کورونا سے مزید 112افراد جاں بحق،ایس او پیز کی خلاف ورزی پر 709سے زائد مارکیٹیں اور دکانیں،2صنعتی یونٹس سیل،1516ٹرانسپورٹرز کو جرمانے،اس سال اجتماعی قربانی ایس او پیز کے تحت ہوگی

کورونا سے مزید 112افراد جاں بحق،ایس او پیز کی خلاف ورزی پر 709سے زائد مارکیٹیں ...

  

لاہور، کراچی، پشاور، اسلام آباد (سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)ملک بھرمیں کورونا سے مزید 112 افراد انتقال کر گئے جس کے بعد اموات کی مجموعی تعداد 4116 ہوگئی جب کہ نئے کیسز سامنے آنے کے بعد مریضوں کی تعداد 202742 تک پہنچ گئی۔اب تک پنجاب میں کورونا سے 1673 اور سندھ میں 1243 افراد انتقال کرچکے ہیں جب کہ خیبر پختونخوا میں 914 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں۔اس کے علاوہ بلوچستان میں 114، اسلام آباد میں 120، گلگت بلتستان میں 24 اور آزاد کشمیر میں مہلک وائرس سے 28 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں۔ بروز ہفتہ ملک بھر سے کورونا کے مزید 5018 کیسز اور 112 ہلاکتیں رپورٹ ہوئی ہیں جن میں پنجاب سے 2215 کیسز 44 ہلاکتیں، سندھ سے 1949 کیسز اور 38 ہلاکتیں، خیبر پختونخوا سے 437 کیسز 24 اموات، اسلام ا?باد 225 کیسز ایک ہلاکت، بلوچستان سے 145 کیسز ایک ہلاکت، آزاد کشمیر سے 41 کیسز اور 3 ہلاکتیں جبکہ گلگت بلتستان سے 6 کیسز اور ایک ہلاکت سامنے آئی ہے۔پنجاب سے کورونا کے مزید 2215 کیسز اور 44 ہلاکتیں سامنے آئی ہیں جن کی تصدیق پی ڈی ایم اے نے کی۔پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ ڈپارٹمنٹ کی جانب سے جاری بیان کے مطابق صوبے میں کورونا کے کل کیسز کی تعداد 74202 اور اموت 1673 تک جا پہنچی ہے۔پنجاب میں اب تک کورونا سے 25162 افراد صحت یاب ہوچکے ہیں۔وفاقی دارالحکومت سیکورونا کے مزید 225 کیسز اور ایک ہلاکت سامنے آئی ہے جس کی تصدیق سرکاری پورٹل پر کی گئی ہے۔پورٹل کے مطابق اسلام آباد میں کیسز کی مجموعی تعداد 12206 اور اموات 120 ہو چکی ہیں۔آزاد کشمیر سیکورونا کے مزید 41 کیسز اور 3 ہلاکتیں سامنے آئی ہیں جو سرکاری پورٹل پر رپورٹ کی گئی ہے۔پورٹل کے مطابق آزاد کشمیر میں کورونا کے کل کیسز کی تعداد 1003 اور اموات کی تعداد 28 ہو گئی ہے۔سرکاری پورٹل کے مطابق آزاد کشمیر میں کورونا سے متاثرہ 446 افراد صحت یاب ہو چکے ہیں۔سندھ سے ہفتے کو کورونا کے مزید 1949 کیسز اور 38 ہلاکتیں رپورٹ ہوئی ہیں جن کی تصدیق وزیراعلیٰ سندھ نے کی۔مراد علی شاہ نے بذریعہ ٹوئٹر بتایا کہ صوبے میں کورونا کے کیسز کی مجموعی تعداد 78267 اور ہلاکتیں 1243 ہوچکی ہیں۔اس کے علاوہ ا مزید 1452 مزید مریض صحتیاب ہوئے جس سے صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 43444 ہوگئی ہے۔خیبر پختونخوا میں ہفتے کو کورونا وائرس سے مزید 24 افراد جاں بحق ہوگئے جس کے بعد صوبے میں ہلاکتوں کی تعداد 914 ہوگئی۔

پاکستان ہلاکتیں

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوز ایجنسیاں)دنیا بھر میں کورونا وائرس سیہلاکتوں کی تعدادپانچ لاکھ سے تجاوز کر گئی جبکہ متاثرین بھی ایک کروڑ دو ہزار تک پہنچ گئے ہیں ہفتے کے روز چوبیس گھنٹوں کے دوران دنیا پھر میں کورونا کے ایک لاکھ تین ہزار نئے مریض سامنے آئے ایک دن میں ہلاکتیں ساڑھے تین ہزار سے زائد ہوئیں مریکہ میں کرونا وائرسکے پھیلاؤ میں پھر تیزی آنے لگی جمعہ کے روز ایک ہی دن میں ریکارڈ 45 ہزار 242 کیس رپورٹ ہوئے۔امریکہ میں کیسز کی مجموعی تعداد 24 لاکھ سے زائد ہو چکی ہے۔امریکہ میں کیسز بڑھنے کے بعد کئی ریاستوں نے لاک ڈاؤن میں نرمی کا فیصلہ بھی موخر کر دیا ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق ریاست ٹیکساس کے گورنر گریگ ایبٹ نے ریاست میں بارز اور ریستوران جلد بند کرنے اور لوگوں کی تعداد نصف کرنے کے احکامات جاری کیے۔ فلوریڈا میں بھی بارز کی حدود میں شراب کی سروس پر پابندی عائد کر دی گئی ہے جس پر شراب خانوں کے مالک ناراض ہیں۔بارز مالکان کا کہنا تھا کہ حکومت کے اچانک فیصلے سے انہیں بڑے مالی خسارے کا سامنا ہے۔،ریاست کیلی فورنیا کے گورنر گیون نیوزم کا کہنا تھا کہ لاس اینجلس کی امپریل کانٹی کے بعض علاقے وائرس کا گڑھ بن چکے ہیں لہذا یہاں لوگوں کو گھروں میں رہنے کی ہدایت کی گئی ہے۔بعدازاں امپریل کانٹی میں صحت کے حکام نے ایک بیان میں کہا کہ گھروں میں رہنے کے احکامات مارچ سے ہی نافذ العمل ہیں۔ البتہ مزید اقدامات کے لیے اجلاس ہو گا۔کیلی فورنیا کے حکام نے ریاست کی مختلف کانٹیز کو اسپتالوں پر دبا بڑھنے کے بعد کاروبار کھولنے سے روک دیا ہے۔چین میں ہفتہ کو گذشتہ چار دن کے مقابلے میں سب سے زیادہ کووڈ 19 متاثرین رپورٹ ہوئے۔ اس اضافے کی وجہ بیجنگ میں وائرس کی نئی لہر کو قرار دیا جا رہا ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق نیشنل ہیلتھ کمیشن نے کہا کہ چین میں 21 نئے متاثرین کی تصدیق ہوئی یہ تعداد ایک دن پہلے 13 تھی۔ پیر کے بعد سے اب تک یہ متاثرین کی سب سے زیادہ تعداد ہے۔بیجنگ میں 17 نئے مریض سامنے آئے یوروپی یونین ممالک کے درمیان ان محفوظ ممالک کی حتمی فہرست پر اتفاقِ رائے نہیں ہو سکا جن کے شہریوں کے لیے جولائی سے سرحدیں کھولی جا رہی ہیں۔ امریکہ، برازیل اور روس کے شہریوں پر پابندی برقرار رکھنے پر غور کیا جا رہا ہے۔یورپی سفارت کاروں نے غیرملکی خبررساں ادارے کو اس پابندی کی وجہ بتاتے ہوئے کہا کہ ابھی تک ان تین ممالک میں وائرس کے پھیلا ؤپر قابو نہیں پایا جا سکا ہے۔تمام 27 یورپی ممالک کے سفیروں نے ملاقات کی، جس میں آئندہ بدھ سے یورپ سفر کرنے والوں کو قرنطینہ کی شرط کے بغیر اجازت دینے سے متعلق طریقہ کار پرغور کیا۔ایران میں بھی کرونا سے ہلاکتوں اور نئے کیسز کی تعداد میں ایک بار پھر اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ ایرانی محکمہ صحت کے حکام نے کہاہے کہ کرونا کے نتیجے میں 9 اضلاع کے باشندوں کو شدید خطرات لاحق ہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق ایرانی وزارت صحت کی ترجمان سیما لاری نے بتایا کہ گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک میں کرونا وائرس کے نیتجے میں مزید 125 اموات اور 2،628 نئے کیسز سامنے آئے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے نو اضلاع کو خطرناک قرار دیا گیا ہے۔لاری نے ایرانی ٹیلی ویژن پر اپنے روزانہ اپ ڈیٹ کے دوران بتایا کہ ایران میں کرونا سے ہلاکتوں کی کل تعداد 10239 ہوگئی جبکہ متاثرین کی کل تعداد جمعہ کی دوپہر تک 217،724 تک پہنچ گئی تھی۔ دوسری طرف عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او)نے ایک بار پھر خبرار کرتے ہوئے کہا ہے کہ کرونا وائرس کی دوسری لہر میں لاکھوں افراد اپنی جانوں سے ہاتھ دھو سکتے ہیں۔ غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق ایک بیان میں ادارے نے باور کرایا کہ کرونا کی وبا قطعا ختم نہیں ہوئی ہے اور توقع ہے کہ موسم گرما میں وائرس میں کمی آنے کے بعد یہ موسمِ خزاں میں ایک بار پھر سرگرم ہو گا، جیسا کہ ہسپانوی انفلوئنزا کے معاملے میں ہوا تھا۔دنیا بھر میں کرونا سے مرنے والوں کی تعداد پانچ لاکھ کی حد کو چھو رہی ہے۔ لک سے مطالبہ کیا کہ وہ فیصلے کرنے اور کرونا سے بچا کی حفاظتی تدابیر اور اقدامات ختم کرنے میں جلد بازی نہ کریں۔

