ڈسٹرکٹ پرفارمنس ایویلیو سسٹم کے نتائج مرتب کرنا شروع

ڈسٹرکٹ پرفارمنس ایویلیو سسٹم کے نتائج مرتب کرنا شروع

پشاور( سٹاف رپورٹر)خیبرپختونخوا ایلیمنٹری اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ نے مئی 2018ء کے لئے ڈسٹرکٹ پرفارمنس ایویلیوایشن سسٹم (DPES) کے نتائج مرتب کرکے پیش کردیئے ہیں۔ خیبرپختونخوا ایلیمنٹری اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن ڈائریکٹوریٹ میں وزیر تعلیم سارا صفدر کی صدارت میں اجلاس منعقد ہوا۔ خیبرپختونخوا ایلیمنٹری اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ نے تمام اضلاع میں پرفارمنس سکور مرتب کرنے کے لئے 20 اشاریوں پر مشتمل ایک انڈیکس جاری کیا ہے۔ جس میں 5ویں اور 10ویں جماعت کے نتائج، حاضری کی شرح، سکولز میں ڈویلپمنٹ پروجیکٹس پر پیش رفت، داخلہ، طلباء کو نصابی کتب کی فراہمی، وظائف کی فراہمی، آن لائن ایکشن مینجمنٹ سسٹم پر عمل بحساب فیصد، فنکشنل پی ٹی سیز کی شرح، فرنیچر کی فراہمی، طلباء اور اساتذہ کا فیصد اور اساتذہ کی حاضری کی شرح شامل ہیں۔مئی 2018 میں تمام اضلاع کی پرفارمنس میں نمایاں بہتری آئی ہے اور دیر لوئر نے 79.1 سکور حاصل کرکے پہلی پوزیشن حاصل کی ہے اور 77% کے ساتھ صوابی اور مالاکنڈ دوسرے نمبر پر ہیں۔ اس کے بعد تورغر نے 76.5% سکور حاصل کیاہے۔DPES کا مقصد بہتر کارکردگی کے لئے سکولز کا اہم اشاریوں پر سکور مرتب کرکے بہتر کارکردگی والے سکول کی حوصلہ افزائی کرنا ہے اور یہ سکور ہر ماہ تیار کیا جاتا ہے۔DPES میکانزم 2017 میں تیار کیا گیا۔ اس بار اس میں ملٹی ڈایامینشل پاورٹی انڈیکس (SDPI) شامل کیا گیا ہے جس میں سڑکوں سے محرومی، بی پی ایس16- میں اسامیوں پر تقرری اور بجٹ شامل ہیں۔ ان نتائج کی روشنی میں 25 میں سے 20 اضلاع نے نمایاں بہتری دکھائی ہے۔ مختصر سے عرصہ میں آن لائن ایکشن میں 5%، لڑکیوں کے وظیفہ میں 64%، فرنیچر میں 12%، کھیل کے میدان کی فراہمی میں 2%، SQMI میں 37% اضافہ ہوا۔بجلی، چار دیواری، ٹائلٹس، پینے کے صاف پانی اور بند سکولوں کو کھولنے میں 3% اضافہ ہوا۔

مزید : پشاورصفحہ آخر