اسلام آباد: مارکیٹوں میں ملٹی سٹوری پارکنگ پلازے تعمیر کئے جائیں: خالد چوہدری

اسلام آباد: مارکیٹوں میں ملٹی سٹوری پارکنگ پلازے تعمیر کئے جائیں: خالد ...

اسلام آباد (کامرس ڈیسک) اسلام آباد چیمبر کے قائم مقام صدر خالد چوہدری نے کہا ہے کہ اسلام آباد میں مارکیٹوں کو ڈیزائن کرتے وقت مستقبل کی پارکنگ ضروریات کو مدنظر نہیں رکھا گیا اور اب گاڑیوں کی تعداد اتنی زیادہ بڑھ چکی ہے کہ موجودہ پارکنگ سہولیات بمشکل صرف دکانداروں کی ضرورت ہی پوری کرتی ہیں جبکہ گاہکوں کو پریشانی سے دوچار ہونا پڑتا ہے۔ سی ڈی اے فوری طور پر تجارتی مراکز میں ملٹی سٹوری پارکنگ پلازے تعمیر کرنے کے انتظامات کرے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ٹریڈرزویلفیئر ایسوسی ایشن جناح سپر مارکیٹ کے عہدیداران اور اراکین مجلس عاملہ کے اعزاز میں دیئے گئے ظہرانے سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔     خالد چوہدری نے مزید کہا کہ چند سال قبل سی ڈی اے کے شعبہ پلاننگ نے جناح سپر مارکیٹ، سپر مارکیٹ، ایف ٹین مرکز اور بلیو ایریا میں پارکنگ پلازے تعمیر کرنے کی منصوبہ بندی کی تھی لیکن بعد ازاں نامعلوم وجوہات کی بنا پر اس منصوبے کو ڈراپ کر دیا گیا لیکن اب وقت آ گیا ہے کہ دوبارہ اس پر کام کیا جائے اور تجارتی مراکز میں پارکنگ پلازے تعمیر اور فنکشنل کر کے متعلقہ مارکیٹ یونین کے حوالے کئے جائیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ وفاقی دارالحکومت میں واقع ہونے کے باوجود اسلام آباد کی مارکیٹیں گوںناگوں مسائل کا شکار ہیں لیکن موجودہ چیئرمین معروف افضل ، ممبر ایڈمن عامر احمد علی اور ممبر انجینئرنگ ثنااللہ امان مسائل کو حل کرنے کی مکمل استطاعت رکھتے ہیں۔ٹریڈرز ویلفیئر ایسوسی ایشن ، جناح سپر مارکیٹ کے صدر اورآئی سی سی آئی کے سابق صدر محمد اعجاز عباسی نے اس موقع پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ تاجر برادری کو چیمبر آف کامرس کا مکمل اعتماد حاصل ہے اور تمام ایسو سی ایشنز کے تعاون سے آئی سی سی آئی مسائل حل کرانے کا مکمل اختیار رکھتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جناح سپر مارکیٹ میں ڈسپنسری ختم کر کے ایک تیرہ منزلہ پلازہ تعمیر کر دیا گیا لیکن اتنے بڑے پراجیکٹ کیلئے سیوریج اور واٹر سپلائی کا نئے سرے سے انتظام نہیں کیا گیا جس کی وجہ سے ایف سیون مرکز میں خرابی پیدا ہو سکتی ہے لہذا گرمیاں شروع ہونے سے قبل ہی اس کا حل ضروری ہے۔ اعجاز عباسی نے مزید کہا کہ سی ڈی اے نے جناح سپر مارکیٹ کو اپ گریڈ کرنے کا منصوبہ بنایا تھا لیکن دو تین سال گزرنے کے باوجود اس پر عمل درآمد نہ ہو سکا۔ اب وقت آ گیا ہے کہ مارکیٹ میں مزید ترقیاتی کام کرائے جائیں اور جناح سپر مارکیٹ کو ماڈل مارکیٹ کا درجہ دیا جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ سی ڈی اے کے پاس افرادی قوت کی کمی نہیں لیکن اس کے باوجود پراجیکٹس کو ٹھیکوں پر دینا سمجھ سے بالا تر ہے۔ انہوں نے تاجر برادری سے اپیل کی کہ وہ اپنے مسائل کے حل کیلئے سیاسی وابستگیوں سے بالا تر ہو کر ایک پلیٹ فارم پر متحد ہو جائیں۔

مزید : کامرس