امریکی صدارتی انتخابا ت 2020ء کیلئے ڈیمو کریٹک پارٹی کا پہلا مباحثہ، سینیٹر الزیبتھ وارن ”فیورٹ“ امید وار بن کر ابھریں

امریکی صدارتی انتخابا ت 2020ء کیلئے ڈیمو کریٹک پارٹی کا پہلا مباحثہ، سینیٹر ...

  

واشنگٹن (اظہر زمان، خصوصی رپورٹ) 3نومبر 2020ء میں ہونیوالے امریکہ کے آئندہ صدارتی انتخابات کی سرگرمیوں کا سرکاری طور پر آغاز بدھ کی شب ریاست فلوریڈا کے ساحلی شہر میامی میں ڈیموکریٹک پارٹی کے پہلے صدارتی مباحثے سے ہوا۔ مجموعی طور پر25 امیدوا ر و ں میں سے دس پہلے دن شریک ہوئے۔ باقی 15امیدواروں نے جمعرات کی شب مباحثے کے دوسرے اور آخری روز اظہار خیال کیا۔ مبصرین کے مطابق ریاست میسا چیوسٹس سے تعلق رکھنے والی خاتون سینیٹر الزبتھ وارن نے اس مباحثے میں زیادہ بہتر تاثر چھوڑا اور سب سے زیادہ ”فیورٹ“ قرار پا ئیں۔ دوسرے 9امیدواروں میں ٹیکساس کے کانگریس مین رابرٹ اورر کے، نیوجرسی کے سینیٹر کوری بوکر، ریاست منی سوٹا کی خاتون سینیٹر ایمی کلوبچر، سابق صدر اوبامہ کی کابینہ کے وزیر ہاؤسنگ جولیان کاسترو، ریاست ہوائی کی کانگریس وویمن تلسی گیبرڈ، ریاست اوہائیو کے کانگری مین ٹموتھی رائن، ریاست واشنگٹن کے گورنر جے انسلی، نیویارک میئر بل ڈی بلاسیو اور میری لینڈ کے سابق کانگریس مین جان ڈیلانی شامل تھے، جمعرات کے مباحثے میں شریک ہونیوالے امیدواروں میں زیادہ قابل ذکر سابق نائب صدر جوبیڈن اور برنی سینڈرس ہیں۔ بدھ کے مباحثے کے شرکاء نے تین ٹی وی چینلز کے اشتراک سے ہونیوالی اس روایتی بحث میں موڈریٹرز کے علاوہ سامعین کے سوالات کے جوابات بھی دیئے۔ بحث کا ایک اہم موضوع تھا کہ وہ ریپبلکن پارٹی کے متوقع امیدوار اور موجودہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو کیسے شکست دیں گے۔ ایران، چین اور روس کیساتھ تعلقات کے علاوہ افغانستان کی جنگ کے خاتمے کے موضوعات پر بھی امیدواروں نے اپنی رائے دی، تاہم زیادہ تر بحث داخلی معاملات پر ہوئی، جن میں امیگر یشن، ملکی معیشت اور عام شہریوں کیلئے ہیلتھ کیئر سمیت دیگر سہولتوں کی فراہمی شامل تھیں۔ ایک موقع پر جب 10امیدواروں سے سوال کیا گیا کہ پرائیویٹ انشورنس ختم کرکے تمام انشور نس سرکاری سسٹم کے حق میں کون کون ہیں تو جن دو امیدواروں نے پرائیویٹ انشورنس کیخلاف ہاتھ کھڑا کیا ان میں الزبتھ وارن بھی شامل تھیں۔ ایک جائزے کے مطابق مختلف سوالات کے جوابات وارن نے جس اعتماد کیساتھ دیئے انہیں ووٹرز کی بڑی تعداد نے پسند کیا۔ ہیلتھ کیئر، معاشی ناہمواری، ماحولیاتی تبدیلی، بندوق کے استعمال کی اجازت کے باعث تشدد، ایران اور امیگریشن کے موضوعا ت پر امیدوا ر وں نے زیادہ وقت صرف کیا۔ جن میں سامعین نے زیادہ دلچسپی کااظہار کیا۔ جب ایک سوال کے جواب میں الزبتھ وارن نے الٹا یہ سوال کیا کہ ”ہماری معیشت اصل میں کس طبقے کے فائدے کیلئے کام کر رہی ہے؟“ تو اس پر انہیں بہت داد ملی، تاہم صدر ٹرمپ نے جو جاپان کی طرف سفر کر رہے تھے انہوں نے ٹویٹ پیغام میں اس مباحثے کو انتہائی بورنگ قرار دیا۔

الزبتھ وارن

مزید :

صفحہ اول -