مردان سٹی کونسل کا ایک ارب 21 کروڑ سے زائد کا بجٹ پیش

مردان سٹی کونسل کا ایک ارب 21 کروڑ سے زائد کا بجٹ پیش

  

پشاور (سٹاف رپورٹر)میئر سٹی کونسل مردان حمایت اللہ مایار نے مالی سال2022-23کے لئے ایک ارب21کروڑ79لاکھ20ہزار573 کا بجٹ پیش کر دیا۔بجٹ میں ترقیاتی منصوبوں کے لئے 30کروڑ75لاکھ 63ہزارمختص کئے گئے ہیں۔کونسل کا اجلاس پریزائیڈنگ آفیسر بابر خان کی صدارت میں ہوا جس میں سٹی کونسل میئر حمایت اللہ مایار نے اپنا پہلا بجٹ پیش کر دیا۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے حمایت اللہ مایار نے کہاکہ مالی سال2022-23کے لئے کُل تخمینہ آمدن ایک ارب 21 کروڑ 79 لاکھ 20 ہزار 573 روپے  جبکہ اخراجات کے لئے ایک ارب21کروڑ21لاکھ42ہزار360روپے رکھے گئے ہیں۔اسی طرح صوبائی حکومت کی طرف سے آمدن کی مد میں منقولہ جائیدار سے ٹیکس کی مد میں 7کروڑ50لاکھ روپے،آکٹرائے حصہ 14کروڑ 7لاکھ80ہزار،ترقیاتی فنڈ کے لئے23کروڑ80لاکھ63ہزار،تحصیل کونسل حصہ1کروڑ،لائنس فیس اشیائے خوردونوش1کروڑ روپے کی توقع ہے۔انہوں نے بتایا کہ تحصیل کونسل مردان کے اپنے ذرائع آمدن سے66کروڑ28لاکھ14ہزار643روپے کا تخمینہ لگایا گیا ہے جس میں پراپرٹی ٹیکس سے49کروڑ75لاکھ،دکانات کی منتقلی فیس کی مد میں 15لاکھ،چنگ چی لائسنس فیس کی مد میں 24لاکھ روپے،پریمیم دکانات 60لاکھ روپے،بس اسٹینڈز سے5کروڑ35لاکھ8ہزار،نقشہ فیس کی مد میں 3کروڑ روپے،سلاٹر فیس 10لاکھ روپے، میلہ مویشیاں ایک کروڑ1لاکھ10ہزار،سائنس بورڈ اشتہارات1کروڑ91لاکھ روپے جبکہ کرایہ دکانات کی مد میں 3کروڑ30لاکھ شامل ہیں۔انہوں نے بجٹ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تحصیل کونسل کے ملازمین کی تنخواہوں،پنشن کی مدمیں 70کروڑ61کروڑ68ہزار جبکہ نان سیلری کے لئے15کروڑ24لاکھ 10ہزار روپے رکھے گئے ہیں۔انہوں نے اجلاس کو بتایا کہ ترقیاتی منصوبوں کے لئے30کروڑ75لاکھ63ہزار روپے رکھے گئے ہیں جس میں جاری منصوبوں کے لئے 6کروڑ45لاکھ جبکہ نئے منصوبوں کے لئے23کروڑ60لاکھ روپے اور سڑکوں،گلیوں اور نالیوں کی مرمت کے لئے50لاکھ روپے رکھے گئے ہیں۔انہوں نے کہاکہ نوجوانوں کو صحت مندانہ سرگرمیوں کی جانب راغب کرنے اورثقافتی کھیلوں کے فروغ کے لئے 20لاکھ روپے،تحصیل کونسل کے اراکین کے مطالعاتی دورے کے لئے20لاکھ روپے جبکہ قدرتی آفات کے دوران لوگوں کی مدد کے لئے25لاکھ روپے مختص کئے گئے ہیں۔حمایت اللہ مایار نے بجٹ اجلاس میں افسران کی غیر حاضری پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ جن محکموں کے افسران نے اجلاس میں شرکت نہیں کی ہے انہیں آخری بار نوٹس دیا گیا ہے کہ اجلاس میں اپنی حاضری یقینی بنائیں بصورت دیگر سخت کاروائی عمل میں لائی جائے گی۔انہوں نے کہاکہ سرکاری ملازمین کی سرونٹ کوارٹرز کی مرمت اور نئے مکانات کی تعمیر اور ملازمین کے بچوں کی بہتر تعلیم و تربیت کے لئے سکول بنانے کی بھی کوششیں جاری ہیں۔انہوں نے اسسٹنٹ ڈائریکٹر لوکل گورنمنٹ کو ہدایت کی کہ نائبر ہوڈ اور ویلج کونسلوں میں بجٹ پاس کرنے کے لئے سیکرٹریز کو ہدایات جاری کریں۔بعدازاں اجلاس غیر معینہ مدت تک کے لئے ملتوی کر دیا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -