وکٹوریہ ہسپتال،20فیصد شیئر کا معاملہ ملازمین کی کیشیئر کیخلاف درخواست

وکٹوریہ ہسپتال،20فیصد شیئر کا معاملہ ملازمین کی کیشیئر کیخلاف درخواست

  

بہاولپور(ڈسٹرکٹ رپورٹر)بہاول وکٹوریہ ہسپتال کے شعبہ ریڈیالوجی اور پتھالوجی ملازمین کے 20 فیصد شیئر کا معاملہ ڈائریکٹر فنانس اور المونر / کیشئر آڑے آگئے (بقیہ نمبر38صفحہ6پر)

ملازمین نے شیئر کے حصول اور ڈائریکٹر فنانس اور المونر / کیشئر کیخلاف کاروائی کیلئے گورنر پنجاب کو درخواست دیدی۔گورنر پنجاب کولکھی گئی درخواست میں کہاگیا کہ ریڈیالوجی اور پتھالوجی ملازمین کا 20 فیصد شیئر کا فیصلہ بذریعہ ہائیکورٹ بنچ بہاولپور اور سیکرٹری ہیلتھ آڈر نمبری SO(RMC)8-19/20(P) کے تحت کیا گیا کہ شیئر کی تقسیم سرکاری نوٹیفکیشن کے مطابق کی جائے مگر ڈائریکٹر فنانس فرحان سعید نے اس پر عمل درآمد نہ کیا بعدازاں بذریعہ ہائیکورٹ بنچ بہاولپور اور سیکرٹری ہیلتھ نے 19 مئی 2022 ء کو عملدرآمد کیلئے دوبارہ ہدایت جاری کی مگر ڈائریکٹر فنانس فرحان سعید اور المونر محمد عابد جن کے پاس عارضی چارج ہے اپنی ضد پر قائم رہے اور ریڈیالوجی اور پتھالوجی شعبہ کا 5 ماہ کا شیئر پورے ہسپتال کے ملازمین میں تقسیم کردیا جو کہ ان کی ہیرا پھیری اور کرپشن کو ظاہر کرتا ہے۔یاد رہے کہ روزانہ پرائیویٹ مریضوں سے فیس کی مد میں تقریباً ڈیڑھ سے دو لاکھ روپے روزانہ المونر آفس میں جمع کروائے جاتے ہیں جو کہ سال کے 16 سے 17 کروڑ روپے بنتا ہے اور سرکاری نوٹیفکیشن کے مطابق تقسیم کے فارمولے کے مطابق 45 فیصد سرکاری 35 فیصد ڈاکٹرز اور ریڈیالوجسٹ اور پتھالوجسٹ جبکہ 20 ریڈیالوجی اور پتھالوجی ٹیکنیشن کا بنتا ہے اور سیکرٹری ہیلتھ کے فیصلہ کے مطابق اس نوٹیفکیشن کو ماسوئے کابینہ کے کوئی تبدیل نہیں کرسکتا۔ملازمین نے درخواست میں الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ ڈائریکٹر فنانس اور المونر نے ہسپتال اور میڈیکل کالج کے چند آفیسران کو اپنے ساتھ ملایا ہوا ہے جن کو یہ اپنی ہیرا پھیری کی گئی رقم سے ان کے اکاؤنٹ میں بھی ٹرانسفر کرتے ہیں اور یہ دونوں کسی کو بھی کسی ماہ کی تقسیم کی لسٹ دینے کو تیار نہیں ہے لہڈا ڈائریکٹر فنانس اور المونر کو فوری طور پر عہدوں سے ہٹایا جائے اور گزشتہ پانچ مالی سالوں کا سپیشل آڈٹ کیا جائے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -