سول لائن کے علاقہ میں ڈکیتی وچوری کی وار داتیں عروج پر سیکیورٹی کا فقدان

سول لائن کے علاقہ میں ڈکیتی وچوری کی وار داتیں عروج پر سیکیورٹی کا فقدان

  

لاہور(رپورٹ :لیاقت کھرل) تھانہ سول لائن جو کہ سی سی پی او آفس کی عمارت میں واقع اور اس تھانے میں پولیس اہلکاروں کی انتہائی کمی اور تھانے کی حدود میں مال روڈ، شاہراہ قائد اعظم سمیت اہم دفاترز اور عمارتوں کی سکیورٹی ناقص، جگہ جگہ موٹر سائیکل اور کار چوری کی وارداتیں ، کروڑوں کے ڈاکے پولیس محض لاءاینڈ آرڈر کی ڈیوٹی میں مصروف، نفری نہ ہونے پر آئے روز مال روڈ اور دیگر سڑکوں پر دھرنے پولیس خاموش تماشائی بننے لگی ہے جبکہ تھانے آنے والے سائلین تھانے کے ڈیوٹی افسر اور محرر کے حوالے کر دیا گیا ہے جس کی بنا پر جہاں شہریوں سے اہلکار دونوں ہاتھوں سے لوٹ مار کرتے ہیں وہاں کروڑوں اور لاکھوں کی ڈکیتی کے مقدمات سمیت قتل اور اقدام قتل کے کھیلوں میں پولیس کوئی پیش رفت نہیں کر سکی ہے۔ ”پاکستان“ نے تھانہ سول لائن کے علاقے میں پڑھتے ہوئے جرائم اور شہریوں کی شکایات جاننے کیلئے گزشتہ روز تھانے کے سامنے کھلی کچہری لگاتی تو تھانے آنے والے سائلین پولیس کے خلاف پھٹ پڑے۔ اس موقع پر شہری غلام عباس نے بتایا کہ مال روڈ، گورنر ہاﺅس چوک اور اس علاقے کی اہم سڑکوں پر دن بھر مظاہروں کے باوجود ڈاکوﺅں نے اندھیر نگری مچا رکھی ہے اس موقع پر محمد حسین اور حسن خان نے بتایا کہ دو ڈاکوﺅں نے گورنر ہاﺅس چوک کے قریب ایک جیولرز سے ایک کروڑ روپے کے زیورات لوٹ لئے۔ پولیس تین ماہ گذر جانے کے باوجود تاحال ڈاکوﺅں کا راغ لگانے میں مسلسل ناکام ہے۔ اس موقع پر حسن دین اور اظہر علی خان نے بتایا کہ مال روڈ اور شاہراہ قائد اعظم پر واقع مارکیٹوں اور پلازوں سمیت ایجوکیشن بورڈ، امریکن قونصلیٹ گنگارام ہسپتال، گورنر ہاﺅس اور یو کے ایمبیسی کے علاوہ اسٹیٹ بینک سمیت اہم دفاتر اور عمارتیں اس تھانے کی حدود میں قائم ہیں ان عمارتوں اور دفاتروں کے سامنے روزانہ 10سے 15موٹر سائکیلیں اور 3سے 4گاڑیاں چوری ہوتی ہیں جبکہ گنگارام ہسپتال اور ایجوکیشن بورڈ چڑیا گھر سمیت دیگر اداروں کے سامنے نوسر بازوں نے ادھم مچا رکھی ہے اس موقع پر شہری اسلم نے بتایا کہ امتحانی مراکز کے سامنے گاڑی کی اور اس کا باقاعدہ ٹوکن حاصل کیا اس کے باوجود گاڑی چوری ہو گئی اس موقع پر حسن خان اور عظیم احمد نے بتایا کہ گھریلو ملازمہ نے ایک گینگ بنا کر شہری حاجی لیاقت علی کے گھر لاکھوں روپے کی واردات کی پولیس نے گروہ کے تمام ارکان کو پکڑنے کے باوجود مکمل طور پر ریکوری نہیں کی ہے اس موقع پر شہری حق نواز، رفاقت علی اور آصف زمان سمیت طارق حسین نے بتایا کہ اس علاقے میں ڈاکوﺅں نے جہاں اندھیر نگری مچا رکھی ہے وہاں اس علاقے میں موٹر سئایکل چور گروہوں کے درجنوں ارکان سرعام گھوم رہے ہیں اور موٹر سائیکل چوری کی وارداتوں کو کنٹرول کرنے والے الگ سکواڈ بنانے کے باوجود اس علاقے سے موٹر سائیکل چوری کا خاتمہ نہیں ہو سکا ہے اس موقع پر تھانے آئی ہوئی ایک خاتون دیبا لطیف نے بتایا کہ اس کے محلے اور شہریار نے اسے گھر میں گھس کر تشدد کا نشانہ بنایا پولیس نے چار گھنٹے گذر جانے کے باوجود کوئی کارروائی نہیں کی ہے اس موقع پر شہری وقار احمد نے بتایا کہ محافظ پولیس کا اہلکار اسد باجوہ اور دیگر اہلکار موٹر سائیکل سٹینڈز اور ریڑھی بانوں سے سرعام لوٹ مار کرتے ہیں اور شکایت کی جائے تو کوئی بات نہیں سنتا ہے اور موٹر سائیکل سٹینڈ والوں سے منتھلی مقرر کر رکھی ہے اس موقع پر شہری امتیاز احمد ، محمد احسن اور حسن رضا نے بتایا کہ پولیس اہلکاروں نے انہیں ناکے پر روک کر بدتمیزی کی اور اب تھانے شکایت لیکر آتے ہیں کوئی بات سننے والا نہیں ہے اس موقع پر عمران حنیف اور یاسین نے بتایا کہ اہلکاروں نے دکان پر آ کر تشدد کا نشانہ بنایا اور ایک ہفتہ سے سی سی پی او کے دفتر اور ایس ایس پی ڈسپلن کے پاس چکر لگانے کے باوجود کوئی داد رسی نہیں کی گئی ہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -