9 ٹاؤن آمدن کے اہداف حاصل کرنے میں ناکام

9 ٹاؤن آمدن کے اہداف حاصل کرنے میں ناکام

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور(جاوید اقبال)صوبائی دارالحکومت میں 9ٹاؤنوں کی انتظامیہ ٹاؤن پلاننگ اور ریگولیشن کی مد میں آمدن کیلئے رواں مالی سال کیلئے مقرر کردہ اہداف پورے کرنے میں ناکام ہو گئی جس کے پیش نظر انہوں نے آئندہ مالی سال کیلئے تیارکردہ بجٹ سفارشات میں ریگولیشن اور ٹاؤن پلاننگ کیلئے رواں مالی سال کیلئے مقرر کردہ آمدن کے وسائل میں نظر ثانی کرتے ہوئے 50فیصد کم ٹارگٹ مقرر کرنے کی سفارش کی ہے۔یہ سفارشات ریگولیشن اور ٹاؤن پلاننگ نے تیار کر کے شعبہ فنانس اور ضلعی حکومت کے بجٹ اینڈ اکاؤنٹس کے حوالے کر دی ہیں جس میں ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ رواں مالی سال کیلئے نقشہ جات اور جرمانہ جات کیلئے آمدن کے جو اہداف مقرر کئے گئے تھے وہ انتہائی غیر مناسب اور ’’تکے‘‘ سے مقرر کیے گئے تھے۔ٹاؤنوں کی آمد ن کے حساب سے 60فیصد زائد تھے جو پورے نہیں کیے جا سکے جس کی وجہ سے ٹاؤن رواں سال کی آخری سہ ماہی شروع ہونے کے باوجو دآمد ن کے مقرر کردہ اہداف کا 40فیصد بھی پورا نہیں کر سکے ۔لہذا آئندہ مالی سال کیلئے مذکورہ شعبہ جات کے لئے آمد ن کے جو اہداف مقرر کیے جائیں وہ رواں مالی سالی کے اہداف سے 50 سے 60فیصد کم ہوں پھر جا کر آمد ن کے مقررہ اہداف پورے ہو سکیں گے۔ذرائع نے بتایا ہے کہ اقبال ٹاؤن کے شعبہ ریگولیشن اور ٹاؤن پلاننگ نے اپنے اعتراضات اور سفارشات تیار کر کے فنانس میں جمع کر ا دیں ۔ریگولیشن کی طرف سے کہا گیا ہے کہ رواں مالی سال کیلئے 30لاکھ آمد ن کے اہداف مقرر کیے ہیں لیکن سر توڑ کوشش کے باوجود19لاکھ روپے جمع ہو سکے ہیں جو لاہور کے دیگر ٹاؤنو ں کی آمد ن کے برابر ہیں ۔آئندہ مالی سال کے بجٹ میں 50فیصد کٹوتی کے ساتھ بجٹ لایا جائے جبکہ راوی ،شالا مار ،گلبرگ ،نشتر ،واہگہ اور سمن آباد ٹاؤن کے شعبہ ریگولیشن اور ٹاؤن پلاننگ بھی آمدن کے مقررہ اہداف40فیصد بھی پورے نہیں کر سکے۔اور انہوں نے اپنی ناکامی تسلیم کرتے ہوئے آئندہ مالی سال کے بجٹ کا آمد ن کا اہداف 50فیصد کم مقرر کرنے کا مطالبہ کیا ہے ہر ٹاؤن نے اپنی اپنی بجٹ سفارشات اپنے اپنے شعبہ فنانس کے حوالے کر دی ہیں۔