پلاسٹک کے برتن پنجاب میں کن چیزوں سے تیار ہورہے ہیں؟ ایسا انکشاف کہ آپ کی بھی پریشانی کی انتہا نہ رہے گی

پلاسٹک کے برتن پنجاب میں کن چیزوں سے تیار ہورہے ہیں؟ ایسا انکشاف کہ آپ کی بھی ...
پلاسٹک کے برتن پنجاب میں کن چیزوں سے تیار ہورہے ہیں؟ ایسا انکشاف کہ آپ کی بھی پریشانی کی انتہا نہ رہے گی
سورس: Wikimedia Commons

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

نارووال(مانیٹرنگ ڈیسک) استعمال شدہ سرنجوں، ڈرپ، خون اور پیشاب والی تھیلیوں سے پلاسٹک کے برتن بنائے جانے کا کریہہ انکشاف ہوا ہے۔ نیوز ویب سائٹ ’پروپاکستانی‘ کے مطابق بتایا گیا ہے کہ نارووال کے ہسپتالوں سے یہ استعمال شدہ اشیاء100 روپے فی کلوگرام کی قیمت پر خریدی جا رہی ہیں اور ان سے برتنوں کے علاوہ کھلونے اور دیگر اشیاءبھی بنائی جا رہی ہیں۔
رپورٹ کے مطابق نارووال کے ہسپتالوں کے عملے کی یہ مجرمانہ غفلت شہریوں کی صحت اور ماحول کو سنگین خطرے میں ڈال رہی ہے۔اسی نوعیت کی خبر رواں سال کے آغاز میں بھی آئی تھی، جس میں انکشاف کیا گیا تھا کہ پاکستان انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز(پمز) کی طرف سے ہسپتال کا فضلہ تلف کرنے کے لیے جس شخص کی خدمات حاصل کی گئی تھیں، وہ ہسپتال کے عملے کی ملی بھگت سے فضلے کو تلف کرنے کی بجائے فروخت کر رہا تھا۔
ماہرین کا کہنا ہے کہ ہسپتالوں کے اس فضلے سے بننے والے برتن اور دیگر اشیاءاستعمال کرنے سے شہری ایچ آئی وی، ایڈز، کینسر اور ہیپاٹائٹس سمیت دیگر جان لیوا بیماریوں میں مبتلا ہو سکتے ہیں۔