اگر آپ کو بھی الفاظ کے ہجے یاد نہیں رہتے تو پریشان نہ ہوں ، اصل اور حیران کن وجہ سامنے آ گئی ہے

اگر آپ کو بھی الفاظ کے ہجے یاد نہیں رہتے تو پریشان نہ ہوں ، اصل اور حیران کن ...
اگر آپ کو بھی الفاظ کے ہجے یاد نہیں رہتے تو پریشان نہ ہوں ، اصل اور حیران کن وجہ سامنے آ گئی ہے

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

بوسٹن (نیوز ڈیسک) عام طور پر یہ سمجھا جاتا ہے کہ الفاظ کے ہجے یا سپیلنگ یاد کرتے وقت ہم مختلف حروف اور ان کی آوازوں پر توجہ دیتے ہیں لیکن ایک حالیہ سائنسی تحقیق میں انکشاف ہوا ہے کہ ہمارا دماغ الفاظ کو تصاویر کی صورت میں محفوظ کرتا ہے۔ جارج ٹاﺅن یونیورسٹی میڈیکل سنٹر کے ڈاکٹر میکسی ملین کی سربراہی میں کی گئی تحقیق میں معلوم ہوا ہے کہ سپیلنگز یاد رکھنے میں مشکل کا سامنا کرنے والے لوگوں کے دماغ میں موجود بصری لغت میں الفاظ کی تصاویر درست طور پر محفوظ نہیں ہوتیں۔ سائنسدانوں نے دماغ کے ویژول کارٹیکس نامی حصے میں بائیں طرف ایک چھوٹا حصہ دریافت کیا ہے جو الفاظ کو تصاویر کی صورت میں محفوظ کرتا ہے۔ یہ حصہ چہروں کی تصاویر محفوظ کرنے والے حصے کے ساتھ ہی واقع ہے۔ جس طرح دماغ چہروں کی تصاویر کو محفوظ کرتا ہے اسی طرح الفاظ کی تصاویر کو بھی محفوظ کرتا ہے۔ ہم الفاظ کو ان میں موجود مختلف حروف کی مدد سے یاد نہیں رکھتے بلکہ پورے لفظ کو ایک تصویر کی صورت میں دماغ میں محفوظ کرتے ہیں۔ جب ہم کسی تحریر کو تیزی سے پڑھتے ہیں تو بھی الفاظ کے سپیلنگ پڑھنے کی بجائے پورے لفظ کو ایک تصویر کی صورت میں دیکھتے ہوئے آگے بڑھتے جاتے ہیں۔

سائنس نے ستارہ شناسوں کی لٹیا ڈبو دی،قسمت کے ستاروں کے بارے میں ہمارے تمام خیالات کو بالکل غلط ثابت کر دیا
سائنسدانوں نے اس تحقیق کے دوران 25 نوجوانوں کو 150 بے معنی الفاظ یاد کرنے کا ٹاسک دیا۔ ان نوجوانوں کے fMRI سکین سے معلوم ہوا کہ جیسے جیسے الفاظ یاد کئے گئے ویسے ہی دماغ کے ویژول کورٹیکس میں ان کی تصاویر محفوظ ہوتی گئیں۔ یہ تحقیق سائنسی جریدے ”نیورو سائنس“ میں شائع کی گئی ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -