عدالت میں غلط رپورٹ پیش کرنے والے اے ایس آئی کے خلافکارروائی کا حکم

عدالت میں غلط رپورٹ پیش کرنے والے اے ایس آئی کے خلافکارروائی کا حکم

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


لاہور(نامہ نگار)ایڈیشنل سیشن جج نے شہری کی جانب سے دائر اندراج مقدمہ کی درخواست پر عدالت میں غلط رپورٹ پیش کرنے والے اے ایس آئی رفاقت علی کے خلاف ایس ایچ او تھانہ ڈیفنس بی کو حکم دیا ہے کہ اس کے خلاف انکوائری کرکے رپورٹ 4اپریل کو عدالت میں پیش کی جائے ۔عدالت میں شہری عابد حسین نے اندراج مقدمہ کی دائر درخواست میں موقف اختیار کررکھا ہے کہ سائل نے ایک کوٹھی 32لاکھ روپے میں بابر محمود سے خریدی جس کے بعد بابر محمودنے یہ کوٹھی ندیم الرحمن کو بیچ دی اور مجھے کہا کہ ندیم الرحمن سے گروی پر دوبارہ لے لو،بعدازاں 20فروری 2015کو بابر محمود، نعیم گھمن ،نوید ،فیاض اور10نامعلوم افراد جن میں سے کچھ پولیس وردیوں میں ملبوس تھے نے سائل کے گھر گھس کر اسے ذدکوب کیا۔ تھانہ ڈیفنس بی کے اے ایس آئی رفاقت نے پیش ہو کر بتایا کہ اس کی تفتیش میں مذکورہ تمام افراد گناہ گار ہیں ،بعدازاں ایس ایچ او تھانہ ڈیفنس بی کی جانب سے رپورٹ پیش کی گئی کہ تمام افراد بے گناہ ہیں ،جس پرعدالت نے گزشتہ روز ایس ایچ کو طلب کیا جس نے موقف اختیار کیا کہ مذکورہ اے ایس آئی نے اس کی اجازت کے بغیر رپورٹ عدالت میں پیش کی ہے