طور پر صنفی فرق اب کم ہو کر 8.9 فیصد رہ گیا ہے۔ صنفی فرق کو کم کرنے کا ایک اہم ذریعہ نادرا دفاتر میں خاتون افسروں کو انچارج بنانا ہے اور 96فیصدنادرا دفاتر میں خواتین عملہ ہے۔انہوں نے یہ بھی بتایا کہ انہوں نے مرد کو خواتین کی رجسٹریشن اور غیر رجسٹرڈ شہریوں کو بڑھانے کے حوالے سے پالیسی میں اصلاحات کی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے اس سال مارچ میں بچوں کو اکیلے والد یا والدہ کے ساتھ رجسٹر کرنے کی پالیسی کا آغاز کیا جس سیاکیلی  ماں کو والد کے شناختی کارڈ کے بغیر اپنے بچوں کو آسانی سے شناختی کارڈ حاصل کرنے کے قابل بنایا گیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ پالیسی گزشتہ سال جولائی میں نادرا میں انکلوسیو رجسٹریشن ڈیپارٹمنٹ کو قیام کیا گیا تھا۔

چیئرمین نادرا 

مزید :

صفحہ آخر -