سلیکٹڈ حکومت مزید نہیں چل سکتی،بلاول کے سیاسی رہنماؤں سے رابطے تیز،اے پی سی پر مشاورت

  سلیکٹڈ حکومت مزید نہیں چل سکتی،بلاول کے سیاسی رہنماؤں سے رابطے تیز،اے پی ...

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) پیپلز پارٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو زرداری سیاسی محاذ پر سرگرم ہو گئے، بلوچستان نیشنل پارٹی کے سربراہ سردار اختر مینگل، سراج الحق اور دیگر رہنماؤں سے ٹیلیفونک رابطہ کرکے اہم امور پر تبادلہ خیال کیا ہے۔ذرائع کے مطابق پی پی چیئر مین اور بی این پی مینگل کے سربراہ کے درمیان 18ویں آئینی ترمیم پرحملوں کا معاملہ بھی زیربحث آیا جبکہ این ایف سی ایوارڈ سے متعلق حکومتی اقدامات پر بھی گفتگو کی گئی۔اس موقع پر بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ پی ٹی آئی ایم ایف بجٹ عوام دشمن ہے، کسی صورت نہیں مان سکتے، حکومت کی نااہلی کی وجہ سے آج کورونا ہرجگہ پھیل چکا ہے۔ 18ویں آئینی ترمیم پرتنقید کرکے عمران خان دستورِپاکستان پرحملے کررہے ہیں، سلیکٹڈ وزیراعظم کو اپنی نااہلی کا عوام کو حساب دینا ہوگا۔بلاول زرداری نے امیر جماعت اسلامی سراج الحق کو ٹیلیفون کرکے سید منور حسن کے انتقال پر اظہار تعزیت کیا۔ جماعت اسلامی کے امیر نے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری سے سابق صدر آصف زرداری کی صحت دریافت کی۔ دونوں رہنماؤں کے دوران ملک کی مجموعی سیاسی صورتحال پر بھی گفتگو کی۔بلاول زرداری نے کہا کہ تبدیلی کا نعرہ لگا کر پاکستان کی معیشت کو تباہی کی جانب دھکیل دیا گیا ہے، کورونا وائرس کی وجہ سے پورے میں ملک میں افراتفری کی کیفیت ہے مگر حکومت کچھ نہیں کر رہی۔ ٹڈی دَل کے حملوں نے ملکی زراعت کو تباہ کر دیا ہے مگر عمران خان صرف باتیں کر رہے ہیں۔ امیر جماعت اسلامی اور چیئرمین پیپلزپارٹی میں آئندہ ہفتے اے پی سی کانفرنس بلانے کے متعلق بھی مشاورت ہوئی۔چیئرمین پیپلزپارٹی نے عوامی نیشنل پارٹی کے پی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان کو بھی ٹیلیفون کرکے ان کے والد اسفند یار ولی کی صحت کے بارے دریافت کیا۔ ایمل ولی خان سے گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین پیپلزپارٹی نے کہا کہ وفاقی حکومت نے عوام دشمن، غریب دشمن اور مزدور دشمن بجٹ بنایا ہے جس کو قطعی طور پر مسترد کرتے ہیں۔علاوہ ازیں پٹرولیم قیمتوں میں اضافے پر بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ عمران خان اپنی نااہلی کی وجہ سے ڈوبتی معیشت کو عوام کی جیبوں پر ڈاکا ڈال کر سہارا نہیں دے سکتے۔ پہلے پیٹرول سستا کروا کر ذخیرہ کروایا اور پھر مہنگا کرکے عمران خان نے مافیا کو فائدہ پہنچایا، جب پیٹرول سستا کیا تو قلت پیدا کی گئی اور کم قیمتوں کے ثمرات بھی عوام تک نہ پہنچ سکے، پیٹرول سستا ہونے سے کچھ سستا نہیں ہوا تھا مگر مہنگا ہونے سے مزید مہنگائی ضرور ہوگی، یہی نیا پاکستان ہے۔

بلاول رابطے 

مزید :

صفحہ اول -