گستاخانہ مواد،وزارت داخلہ کے اقدامات کی رپورٹ عدالت پیش کرنیکا حکم

گستاخانہ مواد،وزارت داخلہ کے اقدامات کی رپورٹ عدالت پیش کرنیکا حکم

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


ملتان (خبرنگار خصوصی)ہائیکورٹ ملتان بینچ کے مسٹر جسٹس محمد قاسم خان نے سوشل میڈیاپر گستاخانہ مواد کے خلاف کارروائی کی درخواست پر پی ٹی اے کی جانب سے جواب پیش کرنے پر30 مارچ کو 25 اسلامی کے سفیروں کی جانب سے منظورشدہ قرارداداوروزارت داخلہ کے اقدامات کی(بقیہ نمبر35صفحہ12پر )

رپورٹ پیش کرنیکاحکم دیاہے۔فاضل عدالت نے اس موقع پر قراردیاکہ انٹرنیٹ جدید سائنس کی کرشماتی ایجادہے۔جس میں کروڑوں افرادنے اپنے اپنے افکارکے موتی وجواہرات محفوظ کردئیے ہیں لیکن اس میں بعض تنگ زہن افرادنے کنکریاں بھی ڈال دی ہیں جو پورے سسٹم کو چیلنج کئے ہوئے ہیں۔فاضل عدالت نے وکلاء کو ہدایت کی عدالت کو واضح فیصلے کے لئے معاونت چاہیے کہ آج ہم عجیب راستے پرکھڑے ہیں کہ توہین کے راستوں کو بند بھی کرناہے اورمثبت علم کے راستوں کو کھلابھی رکھناہے۔انٹرنیٹ کے ذریعے ہزاروں بچے اورافرادقرآن مجیدکا علم حاصل کرتے ہیں جو اس کا مثبت پہلوہے اورخود انھیں بھی ڈھیروں شرعی مسائل کا حل اسی انٹرنیٹ کے ذریعے ملاہے اس لئے وکلاء اس حوالے سے معاونت کریں کہ نئی نسل کو جدیدآلات سے محروم بھی نہیں کرنااوردین وقانون کے تقاضوں کے خلاف چیزوں کو روکنابھی ہے فاضل عدالت میں ملتان کے محمد ایوب نے درخواست دائر کی تھی کہ فیس بک پر گستاخانہ مواد پر مشتمل صفحہ اپ لوڈ کیاگیا ہے لیکن اس بارے حکومت کی جانب سے کوئی کارروائی نہیں کی جارہی ہے اس لئے ذمہ داروں کے خلاف مقدمہ درج کرنے کے ساتھ سخت کارروائی عمل میں لائی جائے۔جس پر فاضل عدالت نے احکامات جاری کئے تھے جن کی روشنی میں گزشتہ روز ایف آئی اے ملتان کی جانب سے نامعلوم افرادکے خلاف مقدمہ درج کرکے کارروائی کی رپورٹ بھی پیش کی گئی جس پرگزشتہ روزپی ٹی اے کی جانب سے جواب پیش کیا گیاجبکہ وکلاء اورلاء آفیسر کومعاونت کی ہدایت بھی کی گئی ہے۔