ضم اضلاع میں اراضی ریکارڈ کا تصفیہ اور ڈیجیٹلائز یشن مکمل کروایا جائے: تاج محمد ترند

ضم اضلاع میں اراضی ریکارڈ کا تصفیہ اور ڈیجیٹلائز یشن مکمل کروایا جائے: تاج ...

  

       پشاور (سٹاف رپورٹر)وزیراعلیٰ کے معاؤن خصوصی برائے مال تاج محمد خان ترند نے ہدایت کی ہے کہ نئے ضم شدہ اضلاع میں زمینوں کے ریکارڈ کا تصفیہ اور ڈیجیٹلائزیشن کے عمل کو جلد از جلد مکمل کروایا جائے اور کسی بھی فرد واحد کی جائیداد کو کوئی نقصان نہ پہنچایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ اس اہم پروجیکٹ کو مزید تاخیر سے بچایا جائے اور تمام اسٹیک ہولڈرز بشمول پولیٹیکل اسٹیک ہولڈرز کو ساتھ لے کر کام کروایا جائے تاکہ ہر طرح کے ناخوشگوار واقعات اور تمام تر رکاوٹوں سے بچا جا سکے۔ان خیالات کا اظہار وزیراعلیٰ کے معاؤن خصوصی برائے مال تاج محمد خان ترند نے بدھ کے روز ڈائریکٹر لینڈ ریکارڈ کے دفتر کے دورے کے موقع پر محکمہ مال کے آفسران سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر پر ڈائریکٹر مال اعجازالرحمن، پراجیکٹ ڈائریکٹر کیپٹن ریٹائرڈ محمد بلال اور دیگر اعلیٰ حکام بھی موجود تھے۔دورے کے موقع پر پر معاؤن خصوصی برائے مال کو سیٹلمنٹ اینڈ ڈیجیٹلائزیشن آف لینڈ ریکارڈ مرج ڈسٹرکٹس کے بارے میں تفصیلی بریفنگ دی گئی۔ بریفنگ میں بتایا گیا کہ تمام نئے ضم شدہ اضلاع کے ساتھ سب ڈویژن حسن خیل، لنڈی کوتل، باجوڑ، وزیر بنوں، اپر کرم، لوئر کرم اور درہ آدم خیل کو تقسیم کیا گیا ہے ان کے لینڈ ریکارڈ کو ماڈرن ٹیکنالوجی جی آئی ایس کے ذریعے سیٹلمنٹ اور ڈیجیٹائز کیا جا رہا ہے۔ یہ اپنی نوعیت کا پہلا پروجیکٹ ہے جو کہ پاکستان میں شروع کیا گیا۔تاج محمد ترند نے کہا کہ اس پراجیکٹ کے ذریعے لینڈ ریکارڈ کے زیادہ تر مسائل پر قابو پا لیا جائے گا اور میرٹ اور شفافیت کے ساتھ ریکارڈ ایک ہی مرتبہ کمپیوٹرائز کروا کر محفوظ کروا لیا جائے گا جبکہ کمپیوٹر سے ہی اس کے نقشہ جات بھی جاری کروائے جا سکیں گے جس سے لینڈ ریکارڈ کے نظام کی پیمائش میں غلطیوں، غیر قانونی قبضوں اور اس طرح کے دوسرے ہتھکنڈوں سے مکمل نجات مل جائے گی۔معاؤن خصوصی برائے مال نے کہا کہ پروجیکٹ میں خالی آسامیوں پر فی الفور بھرتیاں کروائی جائیں اور تمام سب ڈویژنوں میں سٹاف کی کمی کو پورا کروایا جائے تاکہ پراجیکٹ پر کام تسلسل سے برقرار رکھا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ اس پروجیکٹ کے مکمل ہونے سے ضم شدہ اضلاع کے لینڈ ریکارڈ کے تمام مسائل گھر بیٹھے ایک ہی کلک پر حل ہوں گے۔تاج محمد خان ترند نے کہا کہ صوبائی حکومت کی اولین ترجیح ہے کہ ضم شدہ اضلاع کے لوگوں کو روزمرہ کے تمام شعبہ جات میں بہتر اور پائیدار ماحول فراہم کروایا جائے اور ہر طرح کا ریلیف دیا جائے اور اس ضمن میں کئی میگا پراجیکٹس بھی شروع کئے گئے ہیں جو کہ ان اضلاع کے لوگوں کی ترقی کی راہ پر گامزن کرنے کے لیے صوبائی حکومت کی طرف سے منہ بولتا ثبوت ہیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -