فلم میں منفرد کردار کرنے کی خواہش رکھتی ہوں،ردا علی

فلم میں منفرد کردار کرنے کی خواہش رکھتی ہوں،ردا علی
فلم میں منفرد کردار کرنے کی خواہش رکھتی ہوں،ردا علی

  

لاہور(فلم رپورٹر) اداکارہ وماڈل ردا علی نے کہا ہے کہ مجھے بھی فلم میں کام کیلیے پیشکش ہوئی ہے لیکن میں روایتی کردار نہیں بلکہ منفرد کردار کرنے کی خواہش رکھتی ہوں کیونکہ میں سمجھتی ہوں کہ جب تک کوئی بھی فنکار معمول سے ہٹ کام نہیں کرتا، تب تک اس کی کوئی الگ پہچان نہیں بنتی۔ اگر ہم ہالی ووڈ یا بالی ووڈ کی جانب نظر دوڑائیں تو وہاں پر بہت سی ایسی اداکارائیں ہیں، جو سپرسٹار ہیروئنوں سے زیادہ مقبول ہیں اور ان کے کام کی بدولت انھیں قدر کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے۔ اسی لئے مجھے بھی منفرد کردار کی تلاش ہے، جونہی ایسی کوئی آفر ہوگی تو سلور سکرین پر اپنی صلاحیتوں کے جوہر دکھاؤں گی۔ردا علی نے کہا ہے کہ کسی بھی ملک کی پہچان اس کے فنون لطیفہ اورثقافت ہوتے ہیں دنیا کی تمام ترقی یافتہ قومیں اپنی ثقافت اور فنون کی وجہ سے منفرد مقام رکھتی ہیں ہمارے ملک کے فنکاروں نے اپنے فن کی بدولت جس طرح سے پاکستان کا نام دنیا بھرمیں روشن کیااس پر پوری قوم کو فخر کرنا چاہیے۔ثقافتی پروگراموں کا انعقاد پاکستان کے سافٹ امیج کیلئے بے حد ضروری ہے۔ہماراملک پاکستان بھی اس اعتبارسے بہت مالامال ہے۔ انہوں نے بتایا کہ جس طرح پاکستانی فنکار دیار غیرمیں جا کر ملک کا نام روشن کرتے ہیں، اگر پاکستانی فلم میکر بھی دنیا کے مختلف ممالک اور ان کے خوبصورت مقامات پر جا کر زیادہ سے زیادہ فلموں کی عکسبندی کریں، تو اس کے ذریعے جہاں فلموں کے معیار میں بہتری آئے گی۔

، وہیں دوسرے ممالک سے ثقافتی تعلقات بھی مستحکم ہوں گے۔ردا علی نے کہا کہ اس وقت پاکستانی فلم میں بہترین لوکیشنز کی شدید کمی ہے۔ نوجوان فلم میکرز ایک ہی طرح کی لوکیشنزاستعمال کرنے کی بجائے اگر نئے اورحیرت انگیز مقامات پر فلموں کی شوٹنگز کریں تویقیناًاس سے فلم کے شعبے میں بہتری آئے گی۔ اس سلسلہ میں فلم کا بجٹ توبڑھے گا لیکن اس کا بزنس بھی منافع بخش ثابت ہوگا۔ مجھے بھی فلم میں کام کیلیے پیشکش ہوئی ہے لیکن میں روایتی کردار نہیں بلکہ منفرد کردار کرنے کی خواہش رکھتی ہوں کیونکہ میں سمجھتی ہوں کہ جب تک کوئی بھی فنکار معمول سے ہٹ کام نہیں کرتا، تب تک اس کی کوئی الگ پہچان نہیں بنتی۔ اگر ہم ہالی ووڈ یا بالی ووڈ کی جانب نظر دوڑائیں تو وہاں پر بہت سی ایسی اداکارائیں ہیں، جو سپراسٹار ہیروئنوں سے زیادہ مقبول ہیں اور ان کے کام کی بدولت انھیں قدر کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے۔ اسی لئے مجھے بھی منفرد کردار کی تلاش ہے، جونہی ایسی کوئی آفر ہوگی تو سلور اسکرین پر اپنی صلاحیتوں کے جوہر دکھاؤں گی۔

مزید : کلچر