عالمی ہلاکتیں

لاہور، کراچی، اسلام آباد (سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)ملک بھر میں 24 گھنٹوں کے دوران ایس او پیز کی خلاف ورزیوں کے 7 ہزار سے زائد واقعات ریکارڈ کئے گئے، جس پر کارروائی کرتے ہوئے 709سے زائد مارکیٹیں، دکانیں اور 2 صنعتی یونٹس کو سیل کردیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق کورونا کا پھیلاؤ روکنے کیلئے ملک میں ایس او پیز پرعملدرآمد جاری ہے اور ایس او پیز کی خلاف ورزی پر شہروں میں انتظامیہ کی جانب سے ایکشن لیا جارہا ہے۔ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر نے ملک میں ایس او پیز کی خلاف ورزیوں سے متعلق اعدادو شمار جاری کردیئے، جس کے مطابق 24 گھنٹے میں ملک بھر میں ایس او پیز کی 7472 خلاف ورزیاں رپورٹ ہوئیں، جس کے نتیجے میں 709سیزائد مارکیٹیں، دکانیں اور 2 صنعتی یونٹس کو سیل کردیا گیا جبکہ ایس او پیز کی خلاف ورزی پر 1516 ٹرانسپورٹرز پر جرمانے بھی عائد کیے۔ 24 گھنٹے میں اسلام آباد میں ایس او پیز کی خلاف ورزیوں کے 13 واقعات سامنے آئے، خلاف ورزی پر 6 مارکیٹیں اوردکانیں سیل کردی گئی جبکہ پنجاب میں ایس او پیز کی 2368 خلاف ورزیوں پر 363 مارکیٹ و دکانیں، ایک صنعتی یونٹ کو جرمانہ اور 973 ٹرانسپورٹرز کو جرمانے کئے۔ اسی طرح 24 گھنٹوں کے دوران آزادکشمیر میں ایس او پیز کی 532 خلاف ورزیاں ریکارڈ ہوئیں، جس پر 57 مارکیٹ ودکانیں، سیل اور 263 ٹرانسپورٹرز پر جرمانے عائد کئے گئے جبکہ گلگت بلتستان میں 193 خلاف ورزیوں پر 60 مارکیٹ و دکانیں سیل کردی گئی اور 32 ٹرانسپورٹرزکوجرمانے کئے۔ اسی دوران بلوچستان میں ایس او پیز کی 892 اور خیبرپختونخوا میں ایس او پیز کی 4019 خلاف ورزیاں رپورٹ ہوئیں، خلاف ورزیوں کے نتیجے میں بلوچستان میں 81 مارکیٹ و دکانیں جبکہ خیبرپختونخوا میں 212 مارکیٹ و دکانیں سیل کی گئی اور 102 ٹرانسپورٹرز پر جرمانے بھی کئے۔ضلعی انتظامیہ لاہور نے دکانداروں اور ٹرانسپورٹرز کی ایس او پیز پر عملدرآمد نہ کرنے کے حوالے سے گزشتہ روز کی کی رپورٹ جاری کر دی ہیں۔ڈی سی لاہور دانش افضال نے کہا کہ 1262 دکانوں اور پپلک ٹرانسپورٹ کو چیک کیا گیا اور 177 دکانوں پر خلاف ورزی پائی گئی۔33دکانوں کو سیل کیا گیا۔ خلاف ورزی پر 144 گاڑیوں کو بند کیا گیا.۔انہوں نے کہا کہ51 ہزار 100 روپے کے جرمانے عائد کئے گئے۔ڈی سی لاہور نے کہا کہ ٹیمیں فیلڈ میں موجود ہیں اور ایس اوپیز پر عملدرآمد کروانے کے لئے متحرک ہیں۔ڈی سی لاہور دانش افضال نے کہا کہ ایس او پیز پر عملدرآمد نہ کرنے والی دکانوں کو سیل جبکہ ٹرانسپورٹرز کے چالان کئے جا رہے ہیں۔ضلعی انتظامیہ لاہور نے عوامی مقامات پر ماسکس نہ پہننے کی خلاف ورزی پر گزشتہ روز کی رپورٹ جاری کر دی ہے۔ ڈی سی لاہور دانش افضال نے کہا150 عوامی مقامات کی انسپکشنز کی گئیں اور 20 خلاف ورزیاں پائی گئیں اور 10 روپے کا جرمانہ عائد کیا گیا۔ ڈی سی لاہور نے کہا کہ کورونا وائرس کے خدشات کے پیش نظر ایس او پیز پر عملدرآمد نہ کرنے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن جاری رہے گا۔پنجاب میں اجتماعی قربانی ایس او پیز کے تحت کی جا سکے گی، شہری حدوں میں کوئی سیل پوائنٹ نہیں لگ سکے گا۔ پنجاب حکومت کی سب کیبنٹ کمیٹی کا اہم اجلاس ہوا، پنجاب میں مویشی منڈیاں لگانے سے متعلق بڑے فیصلوں کی منظوری دی گئی جبکہ مدرسوں سمیت بعض اداروں کو اجتماعی قربانی کی اجازت ہوگی،جس کی اجازت متعلقہ ڈپٹی کمشنر دے گا۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ اجتماعی قربانی ایس او پیز کے تحت کی جا سکے گی، شہری حدود میں کسی جگہ بھی سیل پوائنٹ نہیں لگائے جائیں گے، ہرڈویڑن کا کمشنر شہری حدود سے باہر مویشی منڈی لگانے کی جگہوں کی نشاندہی کرے گا۔سب کیبنٹ کمیٹی کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ بعض کمشنرز کی جانب سے جگہوں کی نشاندہی کرکے رپورٹ اجلاس میں پیش کی جائے، منڈیوں میں ماسک، گلوز اور سماجی فاصلہ ضروری ہوگا، آن لائن اور اجتماعی قربانی کی اجازت ہوگی۔فیصلے میں کہا گیا ہے کہ شہری حدود کے باہر سے جانور خرید کر شہری حدود میں لائے گا تو اس کو بھی ایس او پیز پر عملدرآمد کرنا ہوگا، کوئی بھی فرد جانور خرید کر شہری حدود میں لانے سے قبل جس گاڑی میں لائیں گے، اس کو ضلعی انتظامیہ ڈس انفیکٹ کرے گی۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ مویشی منڈیوں میں ضلعی انتظامیہ کی جانب سے سپرے بھی کیا جائے گا، کسی بچے اور بوڑھے شہری کو منڈی میں داخلے کی اجازت نہیں ہو گی، فیملیز کو ایک فرد کے علاوہ منڈی حدود میں داخلے کی اجازت نہیں ہو گی۔ماسک اور گلوز کے بغیر کسی کی منڈی میں انٹری نہیں ہو گی، منڈیوں سے کورونا وائرس پھیلاو روکنے کیلئے مزید اقدامات بھی کئے جائیں گے۔ منڈیوں میں داخلی خارجی راستوں پر کورونا چیکنگ کو سخت کیا جائیگا۔فیصلے میں کہا گیا ہے کہ منڈیوں، جانوروں کی سینیٹائزیشن میں کوئی کسر نہیں اٹھا رکھیں گے، شہر داخلے پر ہر جانور کی خریداری رسید کو پولیس چیک کریگی۔پنجاب حکومت نے اپنی سفارشات وفاق کو ارسال کر دی ہیں، وفاق نے مویشی منڈیوں، عیدالاضحیٰ سے متعلق حفاظتی اقدامات اور ایس او پیز پر عملدرآمد سے متعلق اہم اجلاس سوموار کو طلب کر لیا۔اجلاس میں پنجاب حکومت اپنی سفارشات رکھے گی، منظوری کے بعد پنجاب حکومت اسکا باقاعدہ نوٹیفیکیشن جاری کرے گی۔ دریں اثنالاہور میں ضلعی انتظامیہ نے مویشی منڈیوں کیلئے مقامات کی نشاندہی کردی، عید الاضحیٰ پر مویشی منڈیاں لگانے کیلئے 12 پوائنٹس کا انتخاب کیا گیا ہے۔ان مقامات میں ایل ڈی اے سٹی، بسم اللہ ہاؤسنگ اسکیم، راوی سائفن، ڈی ایچ اے رہبر نزد ہلوکی گاؤں، واپڈا ٹاؤن ایکسٹینشن بلاک اے تھری، ای بلاک پنجاب گورنمنٹ ایمپلائز ہاؤسنگ اسکیم فیز ٹو، کاہنہ، لکھو ڈیر، شاہ پور کانجراں اور سگیاں شامل ہیں۔ڈپٹی کمشنر لاہور کا کہنا ہے کہ زیادہ مویشی منڈیاں لگانے کی تجویز کا مقصد کورونا وائرس کے پھیلاؤ کوروکنا ہے، منڈیوں کے پوائنٹس 12 زیادہ بھی ہوسکتے ہیں۔۔وفاقی زیر منصوبہ بندی وترقی اور نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر کے سربراہ اسد عمر نے تمام صوبوں، خاص کر فیلڈ سٹاف کی دن رات محنت کو سراہا جو عوام کی حفاظت کو یقینی بنانے کے لئے اپنی حفاظت سے بالا تر ہو کر اس وبا کو کنٹرول کرنے میں مصروف ہیں جس کے خاطر خواہ نتائج سامنے آرہے ہیں۔اسد عمر نے کہا کہ ہمیں حفاظتی تدابیر خاص طور پر فیس ماسک اور سماجی فاصلوں پر عمل کرانا ہو گا تاکہ وبا پر قابو پایا جا سکے،جہاں جہاں صوبوں کو اضافی مدد خاص طور پر بلوچستان میں پی سی آر ٹیسٹ مشینیں یا ٹیسٹنگ کٹس کی ضرورت ہو وہاں ہر ممکن مدد کی جائے گی۔ ہفتہ کو این سی او سی میں ٹیسٹنگ، سمارٹ لاک ڈاؤن اور خاص کر حفاظتی تدابیر کے حوالے سے انتہائی اہم اجلاس ہو ا جس میں صوبوں کے چیف سیکٹریز اور ہیلتھ سیکریٹری نے ویڈیو لنک کے ذریعے شرکت کی۔ این سی او سی نے ٹیسٹنگ کے موجودہ طریقہ کار کے حوالے سے انتہائی تفصیلی جائزہ لیا۔21 جون کو ٹیسٹنگ اور گزشتہ24 گھنٹوں کی ٹیسٹنگ کا جائزہ لیا گیا۔۔ این سی او سی نے صوبوں سے 21جون کے بعد سے اب تک پچھلے ہفتے میں روزانہ ٹیسٹنگ میں کمی کے حوالے سے وجوہات دریافت کیں۔ سیکرٹری ہیلتھ سندھ نے فورم کو بتایا کہ چند انتظامی وجوہات کی بنیاد پرٹیسٹنگ میں کمی آئی ہے جس کو اگلے 2سے3 روز میں حل کرلیا جائے گا۔ اور ٹیسٹنگ نمبر ز میں خاطر خواہ اضافہ ہو گا۔ صوبوں نے این سی او سی کو بتایا کہ لوگوں کی ٹیسٹنگ کی ڈیمانڈ میں کمی آئی ہے اور لوگ ہوم آئسولیشن کو ترجیح دے رہے ہیں۔ علامات ظاہر ہونے والوں کی تعداد میں کچھ کمی آئی ہے۔14جون سے ملک بھر میں 20شہروں میں 542لاک ڈان کی وجہ سے وہاں کی نقل وحرکت محدود ہے۔ سمارٹ لاک ڈاؤن ایریاز میں حفاظتی تدابیر کے حوالے سے صوبوں نے این سی اوسی کو آگاہ کیا کہ عوام کے رویے میں بڑی حد تک مثبت تبدیلی آئی ہے۔لو گ ان احتیاطی تدابیر پر عمل کر رہے ہیں اور خاص کر بروقت معلومات اور این سی اوسی سے ہدایات کی وصولی کے نتیجے میں لوگوں میں آگاہی میں اضا فہ ہو اہے۔

لاک ڈاؤن

مزید :

صفحہ اول -