اسلام آباد ہائیکورٹ نے الیکٹرانک ووٹنگ مشینز کے ذریعے انتخابات کروانے کی شق واپس لینے کے خلاف درخواست پر فیصلہ سنا دیا 

اسلام آباد ہائیکورٹ نے الیکٹرانک ووٹنگ مشینز کے ذریعے انتخابات کروانے کی شق ...
اسلام آباد ہائیکورٹ نے الیکٹرانک ووٹنگ مشینز کے ذریعے انتخابات کروانے کی شق واپس لینے کے خلاف درخواست پر فیصلہ سنا دیا 

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )اسلام آباد ہائی کورٹ نے الیکشن ایکٹ 2017 میں الیکٹرانک ووٹنگ مشینز کے ذریعے انتخابات کرانے کی شق واپس لینے کے خلاف دائر درخواست مسترد کردی اور کہا کہ قانون سازی میں سمندر پار پاکستانیوں کو ووٹ کا حق حاصل ہے۔

تفصیلات کے مطابق الیکشن ایکٹ 2017 میں آئندہ انتخابات ای وی ایم سے کرانے اور سمندر پار پاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینے سے متعلق حالیہ ترامیم کے خلاف عدالت میں دائر درخواست پر چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ اطہر من اللہ نے فیصلہ سنا دیا ہے۔

عدالت نے ایک جیسی درخواست ہونے کے سبب اس آبزرویشن کے ساتھ درخواست خارج کردی کہ ای سی پی کو اس مقصد کے حصول کے لیے تمام ممکنہ کوششیں کرنے دی جائیں۔چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا کہ اس رائے پر کہ اگر ووٹنگ تکنیکی افادیت، رازداری اور حفاظت کو برقرار نہیں رکھا گیا یا کسی وجہ سے اس پر سمجھوتہ ہوا تو ای سی پی کو ووٹوں کی گنتی میں سمندر پار پاکستانیوں کے ووٹس کی براہِ راست شمولیت کی اجازت دی گئی تھی۔عدالت نے مزید کہا کہ اس سے واضح ہوتا ہے کہ سمندر پار پاکستانیوں کے ووٹس کو ضمنی انتخاب کے نتائج میں براہِ راست شامل کیا جائے حتیٰ کہ الیکشن کمیشن اسے کسی ناگزیر وجوہات کی بنا پر مسترد نہ کردے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا کہ سپریم کورٹ نے قرار دیا تھا کہ سمندر پار پاکستانیوں کو آئین کی دفعہ 17 کی تشریح کے مطابق ووٹ کا حق دیا گیا ہے۔چیف جسٹس نے اس بات کی وضاحت کرتے ہوئے کہ ترمیمی قانون بلا شبہ سمندر پار پاکستانیوں کے ووٹ کے حق کو تسلیم کرتا ہے اس لیے عدالت اس بات پر مطمئن ہے ترمیمی شق کو ختم کرنے کا کیس نہیں بنتا۔

درخواست گزار نے مو¿قف اختیار کیا تھا کہ ترمیم کے ذریعے الیکشن ایکٹ کی دفعہ 94 کی خلاف ورزی کی گئی۔مذکورہ ترمیم میں کہا گیا تھا کہ ’ انتخابات ایکٹ 2017 کے سیکشن 94 کے تحت الیکشن کمیشن ضمنی انتخابات میں اوورسیز پاکستانیوں کو ووٹنگ کے لیے پائلٹ پراجیکٹ کرے تاکہ ٹیکنیکل، رازداری، سیکیورٹی اور اس طرح کی ووٹنگ کے لیے اخراجات کا تعین کیا جائے اور نتائج سے حکومت کو آگاہ کرے اور رپورٹ موصول ہونے کے بعد 15 دن کے اندر ایوان کا اجلاس بلایا جائے اور اس کو دونوں ایوانوں کے سامنے پیش کیا جائے۔

الیکشن ایکٹ 2017 کے سیکشن 103 میں کی گئی ترامیم کے تحت الیکٹرانک اور بائیومیٹرک ووٹنگ مشینوں کے استعمال کا بھی ضمنی انتخابات میں پائلٹ پراجیکٹ کیا جائے۔عدالت نے اپنے حکم میں درخواست گزاروں کی توجہ سپریم کورٹ کے اس فیصلے کی جانب مبذول کرائی جس میں بیرونِ ملک مقیم پاکستانیوں کے ووٹنگ کے حق کے لیے رہنما ہدایات جاری کی گئی تھیں۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -