بحریہ ٹاؤن کو منصوبے بر وقت مکمل کرنے کی اجازت ،5ارب روپے زرِ ضمانت2ہفتو ں میں جمع کرانے کا حکم

بحریہ ٹاؤن کو منصوبے بر وقت مکمل کرنے کی اجازت ،5ارب روپے زرِ ضمانت2ہفتو ں میں ...

اسلام آباد( خصوصی رپورٹ ) سپریم کورٹ نے عوامی مفاد کے پیشِ نظر بحریہ ٹاؤن کو تعمیراتی کام جاری رکھنے اور تمام منصوبوں کو بروقت مکمل کرنے کی اجازت دے دی ہے ۔ مزید برآں ، سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق بحریہ ٹاؤن تمام الاٹیز/ انوسٹرز سے بقایا جات کی وصولی بھی جاری رکھے گاتاکہ زیرِ تعمیر منصوبوں کو بلاتاخیر مکمل کیا جا سکے ۔مقدمے کی مزید سماعت موسمِ گرما کی تعطیلات کے بعد ہوگی ۔سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق بحریہ ٹاؤن کو 5 ارب زرِ ضمانت کی ادائیگی کا بھی حکم دیا گیا ہے۔بحریہ ٹاؤن نے یہ رقم 2 ہفتوں میں جمع کر انی ہے۔ہر مہینے تمام وصولی کا 20% بھی سپریم کورٹ کے رجسٹرار کے اکاؤنٹ میں جمع کرایا جائے گا۔سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق نیب کو بحریہ ٹاؤن ، اس کے ڈائریکٹرز اور منصوبوں سے متعلقہ تمام افراد کے خلاف کاروئی سے روک دیا گیا ہے ۔بحریہ ٹاؤن کے چےئر مین ملک ریاض بذات خود سپریم کورٹ کے روبروپیش ہوئے اور معزز عدالت کو آگاہ کیا کہ انہوں نے کبھی کوئی غیر قانونی کام نہیں کیا اور بحریہ ٹا ؤن کی کاروباری ساکھ کو اپنی محنت سے بنایا ہے۔ لوگوں کو رہائشی سہولت دینے کے لیے پْر عزم ہے۔ دنیا میں کہیں اتنے بڑے پراجیکٹ اتنی قلیل مدت میں مکمل نہیں کیے گئے ۔ بحریہ ٹا ؤ ن کی ہمیشہ کوشش ہوتی ہے کہ اپنے ہر منصوبے کوبر وقت نہیں بلکہ قبل از وقت مکمل کریں ۔ملک ریاض حسین نے چیف جسٹس اور تمام معزز جج صاحبان کو بحریہ ٹاؤن میں ترقیاتی کاموں کو ذاتی طور پر دیکھنے کی دعوت دی۔ملک ریاض حسین نے عدالت کو بتایا کہ بحریہ ٹاؤن کی ہر سکیم میں واٹر ٹریٹمنت پلانٹس بھی لگائے جاتے ہیں۔اس کے علاوہ بحریہ ٹاؤن کراچی میں رہائش پذیر اوورسیز پاکستانی اور انویسٹرز بھی معزز عدالت کے روبرو پیش ہوئے اور عزت مآب چیف جسٹس کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے ان کی انویسٹمنٹ کو ضائع ہونے سے بچا لیا۔

بحریہ ٹاؤن

Back to Conversion Tool

مزید : صفحہ اول