معاشرے کے حساس پہلوؤں کو اجاگر کرتی ڈرامہ سیریل’’امام ضامن‘‘

معاشرے کے حساس پہلوؤں کو اجاگر کرتی ڈرامہ سیریل’’امام ضامن‘‘

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


حسن عباس زیدی

معاشرے کے حساس پہلوؤں کو اجاگر کرتی ڈائریکٹر شاہد ظہور کی ڈارمہ سیریل’’امام ضامن‘‘ کی ریکارڈنگ مکمل ہوگئی ہے۔یہ ڈرامہ سیریل ایور ریڈی پکچرز کی پیشکش ہے اس میگا پراجیکٹ کے پروڈیوسرستیش آنند ہیں۔ ’’امام ضامن‘‘کے نمایاں فنکاروں میں نعمان اعجاز،شکیل،نورالحسن،ساجدہ سید،سحر افضل،عفت عمر،مہہ جبیں اور ردا عاصم شامل ہیں۔ اس ڈرامے کے رائٹر ظفر معراج ہیں جو اس سے قبل کئی شاہکار پراجیکٹس لکھ چکے ہیں ان کی کہانیوں میں انفرادیت ہوتی ہے۔’’امام ضامن‘‘کے ایسو سی ایٹ ڈائریکٹر شاہد ملک،ڈی او پی احسن زلفی ،ہیڈ آف پروڈکشن انیس خان اور پروڈکشن منیجر توقیر پاشا ہیں ۔دوران ریکارڈنگ فنکاروں کو سجانے کی ذمہ داری معروف میک اپ آرٹسٹ شاہد چٹا کو سونپی گئی تھی۔ اس ڈرامہ سیریل کی ریکارڈنگ لاہور اور کراچی میں کی گئی ہے۔نعمان اعجاز،شکیل،نورالحسن،ساجدہ سید،سحر افضل،عفت عمراور ردا عاصم اپنے اپنے فنّی کیرئیر کے یادگار کرداروں میں نظر آئیں گے۔ ان کرداروں کے بارے میں ڈائریکٹرشاہد ظہور کا کہنا ہے کہ یہ کردار ان کے پرستاروں کے ذہنوں پر نقش ہوجائیں گے۔’’پاکستان‘‘سے گفتگو کرتے ہوئے ملک کے جانے مانے ڈائریکٹرشاہد ظہور نے بتایا پروڈیوسر نے اس پراجیکٹ کو بہتر سے بہتر بنانے کے لئے مجھے ہر ممکن سہولت فراہم کی ہے جس باعث میں ایک شاندار پراجیکٹ ڈائریکٹ کرنے میں کامیاب ہوا ہوں ۔’’امام ضامن‘‘ کی کہانی مختلف کرداروں کے گرد گھومتی ہے یہ کردارملک کے نامور فنکاروں نے ادا کئے ہیں۔میں تمام فنکاروں کا دل کی گہرائیوں سے شکریہ ادا کرتا ہوں جنہوں نے دوران ریکارڈنگ میرے ساتھ بھرپور اور مکمل تعاون کیا ہے۔تمام فنکاروں نے اپنے کام سے انصاف کیا ہے ۔ایک سوال کے جواب میں شاہد ظہور نے بتایا کہ میں مستقبل میں بھی اس ٹیم کے ساتھ کام کرنا پسند کروں گا ۔عفت عمرنے کہا کہ ’’امام ضامن‘‘معاشرے کے حساس موضوع کا احاطہ کیا گیااس ڈرامہ میں مقصدیت اور پیغام دونوں ہوں گے۔اس ڈرامہ میرے کردار کے مختلف شیڈز ہیں ۔ اس ڈرامے میں سینئر فنکاروں کے ساتھ ساتھ نئے ٹیلنٹ کو بھی صلاحیتوں کے اظہار کا موقع فراہم کیا گیاہے ۔ ڈرامے میں کام کرنے والی ایک اور فنکارنور الحسن نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ شاہد ظہور ایک باکمال ڈائریکٹر ہیں وہ کسی بھی فنکار سے کام لینے کا فن بخوبی جانتے ہیں میرے کردارکو نکھارنے میں ان کا ناقابل فراموش کردار ہے،میں پہلی بار ان کی ڈائریکشن میں اداکاری کررہا ہوں۔ میں مستقبل میں بھی ان کے ڈراموں میں اداکاری کرنا چاہوں گا۔ پاکستان کے کسی بھی شعبے میں باصلاحیت لوگوں کی کمی نہیں ہے ، ضرورت اس امر کی ہے کہ پڑھے لکھے اور باصلاحیت لوگوں کو پرموٹ کیاجائے ۔سحر افضل نے کہا کہ شوبز میں نئے ٹیلنٹ نے خاص طور پر ٹی وی انڈ سٹری کی ترقی و بحالی میں اہم کردار ادا کیا ہے ، اب پڑھے لکھے اوراچھے گھرانوں سے لڑکیاں اور لڑکے شوبز کی طرف مائل ہورہے ہیں جوبڑی خوش آئند بات ہے ۔ میری کامیابی میں میرے سینئرز اور والدین کی دعائیں شامل ہیں ۔ اس کے علاوہ میں تعداد کی بجائے معیار کو ترجیح دیتی ہوں جو میری کامیابی کی سب سے بڑی وجہ ہے۔ہمارے ملک میں اس وقت سیاست کا بازار گرم ہے میری ذاتی رائے میں تمام سیاستدانوں کو اپنی اپنی ذات سے بالا تر ہوکے ملکی کے مفاد کے بارے میں سوچنا چاہیے ا گر ایسا نا ہوا تو دشمن اپنے عزائم میں کامیاب ہوجائے گا جس کا نقصان آنے والی نسلوں کو بھی بھگتنا پڑے گا میں اپنی حد تک سیاست کو ناپسند کرتی ہوں سیاست کسی بھی شعبہ میں ہو غلط ہے یہ ضروری نہیں ہے کہ کوئی میری بات سے کوئی اتفاق کرے ۔مہہ جبیں نے کہا کہ میں اس بات پر فخر کرتی ہوں کہ میرا شمار ان لوگوں میں ہوتا ہے جو باتوں کی بجائے عمل پر یقین رکھتے ہیں۔سحر افضل نے کہا کہ ’’امام ضامن ‘‘جیسے پراجیکٹ کبھی کبھی بنتے ہیں مجھے خوشی ہے کہ میں بھی اس پراجیکٹ کا حصّہ ہوں ۔شکیل نے کہا کہ شوبز کو لابی ازم نے ناقابل تلافی نقصان پہنچایا ہے اس ملک میں سفارش کے بغیر کام ملنا ممکن نہیں ہے۔ ’’امام ضامن‘‘میں وہ سب کچھ شامل کیا گیا ہے جس کو ہمارے ناظرین دیکھنا پسند کرتے ہیں۔ہمارے ملک میں شوبز کو بہت برا شعبہ مانا جاتا ہے جبکہ میرا کہنا ہے دنیا کا کوئی بھی شعبہ برا نہیں ہوتا انسان خود برا ہوتا ہے میں کافی عرصے سے گلیمر ورلڈ سے وابستہ ہوں میں نے آج تک یہاں پر کوئی برائی نہیں دیکھی۔یہ دنیا کا واحد شعبہ ہے جس میں عزت،دولت اور شہرت تینوں ہیں۔ردا عاصم نے کہا کہ مجھے اداکاری کا جنون کی حد تک شوق ہے ۔میرا یہ ماننا ہے کہ ایک تعلیم یافتہ انسان دنیا کے کسی شعبہ میں مار نہیں کھاتا۔انہوں نے کہا ہے کہ ادب کرنے والا انسان ہر میدان میں کامیاب و کامران ہوتا ہے اور ہمارا دین بھی اسی طرح کی تعلیمات دیتا ہے ، نہ صرف اپنے سینئرز بلکہ جونیئرز کا بھی دل سے احترام کرتی ہوں۔ پاکستانی معاشرے میں لوگ چڑھتے سورج کی پوجا کرتے ہیں مگر میں بلا تفریق سب کا دل سے احترام کرتی ہوں اور مجھے بھی اس کے بدلے میں پیار اور احترام سے ہی ملا ہے ۔سینئر اداکارہ ساجدہ سید نے کہا کہ خواہش ہے کہ اپنے کیرئیرمیں ایسا کردار ادا کرجاؤں جسے لوگ سا جدہ کی نسبت سے مدتوں یاد رکھیں ۔ اپنے موجودہ مقام سے مطمئن ہوں ۔میں نے تمام عمرعزت کے ساتھ اس مقام کو بر قرار رکھنے کی کوشش کی ہے۔

مزید :

ایڈیشن 1 -