انتخابات کیلئے ہمارا مشن مشاہدے پر مشتمل ہو گا، یورپی یونین مبصر مشن

انتخابات کیلئے ہمارا مشن مشاہدے پر مشتمل ہو گا، یورپی یونین مبصر مشن

برسلز(آئی این پی) یورپی یونین کے مبصر مشن کے سربراہ میشائیل گالر نے کہا ہے کہ پاکستان کے انتخابات کے لئے ہمارا مشن مشاہدے پر مشتمل ہو گا،الیکشن سے قبل ھالات کا جائزہ لیا جا رہا ہے،پاکستان کے گذشتہ انتخاب میں ہماری 27ٹیموں نے حصہ لیا جب کہ اس مرتبہ 30ٹیمیں حصہ لیں گی، پاکستانی میڈیا کو بغور جائزہ لیا جا رہا کہ کس پارٹی کو میڈیا پر کتنا اور کب وقت دیا جا رہا ہے،میڈیا کی رائے نتائج پر اثر انداز ہوتی ہے۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق پاکستان میں ہونے والے انتخابات کے لیے یورپی یونین کے مبصر مشن کے سربراہ میشائیل گالر نے کہا ہے کہ پاکستانی میڈیا کا جائزہ لیا جا رہا ہے تاکہ یہ جانا جا سکے کہ آیا کسی سیاسی جماعت پر زیادہ توجہ تو مرکوز نہیں کی جا رہی۔ہمارا مشن بالکل پہلے جیسا ہی ہے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ ہمارا مشن مشاہدہ اور دریافت پر مشتمل ہے۔ ہم الیکشن سے قبل حالات کا جائزہ لے رہے ہیں۔ سلامتی سے متعلق امور کا جائزہ لیا جا رہا ہے اور یہ بھی دیکھا جا رہا ہے کہ مشن کو کس حد تک خوش آمدید کہا جا رہا ہے۔ ابھی تک یہ سامنے آیا ہے کہ مبصر مشن کے کام میں کوئی رکاوٹ نہیں آئے گی۔ ہم نے پہلے کے مقابلے میں اپنی ٹیم میں بھی اضافہ کیا ہے۔ پچھلے انتخابات میں ہماری ستائیس ٹیمیں تھیں اور اس بار تیس ٹیمیں ہیں۔ یوں ہمیں مقابلتا زیادہ علاقوں تک رسائی حاصل ہو گی۔پولرآئزیشن یا معاشرے میں داخلی تقسیم صرف پاکستان ہی کا مسئلہ نہیں بلکہ جن ممالک میں بھی انتخابات ہوتے ہیں وہاں پولرآئزیشن ظاہر ہوتی ہے۔ مختلف ممالک میں اس کی وجوہات مختلف ہیں۔ ہمیں یہ دیکھنا ہے کہ کس پارٹی کو میڈیا پر کتنا وقت دیا جا رہا ہے۔ ہم جائزہ لے رہے کہ سرکاری و نجی میڈیا پر کس پارٹی کے بارے میں کس انداز سے بات کی جا رہی ہے، کتنی دیر اور کس وقت کی جا رہی ہے۔ کیا بات متوازن ہے، یا اس جماعت کے حق میں یا مخالفت میں۔ پچھلے الیکشن میں بھی زیادہ تر نشریات عمران خان کی پارٹی پر مبنی تھیں۔ میڈیا کی رائے نتائج پر اثر انداز ہوتی ہے۔ ہم اس دفعہ بھی تمام چیزوں کا جائزہ لیں گے۔ ہماری ٹیم میں اردو بولنے والے مقامی لوگ بھی ہیں۔ یعنی صرف انگریزی میڈیا ہی نہیں بلکہ میڈیا کی وہ نشریات بھی ریکارڈ ہوں گی، جو لوگ سنتے دیکھتے اور پڑھتے ہیں۔

یورپی یونین

مزید : صفحہ اول